فقہ و فتاوی

کتاب المعاشرت: مصافحہ کے بعد سینے پرہاتھ رکھنا اورپھیرنا؟ مفتی محمد عمران قاسمی

[ کتاب المعاشرت ] مصافحہ کے بعد سینے پرہاتھ رکھنا اورپھیرنا؟ مفتی محمد عمران قاسمی

سوال(٢٠٠):* کیا فرماتے ہیں علمائے دین ومفتیان اسلام  اس سلسلے میں کہ مصافحہ کرنے کے بعد  سینہ پر ہاتھ رکھنا کیسا ہے؟ دلائل شریعت کی روشنی میں جواب سے نوازیں ۔*(المستفتی :نظر*  *محمدمالیگاؤں)*    

 *باسمہ سبحانہ تعالیٰ*   *الجواب وباللٰہ التوفیق ومنہ الصدق والصواب*:نئ ملاقات یا ایک طویل وقت کے بعد ملنے پر مصافحہ کرنا  مسنون ھے تاھم مصافحہ کے بعد ہاتھوں کو سینے پر پھیرنا اور رکھنا نہ تو احادیث سے ثابت ہے اور نہ ہی فقہاء کرام میں سے کسی نے اس کو ذکر کیا ہے بلکہ یہ ایک رواج اور بدعت ہے، لہٰذا اس سے اجتناب لازم ہے۔ (مستفاد: فتاویٰ دار العلوم :۱۷/۲۱۷،وفتاوی دارالعلوم آن لائن : تحت عنوان /معاشرت – اخلاق وآداب /رقم /#١١٣٧٦،١پریل/٢٣/٢٠٠٩، قاسمیہ: ٣٨٩/٢٣، دیوبند)   عن عائشۃ -رضی اللہ عنہا- قال رسول اللہ ﷺ: من أحدث في أمرنا ہذا ما لیس منہ فہو رد۔ (بخاری شریف :باب إذا اصطلحوا علی صلح جور فالصلح مردود)    إیاکم و محدثات الأمور، فإن کل محدثۃ بدعۃ وکل بدعۃ ضلالۃ۔ (مسند أحمد بن حنبل :۴/۱۲۶-۱۲۷ رقم: ۱۷۲۷۵)   عن جابر بن عبد اللہ قال: کان رسول اللہ ﷺ یقول فی خطبتہ: -إلی- و شر الأمور محدثاتہا، وکل محدثۃ بدعۃ، وکل بدعۃ ضلالۃ و کل ضلالۃ فی النار۔ (صحیح ابن خزیمۃ، المکتب الإسلامی/ ۲/۸۶۵ رقم: ۱۷۸۵)   البدعۃ ما أحدث علی خلاف الحق المتلقی عن رسول اللہ ﷺ من علم أو عمل أو حال بنوع شبہۃ و استحسان و جعل دینا قویما و صراطا مستقیما۔ (شامی، باب الإمامۃ، مطلب: البدعۃ خمسۃ أقسام زکریا ۲/۲۹۹، کراچی ۱/۵۶۰-۵۶۱، النہر الفائق، دار الکتب العلمیۃ بیروت ۱/۲۴۲)*فقط واﷲتعالیٰ أعلم*     

 ✒ *کتبہ :احقر*    *محمد عمران غفرلہ*    *دارالإفتاءوالإرشاد*     *وائٹ فیلڈ بنگلور*             *3/2/1441*                    *مطابق*                  *3/10/2019*                           *جمعرات*                 *MB:9454007434*              *E-mail ID:*                             *Imranqasmi1501@*                *gmail.com*

مزید پڑھیں

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Back to top button
Close
Close