ممبئی

سابق وزیر داخلہ انیل دیشمکھ کو کلین چٹ ، مبینہ سی بی آئی رپورٹ وائرل

ممبئی ، ۲۹؍اگست(ہندوستان اردو ٹائمز) مہاراشٹر کے سابق وزیر داخلہ انیل دیشمکھ کے خلاف بھتہ خوری کے الزامات کی تحقیقات کرنے والی ایک مبینہ سی بی آئی رپورٹ نے سیاسی ہلچل مچا دی ہے۔ سی بی آئی کی مبینہ رپورٹ کتنی درست ہے ، ا س کے متعلق ابھی کچھ نہیں کہا جا سکتا لیکن اس مبینہ رپورٹ کے مطابق سی بی آئی نے وصولی کیس میں انیل دیشمکھ کو کلین چٹ دے دی ہے۔

یہ مبینہ کلین چٹ سی بی آئی کی ابتدائی تحقیقات کے بعد دی گئی ہے۔ مبینہ سی بی آئی رپورٹ کے بارے میں کہا گیا ہے کہ انیل دیشمکھ کے خلاف کوئی ٹھوس ثبوت نہیں ملے ہیں۔ اس صورت حال میں یہ سوال پیدا ہو رہا ہے کہ اگر ابتدائی تفتیش میں سی بی آئی نے انیل دیشمکھ کو کلین چٹ دی تھی ، تو بعد میں ان کیخلاف ایف آئی آر کیوں درج کی گئی۔ مبینہ سی بی آئی رپورٹ ڈی ایس پی آر ایس گنجیال نے تیار کی ہے۔ اس رپورٹ میں انیل دیشمکھ پر لگائے گئے الزامات کے ہر پہلو پر بات کی ہے۔کانگریس نے دعویٰ کیا ہے کہ وصولی کیس کی تحقیقات کرنے والی سی بی آئی نے کلین چٹ دے دی ہے۔ کانگریس نے اتوار کو دعویٰ کیا کہ سی بی آئی کے تفتیشی افسر (آئی او) نے مہاراشٹر کے سابق وزیر داخلہ انیل دیشمکھ کا کوئی رول نہیں پایا اور تحقیقات بند کر دی۔

کانگریس لیڈر سچن ساونت نے ٹو ئٹ کرکے اس کی اطلاع دی ہے ۔ مہاراشٹرا کانگریس کے ترجمان سچن ساونت نے تفتیشی افسر کی رپورٹ کو نظر انداز کرنے کیلئے سی بی آئی کے ذریعہ کی گئی مبینہ ’سازش‘ کی سپریم کورٹ کی نگرانی میں تحقیقات کا مطالبہ کیا ہے۔یہی نہیں ، کانگریس کے ترجمان سچن ساونت نے مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ کو بھی نشانہ بنایا اور کہا کہ انہیں اس کی ذمہ داری لیتے ہوئے فوری طور پر استعفیٰ دے دینا چاہیے۔ ساتھ ہی مبینہ رپورٹ میں اس بات کا واضح طور پر ذکر کیا گیا ہے کہ سچن وازے اور انیل دیشمکھ کے درمیان کوئی ملاقات یا میٹنگ نہیں ہوئی ہے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

Leave a Reply

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close