ممبئی

شیو سینا رکن پارلیمنٹ راہل شیوالے پر عصمت دری کا الزام

ممبئی، 20جولائی (ہندوستان اردو ٹائمز) دبئی کی ایک 33 سالہ خاتون نے شیو سینا کے رکن پارلیمنٹ راہل شیوالے کے خلاف عصمت دری کے الزام میں ایف آئی آر درج کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔ دوسری طرف شیوالے کی بیوی کامنی نے اپنے شوہر کے خلاف لگائے گئے الزامات کو مسترد کرتے ہوئے اسے ایم پی کی شبیہ کو خراب کرنے کی ’’دانستہ سازش‘‘ قرار دیا جو 25 سال سے زیادہ عرصے سے سماجی اور سیاسی زندگی میں سرگرم ہیں۔اس خاتون نے، جو ٹیکسٹائل کا کاروبار کرتی ہے،

اپنی شکایت میں الزام لگایا ہے کہ ممبئی پولیس نے ماضی میں اس کا بیان ریکارڈ کرنے کے باوجود ایف آئی آر درج نہیں کی۔ ممبئی پولیس کے ایک اہلکار نے منگل کو کہا کہ انہوں نے الزام لگایا ہے کہ شیوالے 2020 سے جذباتی اور ذہنی طور پر اس کے ساتھ بدسلوکی اور عصمت دری کر رہے ہیں۔خاتون نے الزام لگایا ہے کہ شیوالے نے اس کے ساتھ یہ کہتے ہوئے جسمانی تعلقات بنائے کہ بیوی کے ساتھ اس کے تعلقات کشیدہ ہیں۔ شکایت کے مطابق شیوالے نے خاتون سے کہا تھا کہ وہ جلد ہی طلاق لے لے گا جس کے بعد وہ اس سے شادی کرے گا۔

شکایت کے مطابق میں جب بھی دبئی سے آتی تھی، ایم پی مجھے دہلی کے ایم پی ہاؤس میں ڈنر پر مدعو کرتے تھے۔ اکتوبر 2021 میں، میں نے انسٹاگرام پر اپنی اور شیوالے کی ایک ویڈیو اور تصویر پوسٹ کی، جس کے بعد انہوں نے شارجہ میں میرے خلاف ایف آئی آر درج کرائی اور مجھے گرفتار کر لیا گیا۔میں نے 78 دن جیل میں گزارے لیکن بعد میں بری کر دیا گیا۔ چیف منسٹر ایکناتھ شندے سے ایف آئی آر درج کرنے کی درخواست کی۔ ممبئی کا دورہ کرنے والی خاتون نے دعویٰ کیا کہ اس نے اس سال اپریل میں ساکی ناکا پولیس اسٹیشن میں شیوالے کے خلاف عصمت دری کی شکایت درج کروائی تھی، لیکن مزید کارروائی نہیں کی گئی۔خاتون نے کہا کہ مجھے معلوم ہوا کہ ساکی ناکا پولیس نے شیوالے کی شکایت پر میرے خلاف بھتہ خوری اور آئی پی سی کی دیگر دفعات کے تحت ایف آئی آر درج کی ہے۔ میں نے پولیس کو تمام ثبوت فراہم کیے اور خواتین کے قومی کمیشن سے بھی رجوع کیا۔ میں چیف منسٹر سے درخواست کرتی ہوں کہ شیوالے کے خلاف کاروائی کریں اور پولیس کو ان کے خلاف ایف آئی آر درج کرنے کی ہدایت کریں۔

واضح ہوکہ ایک رکن پارلیمنٹ نے خاتون کے خلاف بھتہ خوری کا مقدمہ درج کرایا تھا۔ شیوالے کی درخواست پر 11 جولائی کو ساکی ناکا پولیس نے اندھیری میں میٹروپولیٹن مجسٹریٹ کی عدالت کی ہدایت پر جبری وصولی، دھوکہ دہی اور ہتک عزت کے الزام میں خاتون کے خلاف ایف آئی آر درج کی تھی۔ایم پی نے اپنی شکایت میں کہا تھا کہ خاتون نے اس کے کاروبار کے لیے مالی مدد مانگنے کے بہانے اس سے رابطہ کیا تھا لیکن اس نے اسے بدنام کرنے کی دھمکی دے کر رقم بٹورنی شروع کردی تھی۔ اس نے اپنی شکایت میں کہا تھا کہ خاتون اس پر اپنی بیوی کو طلاق دینے اور اس سے شادی کرنے کے لیے دباؤ ڈال رہی تھی۔ شیوالے نے یہ بھی کہا کہ وہ فروری 2020 میں ایک قریبی دوست کے ذریعے خاتون سے ملا تھا۔ اپنے بیان میں کامنی شیوالے نے ممبئی کے ساکیناکا پولیس اسٹیشن میں خاتون کے خلاف درج ایف آئی آر کا حوالہ دیا۔کامنی شیوالے نے کہا کہ یہ خاتون پچھلے کچھ مہینوں سے مجھے اور میرے خاندان والوں کو جان سے مارنے کی دھمکیاں دے رہی تھی۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button