دیوبند

نشیلی اشیاء کنٹرول بیداری مہم کے تحت ساکھن کلاں میں پروگرام منعقد

دنیا میں تقریباً 60؍لاکھ لوگوں کی موت ہر سال تمباکو کے استعمال کیوجہ سے ہوتی ہے۔بشری انصاری

دیوبند، 29؍ جون (رضوان سلمانی) نیشنل تمباکو کنٹرول بیداری مہم کے تحت دیوبند کے قریبی گاؤں ساکھن کلاں میں واقع پرائمری اسکول میں بدھ کے روز ایس بی ڈی ضلع اسپتال کی میڈیکل ٹیم نے گاؤں کے باشندوں کو تمباکو کے استعمال سے ہونے والے نقصانات کے تئیں بیدار کیا ۔اس دوران ٹیم نے گاؤں کے لوگوں کو یہ ہدایت دی کہ وہ شروع سے ہی اپنے بچوں پر خاص نظر رکھیںاور انہیں پان بیڑی ،سگریٹ اور نشیلی اشیاء کے استعمال کا عادی نہ ہونے دیں ۔

تفصیل کے مطابق ساکھن کلاں گاؤں میں منعقدہ ایک پروگرام سے خطاب کرتے ہوئے سائیکلو لوجسٹ بشری انصاری نے گاؤں کے باشندوں کو بتایا کہ اس وقت پوری دنیا میں تقریباً 60؍لاکھ لوگوں کی موت ہر سال محض تمباکو کے استعمال کیوجہ سے ہوتی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ منھ میں کینسر ہونے کی 95؍فیصد وجہ تمباکو کا استعمال ہے ۔انہوں نے بتایا کہ کم عمری میں تمباکو نوشی سے جہاں نامردی پیدا ہوتی ہے وہیں ان میں چڑ چڑا پن پیدا ہوجاتا ہے ۔

ان عادتوں کے سبب متاثرہ لوگ جرائم کی طرف راغب ہونے لگتے ہیں ۔اس لئے ہمیں تمباکو ،سگریٹ،سلفہ اور حقہ کے ذریعہ سے نشیلی اشیاء کے استعمال کرنے سے بچنا چاہئے۔پروگرام میں سوشل ورکر کویتا سنگھ بھی شامل تھیں۔انہوں نے پروگرام میں موجود لوگوں سے گفتگو کرتے ہوئے کہا کہ اس زمانہ میں زیادہ تر لوگ ڈپریشن کا شکار ہیں اور وہ یہ سمجھتے ہیں کہ نشیلی اشیاء کے استعمال سے وہ ڈپریشن کو ختم کرسکتے ہیںجو ان کی سب سے بڑی بھول ہے۔

انہوں نے وہاں موجود بچوں کو والدین اورسرپرستوں سے اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ کم عمری سے ہی اپنے بچوں کی بہت زبردست نگاہ داشت رکھیںاورا نہیں تمباکو ،سگریٹ اور دوسری نشیلی اشیاء کے استعمال سے بچائے رکھیں۔اس پروگرام میں اے این ایم سمن لتا ،پونم،رینو،مونکا،سنیوگتا،وجاہت شاہ،شاہناز،راج دلاری،راجیش اور منوج کمار وغیرہ موجود رہے ۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button