ہندوستان

دھمول کے اندر سی اے اے اور این آر سی اور این پی آر کے خلاف احتجاجی مظاہرہ،،،

نوادہ محمد سُلطان اخترنوادہ ضلع کے تحت دهمول میں جمعہ کی نماز کے بعد آج سینکڑوں لوگوں نے بینک کے قریب ایک زبردست احتجاج کیا۔ دھرنے سے خطاب کرتے ہوئے آر جے ڈی اقلیتی سیل کے ضلعی صدر محمد قمرالباری دھمولوی خطاب کرتے ہوئے کہا کہ یہ قانون اس ملک کے لئے کالا قانون ہے۔ آئین کے آرٹیکل 14 میں چھیڑ چھاڑ کی گئی ہے اور آئین کے کے ساتھ چھیڑ چھاڑ کسی بھی قیمت پر برداشت نہیں کی جائے گی۔ تمام لوگوں کو مساوی حقوق ، ذات ، مذہب ، اور کسی بھی امتیاز سے انکار کیا گیا ہے ، لیکن جب یہ کالا قانون نافذ ہوا تو اس نے مسلم طبقہ کو الگ کردیا۔ یہ کہا گیا ہے کہ مکمل طور پر آئین کے منافی ہے اس نے کہا کہ این پی آر سی کی پہلی کڑی والدین کے پیدائشی تاریخ کے ساتھ ساتھ درخواست گزار کی پیدائش کی جگہ بھی این پی آر میں پوچھا جائیگا اور یہ اس حقیقت کی علامت ہے کہ این پی آر پہلا مقام ہے اگر کسی کو این آر سی پر شک ہوا تو این آر سی کے تحت باہر کر دیا جائےگا ، انہوں نے کہا کہ جب تک کالا قانون این آر سی این پی آر کو واپس نہیں لیا جاتا ہے ، اسی طرح احتجاج کرتے رہیں گے انہوں نے کہا کہ 20 تاریخ سے دھمول کے اندر خواتین اور مرد مل کر غیر معینہ دھرنا دیں گے اس دھرنا کے موقع پر محمد قیصر منصوری محمد مسرور الباری نجیب احمد عرف لڈو کے علاوہ سینکڑوں لوگ شامل تھے،

مزید پڑھیں

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Back to top button
Close
Close