عجیب و غریب

پادری نے چرچ میں عبادت کی قیادت کے بجائے اعتراف محبت کر لیا،خطبہ دینے سے معذرت کرتے ہوئے کہا کہ انہیں ایک خاتون سے محبت ہو گئی ہے

اطالوی دارالحکومت روم سے منگل تیرہ اپریل کو ملنے والی رپورٹوں کے مطابق یہ واقعہ وسطی اٹلی کے علاقے پیروجیا میں ماسا مارتانا نامی چھوٹے سے شہر کے سان فیلیس نامی چرچ میں پیش آیا۔ اتوار گیارہ اپریل کی صبح حسب روایت بہت سے مقامی باشندے اس کلیسا میں سنڈے سروس کے لیے جمع ہوئے اور انہیں امید تھی کہ 42 سالہ پادری ریکارڈو چیکوبیلی حسب معمول خطبہ دیں گے، پھر اجتماعی عبادت ہو گی اور اس کے بعد دعا مانگ کر وہ سب اپنے اپنے گھروں کو چلے جائیں گے۔

‘مجھے محبت ہو گئی ہے‘

لیکن ہوا یہ کہ فادر چیکوبیلی نے سنڈے سروس کی قیادت کرنے کے بجائے ایک ایسا اعلان کر دیا، جو دراصل ان کے زندگی بھر کے لیے ایک جذباتی فیصلے کا اعتراف بھی تھا۔

اس بارے میں آج منگل کے روز اس چرچ کے کلیسائی انتظامی حلقے کی طرف سے شائع کردہ ایک اعلان میں فادر چیکوبیلی کے بیان کا حوالہ دیتے ہوئے کہا گیا، ”میں کلیسا کے لیے اپنے فرائض اب اتنے شفاف، درست اور جامع انداز میں انجام نہیں دے سکتا، جس طرح میں اب تک کرتا آیا ہوں۔ میں نے آج تک چرچ سے متعلق اپنے عہد کی کوئی خلاف ورزی نہیں کی۔ لیکن اب میرا دل محبت سے بھر گیا ہے۔ میں اپنے دل میں اس محبت کو دبائے یا اسے باہر نکالے بغیر اس کے ساتھ زندہ رہنا چاہتا ہوں۔‘‘

مقامی بشپ کی طرف سے نیک تمنائیں

فادر چیکوبیلی کا یہ اعلان سن کر چرچ میں موجود عبادت گزار ابھی حیرت زدہ ہی تھے کہ باقی وضاحت اس وقت ان کے پاس ہی کھڑے ہوئے مقامی بشپ سیگیس مونڈی نے کردی۔

بشپ سیگیس مونڈی نے فادر چیکوبیلی کی اس لمحے تک کی خدمات کو سراہتے ہوئے کہا کہ چیکوبیلی نے انہیں پہلے ہی آگاہ کر دیا تھا اور اس کلیسائی اہلکار کو یہ پورا حق حاصل ہے کہ وہ اپنے دل کی بات سنتے ہوئے اپنی مرضی سے اپنے تمام فیصلے آزادانہ طور پر خود کریں۔

بشپ سیگیس مونڈی نے کہا، ”میں ریکارڈو چیکوبیلی اور ان کی ‘محبت‘ کے لیے زندگی میں ہر طرح کی خوشیوں اور کامیابیوں کے لیے دعا گو ہوں۔‘‘ ریکارڈو چیکوبیلی اٹلی کے تقریباﹰ ساڑھے تین ہزار کی آبادی والے اس چھوٹے سے شہر میں گزشتہ چھ سال سے بھی زائد عرصے مقامی پادری کے فرائض انجام دے رہے تھے۔

خاتون کی شناخت تاحال خفیہ

ریکارڈو چیکوبیلی کے اعلان کے بعد بشپ سیگیس مونڈی نے انہیں ان کی جملہ کلیسائی ذمے داریوں سے فارغ کر دیے جانے کا اعلان بھی کر دیا۔ چیکوبیلی کے اس فیصلے اور ان کے اپنی کلیسائی ذمے داریوں سے دست بردار ہونے کے ‘ذاتی انتخاب‘ کی تفصیلات آج منگل کے روز اٹلی کے قومی اخبارات میں خبروں اور رپورٹوں کو موضوع بھی بنیں۔

اس بارے میں سان فیلیس چرچ کے ڈائیوسیس اور خود ریکارڈو چیکوبیلی نے بھی کوئی بھی تفصیلات بتانے سے انکار کر دیا کہ وہ خاتون آخر کون ہے، جس کی وجہ سے اور جس کے ساتھ چیکوبیلی نے اپنا کلیسائی گاؤن اتار کر اپنی زندگی بسر کرنے کا فیصلہ کیا۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

Leave a Reply

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close