ہندوستان

دی وائس آف کوکن کا نواں یوم تاسیس

سماجی رابطہ کا پلیٹ فارم ’’دی وائس آف کوکن‘‘ کا نواں یومِ تاسیس، اور تحریری مقابلے
سماجی رابطے کی سائٹ فیس بک پر مشہور کوکنی رابطے کے گروپ ’’دی وائس آف کوکن ‘‘ کے سلسلے میں اس سال ایک انوکھے تحریری مقابلے کا انعقاد کیا گیاتھا۔ ان کی یہ پہل واقعی قابل ستائش ہے۔
مقابلے کے نتائج کے اعلان سے پہلے فیس بک گروپ کہ ذمہ داران نے۱۹؍ ستمبر ۲۰۲۰کو گروپ ممبران سے دبئی سے لائیو خطاب کیا۔ گروپ کے ایک ذمہ دار جناب نوشاد پٹیل نے ابتدا کرتے ہوئے بتایا کہ ۱۸؍ستمبر۲۰۱۱ ء میں اس کی ابتداء ذاتی دلچسپی کے تحت کی گئی تھی۔ ۳۵ ہزار ممبران ہونے تک اپنی دلچسپیوں کو اولیت دیتے رہے۔ لیکن جیسے جیسے گروپ میں ممبران بڑھتے گئے، گروپ کے ذمہ داران کے سامنے ایک اپنے سماجی مقاصد واضح ہوگئے اور اس کے تحت گروپ کا استعمال کیا جانے لگا۔ خوشی غم کی خبریں، بیمار ، لاچار کے لیے امداد کی اپیلیں۔ ناخوشگوار حادثات و سانحات کی خبریں سب سے پہلے دی وائس آف کوکن کے ذریعے ہی کوکنی ممبران تک پہنچنے لگیں لوگوں کے فلاحی کاموں کے لیے دی وائس آف کوکن کا استعمال ہونے لگا۔ اور یہ گروپ آج ٩٧ ہزار چھ سو ممبران کی ایک بڑی فیملی بن گیا ہے،اب مقصد یہ ہوا کہ اس گروپ کے ذریعے کوکن کی ترقی کے لیے کام ہو۔
ان کے بعد گروپ کے ایک دوسرے ذمہ دار فہد واڈیکر نے اپنے تاثرات کو بیان کرتے ہوئے کہا کہ اس گروپ کے ذریعے ایسے کئی فلاحی کام ہوئے ہیںجو سامنے ہیں اور ایسے بھی ہیں جن کو بیان نہیں کیا گیا۔ انھوں نے واضح کیا کہ ایسے گروپ بنتے ہیںا ور بند ہوجاتے ہیں، لیکن فلاحی کام کرناہر ایک کے بس کی بات نہیں ہے۔ لیکن مقصد کے تحت جاری و ساری یہ گروپ اپنی ذمہ داری پوری کررہا ہے اور آئندہ بھی کرتا رہے گا۔ آخر میں انھوں نے ممبران سے اپیل کی کہ وہ لکھتے رہیں۔ اپنے خیالات، اپنے منصوبے، اپنی آئیڈیاز سب کے سامنے واضح کریں۔
آخر میں گروپ کے بانی ایڈمن نذیر ہرزک نے شکریہ ادا کرتے ہوئے مزید فرمایا کہ اس سال کے مضمون نویسی مقابلہ جاتی پروگرام کا مقصد کوکنی ممبران کے اندر صلاحیتوں کو جلا دینا ہے۔ البتہ اس مقابلے میں امید کے برعکس کم لوگ شامل ہوئے۔ چونکہ ابتداء ہے اس لیے امید ہے آئندہ اس میں کافی دلچسپی لینگے۔ گروپ اڈمین کا اصل مقصد اس کوکنی گروپ کے ذریعے بلاامتیاز مذہب، مسلک’ فرقہ ساری دنیا کے کوکنیوں کو ایک جگہ جمع کرکے کوکن کی ترقی پر زور دینا ہے۔ اس گروپ کا اشتہاری پیغام یونایٹیڈ کوکن از اؤر ڈریم ہے جسے اکثر گروپ ممبران کو باور کرایا جاتا ہے۔
اس کے بعد نذیر احمد ہرزک نے مقابلے میں شرکاء کی تخلیقات کے چند اقتباسات پڑھ کر سنائے۔ مقابلے میں راجہ پور رتناگری کے کاشی ناتھ جادھو کی تخلیق کو انعام کا حق دار قرار دیا گیا۔ جو تعلیم کی اہمیت پر حامل تھی۔
نوشاد پٹیل کے شکریہ کے ساتھ لائیو خطاب کا اختتام ہوا۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close