مدھیہ پردیش

گھروں پر بلڈوزر کامعاملہ، معاوضہ کا مطالبہ، ہائی کورٹ کا نوٹس

جبل پور ،15جون(ہندوستان اردو ٹائمز) اطلاعات کے مطابق مدھیہ پردیش ہائی کورٹ نے 9 جون کو کو ایک نوٹس جاری کیا۔کھرگون شہر میں ایک مسلم تاجر کی دکان کو 10 اپریل کو فرقہ وارانہ تشدد کی زد میں آنے کے بعد حکومت نے بلڈوزر چلا کرمنہدم کردیا تھا۔اسی سے متعلق ریاستی حکومت کو نوٹس جاری کیاگیا ہے۔ عدالت ٹینٹ ہاؤس کے مالک زاہد علی کی طرف سے دائر درخواست کی سماعت کر رہی تھی۔

درخواست میں الزام لگایا تھا کہ 11 اپریل کو ان کی دکان کا ایک حصہ بغیر کسی نوٹس کے منہدم کر دیا گیا تھا۔۔ 10 اپریل کو کھرگون میں فرقہ وارانہ تشدد اس وقت شروع ہوا تھا جب کچھ لوگوں نے رام نومی کے جلوس پر مبینہ طور پر پتھراؤ کیا تھا، جس میں تالاب چوک کے علاقے میں اونچی آواز میں اور اشتعال انگیز گانا بجایا جا رہا تھا۔تشدد میں ایک شخص ہلاک اور کم از کم 24 زخمی ہوئے۔ دس گھر بھی جل گئے۔، جس کے بعد بغیر کسی قانونی چارہ جوئی کے ،11 اپریل کو مدھیہ پردیش کے کھرگون میں مسلمانوں کے گھروں اور دکانوں کو مسمار کر دیا گیا تھا۔ڈپٹی انسپکٹر جنرل آف پولیس کھرگون رینج تلک سنگھ نے دعویٰ کیا تھا کہ مسمار کیے گئے گھر ان لوگوں کے ہیں جنہوں نے جلوس کے دوران پتھراؤ کیا تھا،تاہم کھرگون کلکٹر انوگرہ پی نے بتایا تھا کہ مسمار کرنے کا عمل ریاستی حکومت کی انسداد تجاوزات مہم کا حصہ ہے۔

اگرچہ ہندوستانی قانون کے تحت کسی جرم کا الزام لگانے والے کے مکانات کو گرانے کی کوئی دفعات نہیں ہیں، لیکن یہ نمونہ بھارتیہ جنتا پارٹی کی حکمرانی والی ریاستوں میں با ضابطہ دیکھا گیا ہے۔ذرائع کے مطابق علی نے اپنی درخواست میں حکومت اور مقامی انتظامیہ کی من مانی اور غیر قانونی کاروائی کے خلاف عدالتی تحقیقات کا مطالبہ کیا تھا۔ اس نے ان افسران کے خلاف تعزیری کارروائی کا بھی مطالبہ کیا جنہوں نے ماورائے عدالت کام کیا اور اپنی جائیداد کی تعمیر نو کے لیے معاوضے کا مطالبہ کیا۔

ہندوستان ٹائمز کی خبر کے مطابق وکیل ایم ایم بوہرا، جو علی کی نمائندگی کر رہے تھے، نے جسٹس پرنائے ورما کی سنگل بنچ کو بتایا کہ ان کا مؤکل جائیداد کا قانونی مالک ہے اور ٹیکس ادا کرتا رہا ہے۔بوہرا نے عدالت کو بتایا کہ انتظامیہ نے انہیں [علی] کو کوئی نوٹس جاری کیے بغیر اور انہیں کوئی موقع فراہم کیے بغیر جائیداد کے کچھ حصے کو مسمار کر دیا ہے، جو کہ انصاف کے اصولوں کے منافی ہے۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button