کالمز

مولانا نظام الدین اسیرؔ ادروی: حیات اور کارنامے! عاقب انجم ؔ عافی

مولانا نظام الدین اسیرؔ ادروی: حیات اور کارنامے
عاقب انجم ؔ عافی
بانی و صدر:’’ محدث جونپوری اکیڈمی‘‘
متعلم شعبئہ اسلامیات’’ جامعہ ملیہ اسلامیہ‘‘۔

پھولوں کے لئے سینہ ہمارا ہی سپر ہے
اس صحنِ چمن کے درو دیوار ہمیں ہیں۔

ملت اسلامیہ میں ماضی قریب میں ایسی یگانہ روزگار شخصیات بھی گزری ہیں جنہوںنے اپنے وقت میں کارہائے نمایاں انجام دیے لیکن ہمارے ہی مؤرخین نے ان کا نام تاریخ کے صفحات تک سے خارج کردیا، خدا جانے کیا وجہ رہی ہوگی۔ان شخصیات میں مولانا عبد القدیر دیوبندیؒ، مولانا نظام الدین اعظمیؒ وغیرہ شامل ہیں۔ کچھ ایسی ہی شخصیات عصرِ حاضر میں ہیں کہ وہ گویا متبحر عالم ہیں، ادیب و شاعر ہیں، درجنوں کتابوں کے مصنف ہیں لیکن لوگوں کی سماعت سے ان کے نام ندارد۔ ایسا ہی ایک نام مولانا نظام الدین اسیرؔ ادروی صاحب کا ہے۔ مولانا اسیرؔ ادروی صاحب مدظلہ بیک وقت کئی صلاحیتوں کے مالک ہیں۔ ایک باکمال انشاء پرداز اور مصنف۔ شاعر اور ادیب و سوانح نگار اور مؤرخ۔

پیدائش اور تعلیم
مولانا نظام الدین اسیرؔ ادروی اپنی سنِ ولادت ۱۳۴۵؁ھ یعنی ۱۹۲۶؁ء قرار دیتے ہیں، گو یہ یقینی نہیں۔ اپنی خودنوشت سوانح ’’داستان ناتمام‘‘ میں لکھتے ہیں کہ ’اپنے بزرگوں سے سنا ہے کہ جب ہمارے محلہ کوٹ کی مسجد کی بنیاد پڑی تھی اور تعمیر ہورہی تھی، اسی سال ان کی بھی ولادت ہوئی‘۔ مسجد پر ۱۳۴۵؁ھ کندہ دیکھا تو اسی کو اپنا سنِ ولادت مان لیا۔ جائے پیدائش ’’ادری‘‘ ہے، یہ اب ضلع مئو، اتر پردیش میں آتا ہے۔خاندانی نام’’نظام الدین‘‘ ۔ آپ کے والد شیخ عبد الکریم مرحوم اپنے وقت میں پڑھے لکھے لوگوں میں شمار ہوتے تھے۔ مولانا اسیرؔ ادروی صاحب کی مکتبی تعلیم اپنے والدین کے ذیرِ سایہ ہوئی۔ جب ’’بغدادی قاعدہ‘‘، ’’پارہ عم‘‘ اور ’’پارہ الم‘‘ پڑھ چکے تو ادری کے ہی ’’مدرسہ فیض الغرباء‘‘ میں داخل کردیے گئے۔اس وقت اس مدرسہ کے واحد استاد حضرت اقدس مولانا امام الدین پنجابی قدس سرہ کے فرزندِ ارجمند ’’مولانا محمد زمان خاں شاہ پوری‘‘ قدس سرہتھے۔ اس مدرسہ میں رہ کر مولانا اسیرؔ ادروی نے قرآن پاک کے ساتھ ساتھ اردو کی بھی کچھ کتابیں پڑھ لیں۔جب عمر کے نو سال گزرے تو مدرسہ مفتاح العلوم مئو میں داخل کردیا گیا، ان کے والد کے محدث العصر مولانا حبیب الرحمن اعظمی قدس سرہ سے مراسم تھے، تو ان کے سپرد کردیا۔ نانیہال بھی مئو میں ہی واقع تھا، تو صرف تعلیمی اوقات میں مدرسہ آتے۔
