کالمز

رِچمنڈ پارک کی سیراور گپ شپ : فہیم اختر۔لندن

برطانیہ میں ہریالی اور پارک کا عام نظارہ آپ کو ہر طرف دکھے گا اور اگرآپ لندن میں رہائش پزیر ہیں تو لگ بھگ ہر علاقے میں چھوٹے بڑے ہزاروں پارک آپ کو دِکھائی دیںگے۔ لندن میں بیس ایسے معروف پارک ہیں جو اپنی خوبصورتی اور رقبے کی وجہ سے کافی مشہور ہیں۔

ان میں ہائیڈ پارک، سینٹ جیمسیس پارک، کینزینگٹن گارڈنس ، رِچمنڈ پارک،ہالینڈ پارک، ہیمسٹیڈ ہیتھ، وکٹوریہ پارک، کوئین الیزیبیتھ اولمپک پارک،ہیمپٹن کورٹ گارڈن، کلیپھم کومن،کریسٹل پیلس پارک، ریجنٹس پارک، گرینچ پارک،کینووڈ ہاؤس گارڈن، ڈلیچ پارک،کیو گارڈن ، لندن فیلڈس،گرین پارک ، پینس ہل پارک، اور بیٹر سی پارک نامور اور اہم پارک مانے جاتے ہیں۔جسے دیکھنے اور سیر کرنے کے لیے دنیا بھر کے سیاح آتے ہیں۔

پچھلے کئی مہینے سے ہر اتوار صبح نو سے گیارہ بجے تک لندن کے معروف رِچمنڈ پارک میںصحت کا خیال رکھتے ہوئے میں نے چہل قدمی شروع کی ہے۔ میری اس چہل قدمی میںمیرے ساتھ میرے پڑوسی غلام دودھی اور پرکاش پٹیل بھی ہوتے ہیں۔ جن کے ساتھ ہر ہفتے ہم سیاست سے لے کر سماجی اور اخلاقیات اور دیگر امور پر تبادلہ خیال کرتے ہیں اور اس طرح ہماری اتوار کی چہل قدمی گپ شپ اور پارک کے ٹی اسٹال پر چائے پی کر اختتام کو پہنچتی ہے۔

رِچمنڈ پارک لندن کا سب سے بڑا رائل پارک ہے جس کا رقبہ 2,500ایکڑ پر محیط ہے۔رِچمنڈ پارک کی اونچائیوں سے آپ لندن کا معروف سینٹ پال کیتھیڈرل کا نظارہ بھی کر سکتے ہیں ، جو پارک سے بارہ میل دور ہے۔رِچمنڈ پارک کے چاروں طرف انسانی آبادی ہوتے ہوئے بھی پارک صدیوں میں بہت کم تبدیل ہو ا یا اثر انداز ہواہے۔ پارک کی انتظامیہ اور لوکل کونسل کی مشترکہ کوشش سے پارک کا انتظام اور خیال اتنی عمدگی سے رکھا جاتا ہے کہ پارک صدیوں سے جوں کہ توں اپنی اصلی حالت میں اب بھی قائم و دائم ہے۔

رِچمنڈ پارک اپنی کئی خوبیوں سے دیگر پارکوں سے منفرد ہے ۔ جیسے چھوٹے چھوٹے پہاڑی نما علاقے، جنگلی باغات، اور قدیم درختوں کے درمیان ہرے بھرے گھاس کے مختلف نظارے جو کہ انسانی زندگی اور ماحولیاتی شوقین کے حامیوں میںخوشی کی لہر دوڑا دیتا ہے۔اس کے علاوہ ہزاروں ہرن اور بارہ سنگھوں کی موجودگی سے بھی پارک کا نظارہ دلچسپ ہوتا ہے جس سے نوجوانوں ، ضعیفوں اور بچوں میں پارک آنے کی دلچسپی دوبالا ہوجاتی ہے۔

کہا جاتا ہے کہ رِچمنڈ پارک کا شاہی رشتہ کئی سو سال پرانا ہے۔ شاید (1272-1307) میں برطانوی بادشاہ ایڈورڈ کے دور میںیا اس سے قبل رِچمنڈ پارک کو ’مینرآف شین‘ کے نام سے جانا جاتا تھا۔لیکن بادشاہ ہینری دی ایٹ کے دور میں مینر آف شین کا نام بدل کر رِچمنڈ پارک رکھا گیا۔ تب سے اسے اب تک رِچمنڈ پارک ہی سے لوگ جانتے ہیں۔ایک اور دلچسپ بات رِچمنڈ پارک کے حوالے سے یہ مشہور ہے کہ 1625 میں بادشاہ چارلس فرسٹ لندن کے طاعون سے بچنے کے لیے انہوں نے اپنا دربار رِچمنڈ پارک منتقل کر دیاتھا۔ اور پارک کو ہرن کے پارک میں تبدیل کر دیاتھا۔اسی لیے آج بھی پورے پارک میں جگہ جگہ ہرن گھومتے پھرتے نظر آتے ہیں۔ یہاں یہ بھی بتاتا چلوں کہ ہر سال اکتوبر اور نومبرکے مہینے میں ہرنوں کی آبادی کو معقول رکھنے کے لیے کئی ہرنوں کو جان سے مار دیا جاتا ہے۔

