قومی

راہل گاندھی کیخلاف جعلی خبروں مزید برداشت نہیں ، قانونی کارروائی ہوگی : کانگریس

نئی دہلی، 4 جولائی (ہندوستان اردو ٹائمز) کانگریس نے پیر کو کہا کہ اس کے سرکردہ لیڈر راہل گاندھی کے خلاف جھوٹے پروپیگنڈہ کو مزید برداشت نہیں کیا جائے گا اور ایسا کرنے والوں کیخلاف مناسب قانونی کارروائی کی جائے گی۔ پارٹی کے میڈیا اور مہم کے سربراہ پون کھیڑا نے یہ بھی بتایا کہ ادے پور واقعہ سے منسلک راہل گاندھی کی ویڈیو نشر کرنے کے سلسلے میں چھ ریاستوں میں سابق وزیر اطلاعات و نشریات راجیہ وردھن سنگھ راٹھور اور بی جے پی کے کچھ دیگر رہنماؤں کے خلاف شکایتیں درج کرائی گئی ہیں۔

چھتیس گڑھ کے بلاس پور میں بھی ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔قابل ذکر ہے کہ کانگریس جنرل سکریٹری جے رام رمیش نے ہفتہ کو بی جے پی صدر جگت پرکاش نڈا کو ایک خط لکھا تھا، جس میں ان سے کہا تھا کہ وہ راہل گاندھی کے بارے میں جھوٹ پھیلانے کے لیے اپنے لیڈروں کی جانب سے معافی مانگیں، ورنہ قانونی کارروائی کی جائے گی۔دراصل راہل گاندھی کا ویڈیو ایک نیوز چینل پر نشر ہوا تھا۔ کانگریس کا کہنا ہے کہ اس کے سابق صدر نے ان کے پارلیمانی حلقہ وائناڈ میں راہل گاندھی کے دفتر پر ایس ایف آئی کارکنوں کے مبینہ حملے کے حوالے سے یہ تبصرہ کیا، جسے ایک چینل (زی ٹی وی )کے ذریعہ ادے پور واقعہ سے جوڑا گیا تھا۔

بعد میں اس چینل نے اپنی غلطی پر معافی مانگ لی۔کھیڑا نے پیر کو نامہ نگاروں سے کہا کہ ہمارے جنرل سکریٹری جے رام رمیش جی نے نڈا جی کو 24 گھنٹے کا وقت دیا تھا۔ کل رات تک کوئی جواب نہیں آیا۔ ہم نے راٹھور اور بی جے پی کے کچھ دیگر رہنماؤں کیخلاف چھ ریاستوں راجستھان، جھارکھنڈ، مہاراشٹر، مدھیہ پردیش، دہلی اور چھتیس گڑھ میں شکایات درج کرائی ہیں۔ چھتیس گڑھ کے بلاسپور میں بھی ایف آئی آر درج کی گئی ہے۔راٹھور پر حملہ کرتے ہوئے، پارٹی کی ترجمان سپریانے کہا کہ آپ ایک بڑی سازش کا حصہ ہیں، آپ تعصب کی آگ بھڑکا رہے ہیں اور راہل گاندھی کو دہشت گردوں سے جوڑنے کی ہمت بھی کر رہے ہیں۔ یہ برداشت نہیں کیا جائے گا۔

انہوں نے یہ بھی کہا کہ وزیراعظم نے کل حیدرآباد میں 28 منٹ کی تقریر کی، لیکن ملک کے ماحول کو درست کرنے کے لیے دو لفظ بھی نہیں بولے ۔سپریا نے اصرار کیا کہ جھوٹ کو مزید برداشت نہیں کیا جائے گا۔ اگر آپ ہمارے سرکردہ لیڈر راہل گاندھی کے خلاف جھوٹ پھیلاتے ہیں تو اسے برداشت نہیں کیا جائے گا،بلکہ اس کے خلاف قانونی کارروائی کی جائے گی۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button