مفتاح العلوم میں آپ کے استاذ فارسی منشی ظہیر الحق نشاط سیمابی تھے، وہ خود کو سیماب اکبر آبادی کا شاگرد بتلاتے۔ ان سے مولانا اسیرؔ ادروی نے ’’اخلاق محسنی‘‘، ’’یوسف زلیخا‘‘ ’’سکندر نامہ‘‘ اور ’’انوارِ سہیلی‘‘ جیسی کتابیں پڑھی۔دوسرے استاذ مولوی محمد یحیٰ صاحب مرحوم تھے۔ ان سے ’’القراتہ الراشدہ‘‘ اور’’دروس الادب‘‘ ، ’’میزان منشعب‘‘، ’’نحو میر‘‘، ’’پنج گنج‘‘، ’’فصول اکبری‘‘ اور ’’علم الصیغہ‘‘ جیسی کتابیں پڑھیں۔ تیسرے استاذ مولانا عبد اللطیف صاحب نعمانیؒ تھے، ان سے ’’شرح تہذیب‘‘ پڑھی۔چوتھے استاذ بلکہ سرپرست محدث العصر مولانا حبیب الرحمن اعظمی قدس سرہ العزیز تھے،، جو وہاں کے صدر المدرسین اور شیخ الحدیث تھے۔مولانا اسیرؔ ادروی نے مفتاح العلوم میں رہ کر ناظمِ مدرسہ مولانا محمد ایوب صاحب اعظمیؒ سے بھی استفادہ حاصل کیا۔ جب مفتاح العلوم میں مولانا اسیرؔ ادروی کو چار سال ہوچکے، اور ’’شرح جامی‘‘ جیسی کتابیں پڑھ چکے تو ادری کے ایک دو لڑکوں کے ہمراہ مدرسہ سے بھاگ گئے، اور ایک غازی پوری مدرس کے مشورہ سے غازی پور کے مدرسہ ’’چشمئہ رحمت‘‘ پہنچے، وہاں پہنچنے پر معلوم ہوا کہ کل سے گرمیوں کی دو ہفتوں تک تعطیل ہورہی ہے۔تینوں نوعمروں کے پاس جو پیسے تھے وہ غازی پور تک ختم ہوچکے تھے؟ ان تیرہ تیرہ سالہ بچوں نے عہد کرلیا کہ گھر جائیں تو کیا چہرہ دکھائیں؟ تو علی الصباح جونپور کے لئے نکلا جائے۔ ریلوے ٹریک سے ہوتے ہوتے پیدل یہ قافلہ شام ہوتے ہوتے سید پور پہنچے، پھر وہاں سے کراکت۔کراکت سے بھی شہر جونپور تک کا سفر پیدل طے کیا۔ کیا مصائب راہ میں آئے خدائے ذو الجلال جانے اور یہ تین نوعمر نفوس!
جونپور میںتلاش کرتے کرتے مدرسہ حنفیہ مل گیا۔ مدرسہ کے استاتذہ مسلک بریلویت سے مانوس تھے۔ وہاں رہ کر مشکوٰۃ شریف اور ہدایہ پڑھی۔ مشکواۃ صدر مدرس مولانا محمد قائم فرنگی محلی سے پڑھی۔یہاں سے ہوکر مولانااحیاء العلوم مبارکپور پہونچے، اس مدرسہ کے روحِ رواں مولانا شکر اللہ مبارکپوری قدس سرہ العزیز تھے۔ آپ مشہور محدث مانوی مولانا ماجد علی جونپوریقدس سرہاور متکلم ِ اسلام مولانا انور شاہ کشمیری قدس سرہکے اجل تلامذہ میں سے تھے۔مولانا سید حسین احمد مدنیقدس سرہکے جاں نثار عقیدت مند تھے۔احیاء العلوم میں ان کے اساتذہ صدر المدرسین مولانا مفتی محمد یسین قدس سرہ، مولانا محمد عمر صاحب مظاہری قدس سرہہ اور مولانا بشیر احمد مظاہری قدس سرہہ تھے۔ سبعہ معلقہ، دیوانِ حماسہ، مختصر المعانی وغیرہ مولانا محمد عمر صاحب سے پڑھیں اور ہدیہ سعدیہ اور میبذی کے علاوہ منطق و فلسفہ کی دیگر کتابیں مولانا بشیر احمد صاحب سے پڑھیں۔ مفتی محمد یسین صاحب سے بھی بہت سی کتابیںپڑھیں۔
