دہلیقومی

پہلوانوں کا دنگل جاری،حکومتی کمیٹی سے ناخوش کھلاڑی ، ٹوئٹ کرکے کہا ، ہم سے کسی نے مشاورت نہیں کی !

نئی دہلی،24جنوری (ہندوستان اردو ٹائمز) پہلوانوں کے جنسی ہراسانی اور دھرنے کے الزامات کے بعد حکومت نے ریسلنگ فیڈریشن (WFI) کے کام کاج کو دیکھنے کے لیے ایک نگرانی کمیٹی تشکیل دی تھی۔

اس کمیٹی کے ارکان کے ناموں کا اعلان پیر (23 جنوری) کو کیا گیا تھا، لیکن کمیٹی کے قیام کے بعد بھی یہ ہنگامہ نہیں رکا۔ پہلوانوں نے کمیٹی کے ارکان کے ناموں پر برہمی کا اظہار کیا ہے۔ اولمپین پہلوان بجرنگ پونیا، ساکشی ملک نے منگل (24 جنوری) کو ٹویٹ کیا کہ حکومت نے کمیٹی کی تشکیل کے حوالے سے پہلوانوں سے بات نہیں کی۔ حالانکہ وزارت کھیل نے کہا ہے کہ پہلوانوں سے تجاویز لی گئی تھیں۔

خبر رساں ایجنسی اے این آئی کے ذرائع کے مطابق وزارت کھیل نے کہا کہ نگران کمیٹی میں 5 میں سے 3 نام ان (احتجاجی) پہلوانوں نے تجویز کیے تھے، لیکن اب ان کا دعویٰ ہے کہ ان سے مشورہ نہیں کیا گیا۔ قبل ازیں ٹوکیو اولمپکس میڈلسٹ بجرنگ پونیا نے ٹویٹ کیا کہ ہمیں یقین دلایا گیا تھا کہ نگران کمیٹی کی تشکیل سے پہلے ہم سے مشاورت کی جائے گی۔ یہ بڑے افسوس کی بات ہے کہ اس کمیٹی کی تشکیل سے پہلے ہم سے مشورہ بھی نہیں کیا گیا۔

اولمپین پہلوان ساکشی ملک نے ٹویٹ کیا کہ ہمیں یقین دلایا گیا تھا کہ نگران کمیٹی کی تشکیل سے پہلے ہم سے مشاورت کی جائے گی۔ یہ بہت افسوسناک ہے کہ اس کمیٹی کی تشکیل سے پہلے ہم سے مشورہ بھی نہیں کیا گیا۔ ساکشی ملک اور بجرنگ پونیا نے پی ایم مودی، وزیر داخلہ امت شاہ اور وزیر کھیل انوراگ ٹھاکر کو بھی ٹیگ کیا ہے۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button