یوپی

میرٹھ: کانوڑیاترا میں تھوکنے پر ہنگامہ آرائی، توڑ پھوڑ

میرٹھ ،24جولائی (ہندوستان اردو ٹائمز)  اترپردیش کے میرٹھ ضلع کے کنکرکھیڑا تھانہ علاقے میں کانوڑ یاترا پر تھوکنے کے الزام کو لے کر ہنگامہ ہوگیا۔خیال رہے کہ کانوڑیوں کا ایک گروپ نیشنل ہائی وے-58 پر ہریدوار سے راجستھان جا رہا تھا۔ الزام کے مطابق اس دوران دو مسلم لڑکوں نے کانوڑیوں کے گروپ کے بیچ میں تھوک دیا۔ اس کے بعد کانوڑیوں نے غصے میں آکر ہنگامہ کیا اور ایس پی سٹی کی گاڑی توڑ دی۔

 

راجستھان کے ایک کانوڑ کا الزام ہے کہ دو مسلم نوجوان نے اس کے کانوڑ پر تھوک کر توڑ دیا۔ بتادیں کہ پولیس نے اس معاملہ میں ملزم کو حراست میں لے لیا ہے اور مزید تفتیش کر رہی ہے۔وہیں واقعہ کے بعد کانواڑیوں نے ہائی وے کو بلاک کر دیا تھا۔ اس کی وجہ سے دہلی-دہرا دون ہائی وے پر گھنٹوں جام رہا ۔واضح ہو کہ راجستھان کے ضلع بھرت پور تحصیل کے گاؤں سیکری کے رہنے والے کاوڈیس نے میڈیا کو بتایا کہ21 جولائی کی شام کو 40 کانوڑیوں کا ایک گروپ کانوڑ کے ساتھ راجستھان روانہ ہوا۔ لیکن کنکرکھیڑا نیشنل ہائی وے 58 پر کنکرکھیڑا تھانہ علاقہ کے قریب پہنچتے ہی دو نوجوان سڑک کے ڈیوائیڈر سے چھلانگ لگا کر گروپ کے بیچ میں آئے اور تین چار جگہوں پر ان کے کانوڑ پر تھوک دیا۔اس واقعہ کے بعد کانوڑیوں نے قومی شاہراہ 58 پر تین گھنٹے تک بلاک کرکے دھرنا دیا۔ جس کے بعد ضلع مجسٹریٹ دیپک مینا اور پولیس سپرنٹنڈنٹ روہت سنگھ سجوان سمیت دیگر افسران موقع پر پہنچے اور کانوڑیوں کو سمجھایا۔

 

انہوں نے ملزمان کے خلاف سخت کارروائی کی یقین دہانی کرائی اور کانوڑیوں کو مطمئن کیا۔اس واقعہ کے بعد مشتعل کانوڑیوں نے ایس پی سٹی ونیت بھٹناگر کی گاڑی کو لاٹھیوں سے نقصان پہنچایا۔ ہجوم نے گاڑی کے شیشے توڑ دیئے۔ جس کے بعد ایس پی ٹریفک جتیندر سریواستو کئی تھانوں کی پولیس اور پی اے سی اہلکاروں کے ساتھ نگرانی کے لیے موقع پر موجود تھے۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button