احیاء العلوم مبارکپور میں دو سال قیام کے بعد مولانا نے دار العلوم مئو کی جانب قدم بڑھایا۔ داخلہ کا امتحان صدر المدرسین قاری ریاست علی صاحب قدس سرہنے لیا۔ دار العلوم مئو میں مشکوۃ شریف مولانا عبد الرشید الحسینی سے پڑھی، جلالین شریف قاری ریاست علی صاحب سے۔ دار العلوم مئو سے کچھ وجوہ سے اخراج ہوا اور مولانا دار العلوم دیوبند کی جانب چل پڑے۔اس وقت دار العلوم میں ناظمِ تعلیمات اور ناظمِ امتحان شیخ الادب مولانا اعزاز علی امروہی قدس سرہتھے۔ انہوں نے مولانا اسیرؔ کا امتحان لیا، اور آخر سنادیا کہ داخلہ نہیں ہوگا۔ مولانا ادریس صاحب جو امام العصر شاہ کشمیریقدس سرہکے مکان پر مقیم تھے، انہوں نے بلاکر فرمایا کہ ’جامعہ اسلامیہ ڈابھیل‘ کا رُخ کرلیں، سارے اخراجات ہمارے ذمہ ہوں گے۔ اتنے لمبے سفر کے لئے مولوی صاحب کہاں تیار تھے۔دوسرے دن ان اعظمی طلبہ کا مشورہ ہوا جن کا داخلہ دار العلوم میں رد ہوا ۔ حدیث کہاں اچھی پڑھائی جاتی ہے؟ دار العلوم دیوبند میں شیخ الاسلام مدنی قدس سرہکا درسِ ترمذی شریف اور حضرت اس وقت مرادآباد جیل میں تھے۔ مظاہر علوم سہارنپور میں ابو داؤد شریف اور مدرسہ شاہی مرادآباد میں فخر المحدثین مولانا سید فخر الدین احمدقدس سرہ کا درسِ بخاری شریف ملک بھر میں مشہور ہے۔ حضرت مدنیؒ کے ان عقیدت مندوں نے مظاہر علوم پرمدرسہ شاہی مرادآباد کو ترجیح دی۔ مظاہر علوم میں حکیم الامت مولانا اشرف علی تھانوی قدس سرہکے خیالات کا فوالادی پنجہ تھا، اور مرادآباد میں مولانا سید فخر الدین احمد ؒ حضرت مدنیؒ کے ہم خیال تھے۔دار العلوم دیوبند سے رُخصت ہوکر یہ قافلہ مرادآباد پہونچا۔ خدائے تعالیٰ کافضل کہ دورہ حدیث شریف میں داخلہ ہوا۔مدرسہ شاہی میں اس وقت دورہ حدیث میں صرف چار کتابیں پڑھائی جاتی تھیں ۔ بخاری شریف، مسلم شریف ، ابو داؤد شریف اور ترمذی شریف۔بخاری شریف اور ابو داؤد شریف کے استاذ مولانا سید فخر الدین احمدقدس سرہتھے۔ آپ حضرت شیخ الھندقدس سرہ اور علامہ انور شاہ کشمیری قدس سرہ کے علوم و معارف کے امین ہونے کے ساتھ ساتھ محدث مانوی مولانا ماجد علی جونپوری قدس سرہ کے بھی اجل تلامذہ میں سے تھے۔ مسلم شریف کا درس مولانا محمد اسمعیل سنبھلی صاحب قدس سرہ کے ذمہ تھا۔ڈاکٹر مفتی نجیب قاسمی مدظلہ آپ کے خاندان سے ہی آتے ہیں۔ترمذی شریف کا درس حضرت سید الملت مولانا محمد میاں دیوبندی قدس سرہکے ذمہ تھا۔ باکمال مؤرخ اور مصنف۔ درجنوں کتابوں کے مصنف۔’’ علمائے ہند کا شاندار ماضی‘‘،’’ علمائے حق کے مجاہدانہ کارنامے‘‘،’’ تحریک ریشمی رومال‘‘ وغیرہ ان کی شاہکار ہیں۔مفتی محمود صاحبقدس سرہآپ کے اجل تلامذہ میں سے تھے۔ان باکمال اساتذہ سے مستفیذ ہو کر ۱۹۴۲؁ء میں۷ا۔۱۸ سال کی عمر میںمولانا نظام الدین صاحب مدرسہ شاہی مراد آباد سے فارغ التحصیل ہوئے۔