1637 میں بادشاہ چارلس فرسٹ نے پارک کی زمین پر پابندی عائد کر دی جو کہ مقامی باشندوں میں مقبول نہیں تھا۔ لیکن انہوں نے پیدل چلنے والوں کو راہ راست کی اجازت دے دی تھی۔بادشاہ چارلس فرسٹ نے ان ہی دنوں پارک میں دیواروں کی تعمیر کروائی جو آج بھی دکھائی دیتی ہیں۔ 1847 میں رِچمنڈ پارک میں قائم پیمبرک لاج اُس وقت کے وزیر اعظم لارڈ جان رسل کا گھر ہوا کر تا تھا جس میں بعد میں ان کے پوتے برٹرینڈ رسل کا بچپن بھی گزرا تھا۔ یہ اب ایک مشہور ریستوراں ہے جہاں سے تھیمس ویلی کا شاندار نظارہ کیا جاسکتا ہے۔ پیمبروک لاج ریستوراں میں ہم نے کئی بار مختلف انگریزی کھانوں کا لطف اٹھایا ہے۔ اس کے علاوہ یہاں لوگ شادیوں کی تقریب کے لیے بھی ہال کرایے پر لیتے ہیں۔

دوسری جنگِ عظیم کے بعد رِچمنڈ پارک میں ایزابیلا پلانٹیشن کا پروجیکٹ بھی قائم کیا گیا ہے جو کافی مشہور ہے۔ جہاں حیرت انگیز وائیلڈ لینڈ باغ ہے جو موجودہ جنگل سے تیار کیا گیا ہے۔ یہ بھر پور پودوں اور حیوانات کا نتیجہ ہے۔ رِچمنڈ پارک کو خصوصی طور پر سائنسی دلچسپی کی جگہ اور قومی نیچر ریزو کے طور پر نامزد کیا گیا ہے ۔ جو کہ ایک قابلِ ستائس بات ہے۔

پارک میں چہل قدمی کے دوران ہم نے پرکاش اور غلام سے گفتگو کا آغاز برطانیہ میں چل رہی سیاست اور اخلاقی قدروں سے شروع کیا کیونکہ برطانیہ کی ہوم سیکریٹری پریتی پٹیل ان دنوں سرخیوں میں ہیں۔ ویسے پریتی پٹیل کب تنازعہ میں نہیں رہی ہیں۔ پچھلی حکومت میں انہیں اس لیے برخاست کیا گیا تھاکیونکہ انہوں نے بطور انٹرنیشنل ڈیپلومنٹ سیکریٹری اسرائیل میں اپنی ذاتی ہولی ڈے کے موقعہ پر اسرائیلی حکومت کے افسران کو برطانیہ کی خفیہ دستاویزات فراہم کی تھیں۔ جس کی وجہ سے انہیں حکومت سے برخاست کر دیا گیا تھا۔

معاملہ یوں ہے کہ داخلہ سیکریٹری پریتی پٹیل پچھلے کچھ مہینے سے اپنے دفتر کے اعلیٰ افسران کو ڈانٹنے اور دھونس زمانے کے خلاف شکایت سے پریشان تھیں۔ جس کے لیے وزیراعظم بورس جونسن نے مارچ میںحکومت کی طرف سے ایک آزاد افسر کو انکوائری کا حکم دیا۔پچھلے ہفتے رپورٹ میں پریتی پٹیل پر الزام لگاکہ انہوں نے اپنے افسران کو سخت باتیں کہیں اور ان کی عزت اور احترام کا خیال نہیں رکھا۔ جس کے بعد پریتی پٹیل نے معافی تو مانگ لی لیکن اپنے عہدے سے استعفیٰ دینے سے انکار کر دیا۔ وزیراعظم بورس جونسن نے بھی پریتی پٹیل کی حمایت کہا کہ یہ معاملہ اتنا سنگین نہیں کہ اس کے لیے پریتی پٹیل کو استعفیٰ دینا چاہیے۔ جس کے فوراً بعد حکومت کے آزاد افسر جنہوں نے اس معاملے کی جانچ کی تھی انہوں نے اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دیا۔ جس کے بعد خبروں میں اس معاملے کو لے کر اب تک بحث چھڑی ہوئی ہے۔

رِچمنڈ پارک کی سیر کے ساتھ ہم نے پریتی پٹیل کا ذکر کر کے اس بات کو محسوس کیا کہ سیاست براہ راست یا بالواسطہ طور پر ہماری زندگی پر حاوی رہتی ہے۔جس سے اس بات کا پتہ چلتا ہے کہ سیاست کے اتار چڑھاؤ سے ہم سب کہیں نہ کہیں متاثر ہیں۔ پریتی پٹیل استعفیٰ دے یا نہ دیں ، اس سے ہماری زندگی پر کوئی خاص اثر نہیں پڑنے والاہے۔ تاہم لوگوں کو اس بات کی فکر ہے کہ اگر پریتی پٹیل نے زیادتی کی ہے جسے اخلاقی طور پر غلط سمجھا جا رہا ہے ۔تو پھر اس بنیاد پر انہیں اپنے عہدے سے استعفیٰ دے دینا چاہیے۔ اب دیکھنا یہ ہے کہ اس کیس میں اخلاق اہم ہے یا عہدہ۔ یہ تو آنے والا وقت ہی بتائے گا۔

فہیم اختر۔لندن
fahimakhteruk@yahoo.co.uk
www.fahimakhter.com

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close