عجیب و غریب

مدھیہ پردیش: وکیل پربھاری پڑا بیوی کے ہراساں کرنے کامقدمہ،گنوادیا ضلع جج بننے کا موقع

بھوپال، 15 اکتوبر (آئی این ایس انڈیا) مدھیہ پردیش میں اہلیہ کی جانب سے دائر سیکشن 498(اے) کا معاملہ ایک سینئر وکیل کواتنا بھاری پڑا کہ ڈسٹرکٹ جج بننے کا عہدہ تک گنوانا پڑا۔ در اصل خاتون کی جانب سے اپنے وکیل شوہر کے خلاف آئی پی سی کی دفعہ 489اے کے تحت مقدمہ درج کرایا گیا تھا۔ اسی بنا پرمدھیہ پردیش ہائی کورٹ نے ضلع جج کے عہدے پر وکیل کی تقرری پر دوبارہ غور کرنے کی اپیل کو مسترد کردیا۔اس کے بعد وکیل نے سپریم کورٹ کارخ کیا لیکن اسے وہاں سے بھی مدد نہیں ملی۔ سپریم کورٹ نے ہائی کورٹ کے فیصلے کو برقرار رکھتے ہوئے کہا کہ ہائی کورٹ نے ضلع جج کے عہدے پر وکیل کی تقرری منسوخ کرنے میں کوئی غلطی نہیں کی۔ جسٹس اشوک بھوشن اور جسٹس ایم آر شاہ کی بنچ نے موقف اختیار کیا کہ ڈسٹرکٹ جج کے عہدے کے لئے اپیل کنندہ کو نااہل قرار دینے کا امتحانات سلیکشن کمیٹی اور تقرری کمیٹی کا فیصلہ درست ہے۔ ان کی اہلیہ نے اپیل کنندہ کے خلاف آئی پی سی کی دفعہ 498A، 406 کے تحت مقدمہ درج کیا تھا۔اس معاملے میں ٹرائل کورٹ نے اپیل کنندہ کو تمام الزامات سے بری کردیا لیکن یہ دلیل بھی سپریم کورٹ میں کام نہیں آئی۔ بنچ نے کہا کہ انتخاب کے وقت اور تقرری سے قبل امیدوار کے خلاف فوجداری مقدمہ زیر سماعت ہے، گھڑی کو پیچھے نہیں گھمایا جاسکتا۔ ایسی صورتحال میں کمیٹی نے اپنے انصاف اور طاقت کے دائرہ اختیار میں جو فیصلہ لیا ہے وہ ٹھیک ہے اور اسے تبدیل نہیں کیا جاسکتا۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close