اردو ادب اور شاعری
اردوحلقہ میں نظام الدین اسیرؔ ادروی ایک معروف نام ہے۔شاعری میں تخلص ’’اسیرؔ‘‘ استعمال کرتے ہیں، وجہ کیا ہے خود ہی جانتے ہیں۔مدرسہ احیاء العلوم میںمولانا کے قیام کے دوران ہی جگرؔ مرادآبادی مرحوم کا مجموعہ کلام ’’شعلئہ طور‘‘ شایع ہوا۔اور اصغر ؔگونڈوی کے مجموعہ ہائے کلام ’’نشاطِ روح‘‘ اور ’’سرودِ زندگی‘‘ مدرسہ کی لائبریری میں موجود تھے۔ ان کے مطالعہ نے اسیرؔکو جگایا۔ جگرؔ کے اشعار گنگناتے رہتے۔ اُدھر حضرت قاضی اطہر صاحب مبارکپوری قدس سرہکی شاعری بامِ عروج پر تھی۔ مولانا اسیرؔ بھی لکھنے لگے، جو جی میں آیا لکھ دیا، اصلاح کسی استاذ سے نہ لی۔ گویا خود ہی استاذ ہوگئے اور دوسرے ساتھیوں کی لکھی ہوئی شاعری کی اصلاح کرلیتے۔اسی سال اسیرؔ کی پہلی نظم رسالہ’’قائد مرادآباد‘‘ کے صدیق نمبر میں شایع ہوئی، اس رسالہ کے مدیر حضرت سید الملت مولانا محمد میاں دیوبندیقدس سرہتھے۔ مولانا اسیرؔ ادروی رسالہ کے صفحات پلٹتے اور اس قدر خوش ہوتے جیسے کسی نوجوان جوڈے کی پہلی اولاد ہوئی ہو۔دار العلوم دیوبند میں جب داخلہ نہ ہوا، تو وہاں سے رخصت ہونے سے قبل حضرت شیخ الادب مولانا اعزاز علی امروہیقدس سرہ کی شان میں ایک نظم لکھ ڈالی اور دار العلوم کے نوٹس بورڈ پر لگادی۔
آزر کے گھر پہ آگ کو گلشن بنادیا
اور اک آگ دی تو میرے گلستاں کے واسطے
مدرسہ شاہی مرادآباد میں قیام کے دوران وہاں کے طلبہ کی ایک انجمن ’’اصلاح البیان‘‘ تھی۔ مولانا اسیرؔ ادروی اس انجمن سے جاری ہونے والے رسالہ ’’البیان‘‘ کے مدیر بنادیے گئے۔یہ وہ زمانہ ہے جب شاعری کا جنون قدرے زیادہ تھا۔ لمبی لمبی نظمیں لکھتے۔ ایک طویل نظم ’’بانگ سروش‘‘ مسدس کے فارم میں، شکوہ جواب شکوہ کے انداز پر لکھ ڈالی۔ اس نظم میں سلطنت مغلیہ سے لیکر اپنے عہد تک کی سیاسی تاریخ کا عکس پیش کیا تھا۔اس کو خوشخط میں لکھ کر حضرت قاضی اطہر صاحب مبارکپوری قدس سرہاور مولانا عبد المجیدقاسمیقدس سرہسے پیش لفظ لکھوایاتھا۔ لاہور میں قاضی اطہر مبارکپوری قدس سرہکے ساتھ قیام کے دوران اردو کے مقبول و مشہور شاعر احسان دانشؔ سے ہم رقاب ہوئے۔ اور ایک مرتبہ ان سے بھی اپنی ایک غزل جو سات اشعار پر مشتمل تھی، اصلاح کروانا چاہی ۔ جواباََ دانشؔ نے اشعار دہراکر کہہ دیا کہ آپ کے اشعار میں اصلاح کی ضرورت نہیں۔ لیکن ساتھ ہی میں آٹھ نو اشعار ان ہی کی غزل کی بحر و قافیہ میں لکھوادیے۔ فرمایا کہ یہ میری جانب سے آپ کے لئے تحفہ ہے۔ بس مولانا اسیرؔ کا شاعر مزید جاگ گیا۔ ان کا شاعرانہ کمال ان کے اشعار سے خوب نظر آتا ہے، ملاحظہ ہو۔
اس قدر ہے اثرِ کیفِ بہارِ امروز
مجھ پہ کیا گزری خزاں میں یہ مجھے یاد نہیں
داغ تو اب بھی ہیں سینے میں ہزاروں لیکن،
تیر کس کے تھے کماں میں، یہ مجھے یاد نہیں
طنز و تعریض زمانے کی تو ہے یاد مگر،
زہر کتنا تھا زباں میں ؟ یہ مجھے یاد نہیں۔
افسانہ نگاری میں بھی مولانا اسیرؔ ادروی نے اپنے گوہر دکھائے ۔ ’’رسالہ دار العلوم دیوبند‘‘ کے لئے چار پانچ سال تک مسلسل لکھتے رہے، رسالہ ’’کامیاب دہلی‘‘کے لکھنے والوں کی صف میںبھی شامل ہوگئے۔ پہلا افسانہ ’’اتنا‘‘، اور پھر ’’دو لاشیں‘‘، ’’نشیب و فراز‘‘ اور ’’اعترافِ شکست‘‘۔ سماجی مسائل پر ہی لکھتے۔ ’’نوائے پاکستان‘‘ لاہور میں بھی آپ کے متعدد افسانے شایع ہوئے جیسے ’’ہینڈ بیگ‘‘ اور ’’اسپتال‘‘۔ افسانوں کا مجموعہ ’’نشیب و فراز‘‘ اور مجموعہ ہائے کلام ’’رودادِ قفس‘‘ گم شدہ ہیں۔
ایک بزرگ نے ان کی کھدر کے لباس اور جواہر کٹ صدری پر پنی مجلسوں میں جو تنقید کی تو مولانا اس تنقید کے جواب مین تین بندوں پر مشتمل نظم ’’نکتہ چیں سے‘‘ لکھ ڈالی۔
میرے لباس پر تو نے جو نکتہ چینی کی خدا گواہ ہے مجھ کو کوئی ملال نہیں
نگاہ نکتہ رسی جس کی ہو فلک پیما اسے نمود و نمائش کا کچھ خیال نہیں
ہر ایک بات روا ہے جہاں میں لیکن کسی کی ذات پہ تہمت مگر حلال نہیں
یہ کلام بھی نوائے پاکستان کے صفحہ اول پر جلی قلم سے شایع کیا تھا۔ مولانا نے بیسیوں سال شاعری کی، غزلیں اور نظمیں لکھیں اور قطعات سبھی کچھ لکھے۔ کچھ بھی محفوظ نہیں۔ مشاعروں میں کبھی نہیں جاتے ۔ خود ہی افسوس کرتے کہ ’’ایک ضخیم مجموعہ کلام رودادِ قفس کے نام سے مرتب کیا تھا۔ خدا جانے مسودہ کیا ہوا، زمین نگل گئی یا آسمان نے اچک لیا۔ یا ملہمِ غیبی نے اپنے الہامات واپس لیکر سردخانے میں ڈال دیا۔ اس کا ایک ورق بھی میرے پاس نہیں‘‘۔
مولانا اسیر ؔ ادروی مدظلہ نے اپنی کتابوں کے ذریعہ بھی اردو زبان کی بیش بہا خدمت کی ہے۔ آپ درجنوں تاریخی کتابوں کے مصنف ہیں۔ دار العلوم دیوبند سے وابستہ کئی ایک مشایخ کی سوانح عمریاں لکھ کراردو کی اس صنف کو بلندیاں بخشی ہیں۔آپ کی کتابیں کچھ دستیاب ہیں، کئی ایک نادر و نایاب ۔کتابوں کی فہرست درج ذیل ہے۔
