یوپی

لکھیم پور معاملہ: آشیش مشرا اور یوپی حکومت کو سپریم کورٹ کا نوٹس، تمام گواہوں کی حفاظت کا حکم

یوپی،16؍مارچ (ہندوستان اردو ٹائمز) لکھیم پور کھیری تشدد کیس میں ملزم وزیر کے بیٹے آشیش مشرا کی ضمانت منسوخی کے معاملے میں سپریم کورٹ نے یوپی حکومت اور آشیش مشرا کو نوٹس جاری کیا ہے۔ عدالت نے مشرا سے پوچھا ہے کہ کیوں نہ آپ کی ضمانت منسوخ کردی جائے ؟ نیز عدالت نے یوپی حکومت کو تمام گواہوں کو سیکورٹی فراہم کرنے کا حکم دیا ہے۔ سپریم کورٹ نے واقعہ کے گواہوں پر حملے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے یوپی حکومت سے گواہوں سے متعلق تمام معلومات طلب کی ہیں۔ اب اس معاملے کی سماعت 24 مارچ کو ہوگی۔

 

چیف جسٹس این وی رمنا، جسٹس سوریہ کانت اور جسٹس ہیما کوہلی کی بنچ نے اس معاملے کی سماعت کی۔ دراصل واقعہ کے متاثرہ کسانوںنے ملزم آشیش مشرا کی ضمانت منسوخ کرنے کے لیے سپریم کورٹ میں عرضی داخل کی تھی۔ درخواست گزاروں نے عدالت کو گواہ پر حملے اور بی جے پی کی جیت پر دھمکیوں کے بارے میں آگاہ کیا تھا۔ سپریم کورٹ میں سماعت کے دوران پرشانت بھوشن نے کسانوں کی جانب سے دلائل دیتے ہوئے کہا کہ آشیش مشرا کی ضمانت کے بعد ایک اہم گواہ پر حملہ ہوا، حملہ کس نے کیا، اس نے دھمکی دی کہ اب بی جے پی الیکشن جیت چکی ہے، تو تمہارا دھیان رکھیںگے ۔

اس دلیل کے بعد سی جے آئی این وی رمنا نے کہا تھا کہ ہم ایک مناسب بنچ تشکیل دیں گے اور آج سماعت کی تاریخ طے کی تھی۔ واضح رہے کہ مرکزی وزیر اجے مشرا ٹینی کے بیٹے آشیش مشرا، جن پر کسانوں کو اپنی جیپ سے کچلنے کا الزام ہے، کو الہ آباد ہائی کورٹ کی لکھنؤ بنچ نے گزشتہ ماہ ضمانت دے دی تھی۔ آشیش مشرا کو لکھیم پور کھیری تشدد کیس میں کافی کوششوں اور سپریم کورٹ کے سخت تبصرے کے بعد گرفتار کیا گیا تھا۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button