بنگلور

ملک میں خواتین کی سلامتی خطرے میں ہے۔خواتین احتجاج کیلئے تیار رہیں۔ عبدالمجید

میسور۔(پریس ریلیز)۔ سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (SDPI) کے ریاستی صدر عبدالمجید نے کہا کہ ملک میں خواتین کی سلامتی خطرے میں ہے اور ویمن انڈیا موؤمنٹ کو اس صورتحال کا سامناکرنے کیلئے تیار رہنا چاہئے۔ گزشتہ اتوار کو میسور میں منعقد "ویمن انڈیا موؤمنٹ”کی ریاستی نمائندوں کے کنونشن کا افتتاح کرنے کے بعد خطاب کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ریاستی اور مرکزی دونوں حکومتوں کی پالیسیوں نے پسماندہ اور اقلیتوں کو نشانہ بنایا ہے اور یہ بات کئی مواقع پر ثابت ہوئی ہے۔ ایسی پالیسیوں کے خلاف لڑنا ناگزیر ہے۔ انہوں نے مزید کہا کہ خواتین کو متحد ہونا چاہئے اور لڑائی کیلئے تیار رہنا چاہئے۔ ایس ڈی پی آئی ریاستی صدر عبدالمجید نے کہا کہ ایک حالیہ رپورٹ نے ملک میں عصمت دری کے بڑھتے ہوئے واقعات کے بارے میں حقائق اور اعدادو شمار کے ساتھ ثابت کیا ہے کہ جنسی زیادتی کے 100معاملوں میں سے صرف 10معاملے ہی رجسٹرڈ ہوتے ہیں۔ ان 10فیصد میں سے صرف 25فیصد کو سزا سنائی گئی ہے۔ سرکاری اعدادوشمار کے مطابق 2021میں 13.33لاکھ عصمت دری کے مقدمات درج ہوئے اور اس کا مطلب ہے کہ ہر ایک گھنٹے میں 15خواتین کی عصمت دری ہوررہی ہے۔ اس سے مسئلے کی سنگینی ظاہر ہوتی ہے۔ بچوں کے تحفظ میں کل 170ممالک میں سے ہندوستان 146ویں نمبر پر ہے۔ یہ دیکھ کر وہ وزیر اعظم نریندر مودی کے اعلان کردہ ‘بیٹی بچاؤ، بیٹی پڑھاؤ’پروگرام پر شک کرنے کے پابند ہیں۔ دستیاب اعدادوشمار بتاتے ہیں کہ خواتین کی حفاظت کے بارے میں تشویش کا فقدان ہے۔ نریندر مودی کے پچھلے آٹھ سالوں سے وزیر اعظم ہونے کے باوجودلڑکیاں اور بچے محفوظ نہیں ہیں۔ گجرات میں بلقیس بانو کیس کے ملزمان کو حسن و سلوک پر رہا کرنا آئین اور جمہوریت کے ساتھ ناانصافی کے سوا کچھ نہیں ہے۔ بلقیس بانو کیس سے پوری خواتین برادری خوفزدہ تھیں۔ حکومت نے انصاف چھین لیا، ناانصافی اور غیر قانونی انتظامیہ راج کررہی ہے۔ اس کے پیش نظر ویمن انڈیا موؤمنٹ کو مضبوط ہونا چاہئے اور آنے والے دنوں میں کشیدہ صورتحال کا سامنا کرنے کیلئے تیار رہنا چاہئے۔ خواتین اور خاندان کے ایندھن پر مظالم بڑھ رہے ہیں اور یہ ایک بڑی تشویش ہے۔ اس لیے خواتین کو خود مختاراور بااختیار ہونا چاہئے۔ ضرورت سے زیادہ انحصار نہیں ہونا چاہئے۔ خواتین کی امنگوں کو پورا کرنے کا کام ہونا چاہئے۔ ان کا نعرہ ہونا چاہئے ‘بااختیار خواتین۔مضبوط خواتین ہیں ‘اور اس کے ذریعے انہیں تحریک کیلئے تیار رہنا چاہئے۔ ریاستی اور قومی سطح پر بی جے پی کی حکومتیں مسلمانوں اور دلتوں کے سیاسی مواقع چھیننے کی کوشش کررہی ہیں۔ صرف اس لیے کہ مرد تحریک میں سب سے آگے ہوں گے، خواتین کیلئے ریزرویشن نافذ ہے۔ یہ اقلیتوں اور دلتوں کی حق کی لڑائی کو کچلنے کے سوا کچھ نہیں ہے۔ ویمن انڈیا موؤمنٹ (WIM) کے اس ریاستی نمائندہ کنوشن اجلاس میں WIMکی ریاستی صدر شاہدہ تسنیم، قومی نائب صدر ریحانات ٹیچر، ریاستی جنرل سکریٹری عائشہ باجپے، ریاستی نائب صدر صابرہ بیگم اور سکریٹری مشریہ بلارے ڈائس پر موجود تھیں۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button