ممبئی

سنجے راوت 22 اگست تک رہیں گے عدالتی تحویل میں

ممبئی ،8اگست(ہندوستان اردو ٹائمز) شیوسینا کے راجیہ سبھا ممبر سنجے راوت کو 22 اگست2022 تک عدالتی حراست میں بھیج دیا گیا ہے۔ تاہم، عدالت نے ان کے ساتھ تھوڑا سی نرمی بھی کی ہے۔ عدالت نے انہیں عدالتی حراست میں ادویات اور گھر کا کھانا فراہم کرنے کی بھی اجازت دے دی ہے۔ دراصل، سنجے راوت کے وکیل نے عدالت میں کاغذات دیئے تھے، جس میں ایم پی کی صحت سے متعلق کاغذات موجود تھے۔

ان کی بنیاد پر شیوسینا لیڈر کو گھر کا کھانا اور ادویات دینے کی اجازت دی گئی ہے۔عدالت نے آرتھر روڈ جیل کے سپرنٹنڈنٹ سے کہا ہے کہ وہ سنجے راوت کی صحت کے بارے میں بتائیں تاکہ ان کے لیے انتظامات کیے جائیں۔عدالت کے اگلے حکم تک سنجے راوت کو گھر کا کھانا اور ادویات دی جائیں گی۔بتا دیں کہ پچھلی سماعت کے دوران ای ڈی نے ان کے ریمانڈ میں توسیع کی درخواست کی تھی، جسے عدالت نے قبول کرتے ہوئے ریمانڈ میں 8 اگست تک توسیع کر دی تھی۔ کیس کی سماعت کرتے ہوئے جج نے سنجے راوت سے پوچھا کہ کیا آپ کو کوئی مسئلہ ہے؟

اس پر انہوں نے کہا تھا کہ جہاں انہیں حراست میں رکھا گیا ہے وہاں وینٹی لیشن نہیں ہے۔ اس معاملے پر عدالت نے پولیس سے جواب طلب کیا تھا۔راؤت کو مرکزی ایجنسی نے اتوار کی آدھی رات کو مضافاتی گوریگاؤں میں پتراچال کی تعمیر نو میں مبینہ مالی بے ضابطگیوں کے سلسلے میں گرفتار کیا تھا۔ای ڈی نے پیر کو راؤت کو منی لانڈرنگ کی روک تھام ایکٹ (پی ایم ایل اے) عدالت کے جج ایم جی دیشپانڈے کے سامنے پیش کیا اور ان کی آٹھ دن کی تحویل طلب کی لیکن عدالت نے شیوسینا لیڈر کو 4 اگست تک تحویل میں بھیج دیا۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button