۱۔ ’’افکارِ عالم: فکرِ اسلامی کی روشنی میں‘‘۔ دو جلدوں پر مشتمل مولانا کے مقالات کا مجموعہ ہے۔دونوں جلدیں ۸۲۹ صفحات میں سمائی ہوئی ہیں۔ شیخ الھند اکیڈمی، دار العلوم دیوبند نے شایع کیا ہے۔
۲۔ ’’تحریکِ آزادی اور مسلمان‘‘۔ جنگِ آزادی میں مسلمان علماء اور عوام کی قربانیوں پر مشتمل ایک مختصر انسائیکلوپیڈیا ہے۔ ۳۵۰ صفحات پر مشتمل ہے۔کتب خانہ حسینیہ دیوبند نے شایع کیا ہے۔دراصل یہ کتاب ان ہی کی’’ہندوستان کی جنگِ آزادی میں مسلمانوں کا کردار‘‘کا ترمیم اور اجافہ شدہ ایڈیشن ہے۔ امریکن کانگریس نے واشنگٹن کی پچاس لائبریریوں کے لئے اس کے نسخے بھی خریدے۔’’ہندوستان کی جنگِ آزادی میں مسلمانوں کا کردار‘‘ قیامِ لکھنؤ کے دوران لکھی تھی۔ اورمولانا وحید الزمان کیرانویقدس سرہ نے اس کو شایع کیا تھا۔ یہ کتاب مولانا اسیرؔ کی پہلی مطبوعہ کتاب تھی۔ اس کتاب پر مولانا کو’’اترپردیش اردو اکیڈمی‘‘ نے ایک ہزار روپئے کا انعام دیا تھا۔
۳۔ ’’دار العلوم دیوبند: احیٔا اسلام کی عظیم تحریک‘‘۔ مشایخِ دیوبند کی علمی، سیاسی اور دیگر خدمات کے متعلق ۴۷۰ صفحات پر مشتمل ہے۔ کتب خانہ حسینیہ دیوبند نے شایع کیا ہے۔
۴۔’’ دبستانِ دیوبند کی علمی خدمات‘‘۔ ۱۸۲ صفحات پر مشتمل معلومات کا خزینہ ہے۔ فکرِ دیوبند سے وابستہ مشایخ کی علمی خدمات کا جائزہ بھی ہے، اور مختصر تاریخ بھی۔تفسیر وحدیث سے متعلق مشاہیرِ دیوبند کی کتب پر تبصرہ،’ ترجمہ شیخ الہند‘ سے شروع کرکے ڈاکٹر محمد مصطفی اعظمیقدس سرہکی دراسات فی الحدیث النبوی ‘تک ، قریب ۱۵۰سے زائد کتب پر تبصرہ ہے۔ دار المؤلفین دیوبند نے شایع کیا ہے۔
۵۔ ’’حجتہ الاسلام مولانا محمد قاسم نانوتوی: حیات اور کارنامے‘‘۔ بانیٔ دار العلوم دیوبند کی سوانح حیات ہے۔ ۴۲۹ صفحات پر مشتمل ہے۔ شیخ الھند اکیڈمی، دار العلوم دیوبند نے شایع کیا ہے۔
۶۔’’ مولانا رشید احمد گنگوہی: حیات اور کارنامے‘‘۔ امامِ ربانیقدس سرہکی سوانح حیات ہے۔ ۴۱۲ صفحات پر مشتمل ہے۔ شیخ الھند اکیڈمی، دار العلوم دیوبند نے شایع کیا ہے۔
۷۔’’ حضرت شیخ الھند: حیات اور کارنامے‘‘۔ مجاہد آزادی۔ اسیرِ مالٹا۔ جانشین امام نانوتویقدس سرہ، مولانا محمود الحسن دیوبندی قدس سرہکی سوانح حیات ہے۔ ۳۸۱ صفحات پر مشتمل ہے۔ شیخ الھند اکیڈمی، دار العلوم دیوبند نے شایع کیا ہے۔
۸۔’’ مآثر شیخ الاسلام‘‘۔ بطلِ حریت۔ جانشین شیخ الھند قدس سرہ۔ اسیرِ مالٹا۔ مولانا سید حسین احمد مدنی قدس سرہ کی سوانح حیات ہے۔ ۴۹۹ صفحات پر مشتمل ہے۔ دار المؤلفین دیوبند نے شایع کیا ہے۔
