بہارپٹنہ

پرشانت کشور نے نتیش کمار کے 15 سال کے کام پر کیا تھاتبصرہ ، ملا جواب

پٹنہ،06؍مئی (ہندوستان اردو ٹائمز)   پرشانت کشور نے جمعرات کو اعلان کیا کہ وہ بہار کے لوگوں کے لیے کام کریں گے۔ اس اعلان کے دوران انہوں نے کہا کہ لالو اور نتیش کے 30 سال کے اقتدار کے بعد بھی بہار ملک کی سب سے پسماندہ اور غریب ریاست ہے۔ بہار اب بھی ترقی کے کئی پیمانوں پر ملک کے سب سے نچلے درجے پر ہے۔

 

اگر بہار آنے والے وقت میں سرکردہ ریاستوں کی فہرست میں آنا چاہتا ہے تو اس کے لیے نئی سوچ اور نئی کوششوں کی ضرورت ہے۔صحافیوں نے آج سی ایم نتیش کمار سے سوال کیا کہ پرشانت کشور کہتے ہیں کہ آپ نے 15 سال میں بہار کے لیے کچھ نہیں کیا۔

 

اس پر وزیراعلیٰ نے انتہائی سادہ الفاظ میں جواب دیا کہ عوام جانتے ہیں کہ کیا کیا گیا اور کیا نہیں کیا گیا۔ اس سے کوئی فرق نہیں پڑتا کہ کون کیا کہتا ہے۔ سچائی اہمیت رکھتی ہے۔ آپ سب جانتے ہیں کہ کیا ہوا، اگر نہیں تو آپ خود ان کا جواب دے دیں۔نتیش سے متعلق سوال پر پرشانت کشور نے جمعرات کو کہا کہ ہاں میں نے نتیش کے ساتھ کام کیا ہے۔

 

ذاتی طور پر میرا اس سے کوئی جھگڑا نہیں ہے اور میرے اس کے ساتھ ذاتی طور پر بہت اچھے تعلقات ہیں لیکن ذاتی تعلق رکھنا ایک الگ چیز ہے اور مل کر کام کرنا یا اتفاق کرنا دوسری بات ہے۔ جب نتیش دہلی آئے تو میں ان سے ملنے گیا، رات کا کھانا ساتھ کھایا، لوگ قیاس کرنے لگے کہ میں انہیں صدر بنانا چاہتا ہوں۔ اگر نتیش فون کریں گے تو ہم ضرور ان سے ملنے جائیں گے، وہ یہاں کے وزیر اعلیٰ ہیں۔

 

لیکن اکٹھے کھانے یا ملنے کا مطلب یہ نہیں کہ مستقبل میں مل کر کام کرنے کا معاہدہ ہو گیا ہے۔ یہ بالکل مختلف معاملہ ہے۔ نتیش میرے والد کی طرح ہیں، لیکن اس کا مطلب یہ نہیں ہے کہ میں ایک الگ سیاسی سفر شروع نہیں کر سکتا۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button