عجیب و غریب

لفٹ کےنام پر 5 لوگوں نے باری باری کی خاتون کےساتھ اجتماعی جنسی زیادتی ،خاتون ملزموں سے چھوڑدینے کی بھیک مانگتی رہی

گروگرام، 7اپریل (ہندوستان اردو ٹائمز) دہلی سے متصل گروگرام میں ایک ٹیکسی میں لفٹ دینے کے بہانے پانچ لوگوں نے 24 سالہ خاتون کے ساتھ جنسی زیادتی کی۔ شراب کے نشے میں دھت پانچوں لوگوں نے باری باری عصمت دری کی۔ اجتماعی زیادتی کے بعد ملزمان خاتون کو گاؤں کے کھیتوں میں چھوڑ کر فرار ہوگئے۔ وہاں راہگیروں کی مدد سے متأثرہ خاتون نے پولیس کنٹرول روم کو کال کیا۔ اس کے بعد اطلاع ملنے پر فرخ نگر تھانہ کی پولیس موقع پر پہنچ کر خاتون کو لے کر آئی۔ خاتون کا بیان ریکارڈ کرنے کے بعدایف آئی آر خاتون اسٹیشن اسٹیشن مانیسر میں مختلف دفعات کے تحت درج کیا گیا ۔

متاثرہ خاتون نے پولیس کو بتایا کہ وہ دہلی کے دوارکا میں رہتی ہے۔ ایم جی روڈ پر واقع ایک کلب میں گزشتہ ایک ماہ سے کام کر رہی ہے ، وہ بھی شادی شدہ ہے۔ کلب کا کام ختم کرنے کے بعد وہ روزانہ تین بجے گھر جانے کے لئے روانہ ہوتی ہے۔ پیر کی صبح وہ تین بجے کلب سے رخصت ہوئی اور گھر جانے کے لئے IFFCO چوک پہنچی۔ اِفکو پر گھر جانے کے لئے کسی گاڑی کا انتظار کرنے لگی، کچھ دیر بعد ایک سفید رنگ کی کار آ ئی انہوں نے کہا کہ ٹیکسی میں دوراکا جانے کے لئے لفٹ مانگی ۔ کار میں ڈرائیور سمیت تین نوجوان موجود تھے۔ جیسے ہی وہ عورت کار میں بیٹھی، ڈرائیور نے خاتون سے کہا کہ یہ دونوں نوجوان تھوڑی دورچل کر اتر جائیں گے ۔ اس کے بعد نوجوان آپس میں بات کرنے لگے ،متأثرہ خاتون بھی شراب کے نشے میں تھی ، اسے نیند آگئی ۔کچھ دیر بعد جب وہ خاتون بیدار ہوئی تو اس نے پٹودی کا بورڈ دیکھا۔ اس کے بعد اس نے چیخ کر کہا کہ کہاں لے جارہے ہو۔ نوجوانوں نے کچھ نہیں کہا ، گاڑی کو لاک کردیا۔ اس نے دھمکی دی کہ اگر خاموش نہ رہی ، تو اسے جان سے مار دیا جائے گا۔ اس کے بعد ملزم اسے 48 کلومیٹر دور جھجر بارڈپر واقع ایک گاؤں کے کھیتوں میں لے گئے۔ وہاں مزید دو نوجوان کو بھی وہاں بلایا لیا ۔ کھیتوں پر پہنچنے سے پانچ نوجوان کار کے باہر شراب پینے لگے ۔ اس کے بعد پانچ نوجوان کار میں آئے اور اس کے ساتھ شراب کے نشہ میں باری باری اجتماعی عصمت دری کی۔

خاتون نے ملزم سے التجا کی کہ وہ اسے چھوڑ دے ، لیکن انہوں نے ترس نہیں کھایا ۔ اجتماعی زیادتی کے بعد ملزمان خاتون کو وہیں چھوڑ کر فرار ہوگئے۔ اس کے بعد خاتون نے پولیس کنٹرول روم میں پولیس کو اطلاع دی۔ خاتون نے پولیس تفتیش میں بتایا کہ یہ نوجوان وکی ، پنکج اور منوج کے ساتھ گفتگو کے دوران ایک دوسرے سے باتیں کر رہے تھے۔ وہ باقی لوگوں کو نہیں جانتی ہے۔پولیس کے مطابق معاملہ دوسرے ضلع سے ہونے کے باوجود خاتون کا بیان قلمبند کیا گیااور اس کے بعد اس خاتون کو مانیسر پولیس اسٹیشن میں معاملہ درج کیا گیا، معاملہ کی تفتیش جاری ہے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close