۹۔ ’’ولی و شیخ: مولانا امام الدین پنجابی‘‘۔ بانی دار العلوم مئو۔ایک عظیم مصلح۔ مولانا امام الدین پنجابی قدس سرہکی سوانح حیات ہے۔۹۳ صفحات پر مشتمل ہے۔ کتاب نایاب ہے۔ قمر الباری، ایم۔ایس۔سی، دیوریا نے ۲۰۰۲؁ء میں شایع کی تھی۔
۱۰۔ تاریخ جمعیت علماء ہند ۔ دو جلدوں پر مشتمل جمعیت علمائے ہند کی تاریخ ہے۔ جمعیت سے ہی شایع ہوئی ہے۔ فی الحال کتاب نایاب ہے۔
۱۱۔’’ کاروانِ رفتہ یعنی تذکرہ مشاہیرِ ہند‘‘۔ اپنی نوعیت کی پہلی کتاب ہے۔ لیکن تاریخیں نقل کرنے میں کئی ایک جگہ چوک ہوئی ہے۔۳۲۷ صفحات پر مشتمل ہے۔ دار المؤلفین، دیوبند نے شایع کیا ہے۔
مولانا اسیرؔ ادروی کی دیگر کتابیں:
۱۱۔ فن اسماء الرجال(۱۶۱ صفحات پر مشتمل ہے)۔۱۲۔ سوانح مولانا رحمت اللہ کیرانویقدس سرہ۔ ۱۳۔اردو شرح دیوان متنبی (۵۲۶ صفحات پر مشتمل ہے)۔۱۴۔ تاریخ طبری کا تحقیقی جائزہ۔۱۵۔ تفسیروں میں اسرائیلی روایات۔ ۱۶۔ عہدِ رسالت: غارِ حرا سے گنبد خضری تک۔ ۱۷۔تبلیغی جماعت: احیاء اسلام کی عالمگیر تحریک۔ ۱۸۔ گلزارِ تعلیم۔ ۱۹۔ عقیدہ توحید اور اس کے عملی تقاضے۔ ۲۰۔ جواہرِ حدیث۔ ۲۱۔ احادیث کے جواہر پارے۔ ۲۲۔ عورت اور اسلام۔ ۲۳۔ معجم رجال البخاری۔ ۴۲۔ داستان ناتمام (خودنوشت سوانح)۔ اور چار کتابیں گُم شدہ۔ ۱۔ کمیونزم: تجربات کی کسوٹی پر۔ ۲۔ غدارانِ وطن۔ ۳۔ نشیب و فراز (افسانوں کا مجموعہ)۔ ۴۔ رودادِ قفس(مجموعہ ہائے کلام)۔
سیاسی، ملی اور دینی خدمات کا مختصر جائزہ
مدرسی مفتاح العلوم مئو میں مولانا عبد اللطیف نعمانی قدس سرہ کی شاگردی، یہ مشہور کانگریسی رہنماء تھے۔ احیاء العلوم مبارکپور میں مولانا شکر اللہ مبارکپوری قدس سرہکی شاگردی، یہ بھی پکے کانگریسی تھے، مدرسہ شاہی مرادآباد میں قیام کے دوران سید الملت مولانا محمد میاں دیوبندی قدس سرہکی شاگردی، اور دل میں ویسے ہی شیخ الاسلام مولانا سید حسین احمد مدنیقدس سرہکی بے پناہ عقیدت۔ انگریزوں کی سامراجیت کے خلاف اپنے استاتذہ جیسا ہی جذبہ رکھتے۔ اگست ۱۹۴۲؁ء میں جب انگریزوں نے بہت سے مجاہدینِ آزادی کو گرفتار کیا۔۹ ؍ اگست ۱۹۴۲؁ء کی صبح کو مولانا محمد میاں دیوبندیؒ اپنے شاگردوں میں حریت کا صور پھونک کر، ایک غیر معین مدت کے لئے جیل چلے گئے۔ مولانااسیرؔ ادروی نے انگریزوں کے خلاف جلوسوں میں حصہ لیا ۔ اس زمانے میں ’’مطالبہ پاکستان‘‘ زوروں پر تھے۔مولانا اسیرؔاپنے بیشتر اساتذہ کی طرح اس نظریہ کے مخالف تھے۔ آپ کی اہلیہ کے حقیقی چاچا مولانا محمد امین صاحب ؒکا اصلاحی تعلق مولانا وصی اللہ صاحب فتحپوری ؒ سے تھا۔