ہندوستان

مینوفیکچرنگ کے بعد اب سروس سیکٹر پربھی چھایابحران کابادل، مسلسل چوتھے ماہ انڈیکس گرا

نئی دہلی، 4 جولائی(آئی این ایس انڈیا) مینوفیکچرنگ سیکٹر کی کارکردگی کو دکھانے والے والے اشارے پی ایم آئی میں گراوٹ کے بعد سروس سیکٹر کی حالت بھی خراب دکھائی دے رہی ہے۔ کوروناوائرس انفیکشن کی وجہ سے معاشی سرگرمیوں میں پہنچی چوٹ کی وجہ سے مینوفیکچرنگ سیکٹر کی ترقی بھی بہت سست ہے۔

خدمات کے شعبے(سروس سیکٹر) کی سرگرمیاں دکھانے والا آئی ایچ ایس مارکٹ انڈیا سروسز بزنس ایکٹیویٹی انڈیکس جون میں 33.17 پر رہا۔ یہ مئی کے 12.6 سے کہیں زیادہ ہے، لیکن مسلسل چوتھے مہینے میں یہ 50 سے نیچے ہے۔

انڈیکس میں 50 سے زیادہ کاا سکور کاروبار میں اضافے کی نشاندہی کرتا ہے۔ اس کا مطلب یہ ہے کہ سروس سیکٹر کا کاروبار نہیں بڑھ رہا ہے۔تاہم مئی اور جون کے اعداد و شمار کو دیکھیں تو ایسا لگتا ہے کہ سروس سیکٹر کا کاروبار اپنے پیروں پر کھڑا ہونے کی کوشش کر رہا ہے۔ اس وقت اس میں توسیع نہیں ہورہی ہے۔آئی ایچ ایس مارکٹ کے ماہر معاشیات جو ہائس نے کہا کہ کورونا وائرس کی وجہ سے ملکی معیشت مشکلات کا شکار ہے۔ اس کا اثر سروس سیکٹر پر نظر آرہا ہے۔

سیدھے الفاظ میں ہائس کے مطابق کورونا وائرس کی وجہ سے ملکی معیشت انتہائی زوال پذیر ہے۔ ایسی صورتحال میں سروس سیکٹر پر اس کا اثر پڑنا فطری ہے۔ انہوں نے کہا کہ اگر کوروناوائرس انفیکشن پر قابو نہیں پایا گیا تو، دوسرے نصف حصے میں بھی اس کا کاروبار پر اثر پڑے گا۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

Leave a Reply

Back to top button
Close
Close