قومی

سبسڈی ختم کرنے کی تیاری، رندیپ سرجیوالاکااعلان ،کانگریس’مہنگائی مکت بھارت ‘مہم چلائے گی

نئی دہلی26مارچ (ہندوستان اردو ٹائمز) کانگریس نے پیٹرول، ڈیزل، گیس جیسی ضروری اشیاء کی مسلسل بڑھتی قیمت اورمہنگائی کے لیے حکومت کے خلاف بگل بجانے کا فیصلہ کیا ہے۔ کانگریس اس جمعرات کو صبح 11 بجے ڈھول اور گھنٹیاں بجا کر تحریک شروع کرے گی۔ کانگریس کے چیف ترجمان رندیپ سرجے والا نے ہفتہ کومہنگائی سے پاک ہندوستان مہم (مہنگائی مکت بھارت ابھیان) کا اعلان کیاہے۔ سرجے والانے کہاہے کہ بی جے پی کی طرف سے پیدا کی گئی یہ مہنگائی صرف امیروں کو فائدہ پہنچاتی ہے اور باقی سب کو کچل دیتی ہے۔ کانگریس ترجمان نے کہاہے کہ ایک طرف یہ کمائی کم کر رہی ہے اور دوسری طرف مہنگائی کا مسلسل جھٹکا دے رہی ہے۔ حکومت ملک کے عوام کو تِل سے تڑپانے کا کام کر رہی ہے۔ اس سے ہر کوئی پریشان ہے۔ سرجے والانے کہاہے کہ سونیا گاندھی کی ہدایت پر جنرل سکریٹری اور انچارج نے میٹنگ کی ہے۔ اس میٹنگ میں فیصلہ کیا گیا کہ مہنگائی سے پاک ہندوستان مہم تین مرحلوں میں چلائی جائے گی۔

کانگریس کے ترجمان نے کہا کہ مئی 2014 میں پٹرول پر ایکسائز 9.20 روپے ڈیزل پر اور 3.46 روپے ڈیزل پر تھی۔ لیکن بی جے پی حکومت نے پچھلے آٹھ سالوں میں ڈیزل پر ایکسائز ڈیوٹی 531 فیصد بڑھا کر پٹرول پر 203 فیصد کر دی ہے۔ مودی حکومت نے 8 سالوں میں عوام کی جیبوں سے 26 لاکھ کروڑ روپے لوٹ لیے ہیں۔دو سال سے کورونا کی وبا کی بات کریں تو پٹرول پر 29 روپے اور ڈیزل پر 27.58 روپے کا اضافہ کیا گیا ہے۔ ترجمان نے کہاہے کہ یو پی اے میں منموہن سنگھ حکومت کے دوران سال 2011-12 میں پٹرول اور ڈیزل پر سبسڈی 1 لاکھ 42 ہزار کروڑ روپے تھی۔ پھر اسے بڑھا کر تقریباً ڈیڑھ لاکھ روپے کر دیا گیا۔ اس کے ذریعے غریبوں کو ریلیف دیا گیا۔

2016 میں مودی حکومت نے سبسڈی کو گھٹا کر 27,000 کروڑ روپے کر دیا جو کہ اب صرف 11,000 کروڑ روپے رہ گیا ہے۔ یہ بھی جلد ختم ہونے والی ہے۔ آٹھ سال پہلے گیس سلنڈر کی قیمت 410 روپے تھی، آج اس کی قیمت 1000 سے 1200 روپے ہے۔ 8 سالوں میں 410 سلنڈروں پر 539.49 روپے کا اضافہ کیا گیا ہے۔ بین الاقوامی منڈی میں گیس کی قیمت کم ہوئی ہے جب کہ ہمارے ملک میں گیس کی قیمت دوگنی سے بھی زیادہ ہو گئی ہے۔ سی این جی 2014 میں 35 روپے تھی جو اب بڑھ کر 80 روپے فی کلوہو گئی ہے۔ اس لیے 31 مارچ کو مہنگائی سے پاک ہندوستان مہم شروع کی جائے گی۔ 11 بجے کانگریس کے سبھی لوگ عوام کو کال دیں گے۔ اس دن اپنے سلنڈرلے کرگھر کے باہر کھڑے ہو کر گھنٹی اور ڈھول بجائیں گے۔دوسرا مرحلہ 2 اپریل سے 4 اپریل کے درمیان ہوگا۔ اس میں مذہبی اور سماجی تنظیموں کو بھی ساتھ لیا جائے گا۔ مہنگائی سے پاک بھارت دھرنا اور مارچ ضلعی سطح پر نکالا جائے گا۔ 7 اپریل کو ہر ریاست کے کانگریس دفاتر تمام یونینوں کے ساتھ مہنگائی سے پاک ہندوستان مارچ اور دھرنا نکالیں گے۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button