جموں کشمیر

علیحدگی پسند رہنما سید علی شاہ گیلانی کی موت کے بعد وادی کشمیر میں پابندیاں ، موبائل انٹرنیٹ خدمات معطل

سرینگر،03؍ ستمبر (ہندوستان اردو ٹائمز) کشمیری علیحدگی پسند رہنما سید علی شاہ گیلانی کے انتقال کے بعد احتیاطی تدابیر کے طور پر وادی کشمیر میں جمعہ کو دوسرے دن بھی پابندیاں جاری رہیں۔ عہدیداروں نے بتایا کہ وادی میں لوگوں کی نقل و حمل اور اجتماع پر پابندی رہی ۔ نماز جمعہ کے پیش نظر شہر کے پرانے علاقوں اور کچھ نئے علاقوں میں پابندیاں سخت کر دی گئی ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہاں حیدر پورہ علاقے میں گیلانی کی رہائش گاہ کی طرف جانے والی سڑکیں بند ہیں اور لوگوں کی نقل و حمل کو روکنے کے لیے دیگر علاقوں میں بریکیڈنگ لگائی گئی ہیں۔ حکام نے بتایا کہ نظم ونسق کی صورتحال کو برقرار رکھنے کے لیے بڑی تعداد میں سکیورٹی فورسز کو تعینات کیا گیا ہے۔ کسی بھی قسم کی افواہوں کے پھیلاؤ کو روکنے کے لیے بی ایس این ایل کی پوسٹ پیڈ سروس کے علاوہ تمام موبائل فون سروس بند ہیں جبکہ موبائل انٹرنیٹ خدمات بھی معطل ہیں۔

انہوں نے بتایا کہ نماز کے بعد صورتحال کا جائزہ لیا جائے گا اور اس کے بعد فیصلہ کیا جائے گا کہ پابندیاں ختم کی جائیں یا نہیں۔پولیس نے بتایا کہ وادی میں صورتحال پرامن ہے اور کسی ناخوشگوار واقعہ کی اطلاع نہیں ہے۔ پولیس کے ایک ترجمان نے کہا کہ بعض مفاد پرست افراد نے پولیس کے ذریعہ گیلانی کو زبردستی حوالے کرنے کی بے بنیاد افواہیں پھیلانے کی کوشش کی۔ انہوں نے کہاکہ پولیس نے تشدد کو بھڑکانے کے لیے جھوٹے پروپیگنڈے جیسی بے بنیاد خبروں کی مکمل تردید کی ہے ، بلکہ پولیس نے گیلانی کی لاش کو اس کے گھر سے قبرستان لانے میں مدد کی کیونکہ سماج دشمن عناصر اس صورتحال کا غلط فائدہ اٹھانے کی کوشش کر رہے ہیں۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

Leave a Reply

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close