مدھیہ پردیش

شیوراج کو ٹھندی چائے ملنے پر افسر پر گری گاج، کانگریس کاطنز

بھوپال / چھترپور ،12جولائی (ہندوستان اردو ٹائمز) مدھیہ پردیش کے وزیر اعلیٰ شیوراج سنگھ چوہان کے چھترپور ضلع کے کھجوراہو قیام کے دوران ٹھنڈی چائے پیش کرانا ایک افسر کے لئے مہنگا پڑ گیا۔ اسے وجہ بتاؤ نوٹس جاری کیا گیاہے۔ کانگریس نے اس پر طنز کیا ہے، جبکہ سب ڈویزنل آفیسر نے ٹھنڈی چائے پیش کئے جانے کی تردید کی ہے۔معاملہ 11 جولائی کا ہے۔

راج نگر کے سب ڈویڑنل مجسٹریٹ کی طرف سے جونیئر سپلائی آفیسر راکیش کنہوا کو جاری کردہ وجہ بتاؤ نوٹس میں کہا گیا ہے کہ وزیر اعلیٰ شیوراج چوہان 11 جولائی کو کھجوراہو ہوائی اڈے پر ٹرانزٹ وزٹ پر تھے، اس دوران انہیں ناشتہ اور چائے فراہم کرنے کی ذمہ داری ان پر تھی، جس میں پتی کا تناسب دردست نہیں تھا اور وہ ٹھنڈی تھی،اس کی وجہ سے ضلعی انتظامیہ کے سامنے ناگوار صورتحال پیدا ہو گئی اور پروٹوکول کی پاسداری پر سوالیہ نشان لگ گیا۔اس نوٹس میں مزید کہا گیا ہے کہ ایسا لگتا ہے کہ یہ صورتحال وی وی آئی پی کے نظام کو نظر انداز کرنے کی وجہ سے پیدا ہوئی ہے جو کہ پروٹوکول کی دفعات کے منافی ہونے کی وجہ سے بداعمالی کے زمرے میں آتا ہے۔ اس نوٹس میں افسر کو تین دن کے اندر جواب دینے کو کہا گیا ہے۔

اگر وہ ایسا نہیں کرتے تو ان کے خلاف بداعمالی کے تحت سخت تادیبی کارروائی عمل میں لائی جائے گی۔سب ڈویژنل مجسٹریٹ کی طرف سے جونیئر سپلائی افسر کو جاری نوٹس کی کاپی کے ساتھ، کانگریس کے ریاستی صدر کمل ناتھ کے میڈیا کوآرڈینیٹر نریندر سلوجا نے ٹویٹ کیا اور لکھا کہ ماماجی کو ٹھنڈی چائے دینے پر فوڈ انسپکٹر پر گری گاج، چھتر پور کے راج نگر کا معاملہ۔ عوام کو بھلے راشن تک نہ ملے، مریض کو ایمبولینس نہ ملے لیکن چیف کو ٹھنڈی چائے نہیں ملنی چاہیے۔ادھر سب ڈویژنل آفیسر ڈی پی دیویدی نے نوٹس جاری کرنے کا اعتراف کیا ہے۔

انہوں نے کہا کہ وزیر اعلیٰ کی آمد سے قبل جو انتظامی افسران کو جو چائے پیش کی گئی تھی اس میں پتی کا تناسب ٹھیک نہیں تھا، اسی پر نوٹس دیا گیا ہے۔ وزیرا علیٰ نے تو چائے لی ہی نہیں۔ وہ وی آئی پی لانچ میں ہی نہیں آئے تھے۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button