حکیم الامت کا یہ سارا کارواں کٹر لیگی تھا۔ مولانا محمد امین صاحب اگرچہ امام العصر کشمیری ؒہ کے شاگرد تھے، سیاسی نظریات میں ان سے مختلف۔بزرگانِ جمعیت کے خلاف ہرزہ سرائیاں اور الزام تراشی۔ شیخ الاسلام مدنی ؒ حد سے زیادہ حملے۔ مولانا اسیرؔ ادروی پرظاہر ہے اس کا فطری اثر پڑا۔ مولانا اسیرؔ اس روحانی اذیت سے نہیں گھبرائے، آلام و مصائب سے بھرپور سفر طے کیا۔ جب آزادیٔ وطن کی خبر سنی تو اپنے دل کے جذبات کو نہ روک سکے۔ نظم لکھ ڈالی، کچھ اشعارملاحظہ کیجیے،
لطفِ قدرت تجھ کو آخر آسرا دینا پڑا
قسمتِ ہندوستاں پر مسکرا دینا پڑا
اسی نظم کا آخری شعر:
کل سر مغرور جس کا تھا فراز عرش پر
آج ذلت سے اسیرؔ اس کو جھکا دینا پڑا۔
آزادی کے ایک سال بعد تک کانگریس سے وابستہ رہے۔کانگریس کے تمام دائیںبازو کے لیڈران مستعفی ہوئے۔ مولانا اسیرؔنے بھی استعفی دیا۔ سوشلسٹ پارٹی میں شامل ہوگئے۔ اس پارٹی میں اختلاف رونما ہوا اور اسی کے بطن سے’’ پرجا سوشلسٹ پارٹی‘‘ نے جنم لیا۔ مولانا کے ہاں کی کمیٹیاں اسی سے مطلق ہوگئیں۔ آزادی کے بعد جب ملک بھر میں فسادات ہورے تھے تو مولانا اسیرؔ ادروی نے دیگر بڑے مشایخ کے نقشِ پا پہ چل کر قومِ مسلم کو مایوسی سے باہر نکالا۔
۱۹۵۴؁ء میں دار السلام نام سے ادری میں ایک مدرسہ کی نیو ڈالی۔ اپنے رفیق مولانا محمد قاسمیقدس سرہکے انتقال کے بعد تنہا رہ گئے۔ بعد میں مدرسہ کا الحاق الہ آباد بورڈ سے کرادیا ۔ قریب پندرہ سولہ برسوں تک ادری میں ہی کئی خدمات انجام دیتے رہے۔ ۱۹۷۲؁ء میں جب اعظم گڈھ کے مغربی حصہ میں دو مواضعات ’نوناری‘ اور ’سجتی‘ میں فساد ہوئے بلکہ دونوں گاؤں پر شرپسند ہندو ٹوٹ پڑے اور سب کچھ لوٹ کر گھروں میں آگ لگادی۔اس دورون مولانا سید اسعد مدنی قدس سرہ وہاں پہونچے۔ ریلیف کے کام میں مولانا اسیرؔ کی بھی خدمات رہیں۔ بعد ازاںمولانا اسیرؔ کو صوبائی جمعیت کے دفتر کا انچارج بنادیا گیا۔چار برس تک لکھنؤ میں جمعیت کے دفتر سے وابستہ رہے۔ تیس پینتیس ضلعوں میں جمعیتہ علماء کو بیدار کیا۔ دفتر کو ایک ویران کھنڈرسے نکال کر قلبِ شہر امین آباد میں شاہراہِ عام پر ایک خوبصورت سہ منزلہ شاندار عمارت میں منتقل کیا۔۴؍ فروری ۱۹۷۸؁ء کو جامعہ اسلامیہ بنارس تشنہ گانِ علم کی پیاس بجھانے پہونچے اور عرصہ تک اسی سے وابستہ رہے۔ آپ نے اپنی بیشتر کتابیں اپنے قیامِ بنارس کے دوران ہی لکھی۔ اب صاحب فراش ہیں اور اپنے وطن ادری میں ہیں۔خدائے تعالیٰ ان کا سایہ سلامت رکھے۔آمین!

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close