یوپی

رامپور میں قائم قدیمی مزار کو مسمار کیا جانا شرمناک حرکت ۔ مفتی سید محمد عفان

معروف عالم دین صدر مدرس مدرسہ جامعیہ اسلامیہ عربیہ جامع مسجد امروہہ نے واقعے کی کی سخت الفاظ میں کی مذمت ، نو تعمیر کا کیا مطالبہ

امروہہ (سالار غازی ) دو دن پہلے شھر رام پور کے قلعہ معلی میں موجود صدیوں سال پرانے مزار کو ضلع انتظامیہ کے ذریعہ رات کے اندھیرے میں مسمار کیا جانا اور وھاں موجود قرآن پاک کے نسخوں کی بے حرمتی کرنا نہایت تکلیف دہ اور قابل مذمت حرکت ھے ، جس کام کو کرنے کی ھمت شرپسند عناصر نہیں کرپاتے ضلع انتظامیہ نے وہ کام کرکے اپنی امیج خراب کی ھے اور عوام کے اعتماد کو ٹھیس پہنچائی ھے ۔
مذکورہ خیالات کا اظہار صدر مدرس و ناظم تعلیمات مدرسہ جامعیہ اسلامیہ عربیہ جامع مسجد امروہہ مفتی سید محمد عفان منصور پوری نے جاری مذمتی بیان میں کیا ہے معروف عالم دین نے رام پور میں پیش آمدہ واقعہ پر جمعیت علماء امروھہ کی طرف سے سخت ناراضگی کا اظہار کرتے کہا کہ اگر انتظامیہ کو اس قدیم عمارت پر کوئی اعتراض تھا تو انہیں متولی حضرات کے نام نوٹس جاری کرکے قانونی کارروائی کرنی چاھئے تھی لیکن بغیر پیشگی اطلاع کے انہدام کی اتنی بڑی کارروائی سے یہ واضح ھوتا ھے کہ قانون کے رکھوالے ھی قانون کی دھجیاں اڑا رھے ھیں ، جب ضلع انتظامیہ ھی ایسی حرکتوں میں ملوث ھوگی تو عوام کس سے انصاف کا مطالبہ کریں گے ۔ مفتی صاحب نے کہا اس واقعہ میں جس طرح قرآن پاک کی بے حرمتی ھوئی اور اس کے اوراق کو کوڑے میں ڈالا گیا وہ بہت شرمناک ھے اور اس سے مسلمانوں میں سخت غم و غصہ اور بے چینی پائی جارھی ھے ۔
مفتی عفان منصور پوری نے مطالبہ کیا کہ انتظامیہ شھر کے امن کو برقرار رکھنے کے لئے قرآن پاک کی توھین کرنے والوں کے خلاف سخت ایکشن لے اور بلا تاخیر منہدم شدہ عمارت کو پہلے کی طرح تعمیر کرائے ۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

Leave a Reply

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close