دیوبند

17مئی کے بعد بھی سہارنپور ضلع سے ریڈ زون ہٹنے کی امیدیں کم

دیوبند، 14؍ مئی (رضوان سلمانی) لاک ڈائون 3 17/مئی کو ختم ہونے کے بعد بھی سہارنپور ضلع جہاں ریڈ زون میں ہی برقرار رہنے کی امید ہے وہیں مظفرنگر کا درجہ اورینج زون کیا جاسکتا ہے۔ شاملی جب کہ پہلے ہی اورینج زون میں ہے ایسے میں شاملی اور مظفرنگر میں کچھ زیادہ راحتیں دی جاسکتی ہیں ، ساتھ ہی سہارنپور کے ان قصبوں اورعلاقوں میں ہلکی راحت دی جاسکتی ہے جہاں ابھی تک ایک بھی کیس کرونا پوزیٹیو نہیں پایا گیا ہے ۔ کمشنر کی ہدایت پر پوری کمشنری کے افسران ممکنہ راحت کے لئے بلو پرنٹ تیارکرنے میںلگے ہوئے ہیں ۔ کرونا وائرس کی وجہ سے لگائے گئے لاک ڈائون 3،17مئی کو ختم ہورہا ہے ، گزشتہ تقریباً 50روز سے تمام بندشوں کے درمیان لوگ گھروں میں قید ہیں اور اپنے آپ کو خاصی پریشانیوں میں مبتلا نظر آرہے ہیں ، لوگ امید لگائے بیٹھے ہیں کہ شاید 17مئی کے بعد لاک ڈائون میں کچھ راحت مل سکے ، حالانکہ کرونا کے معاملے میں پوری کمشنری میں فی الحال ملا جلا اثر ہے ۔

سہارنپور میں ابھی تک 191کرونا پوزیٹیو کیس مل چکے ہیں جن میں 158صحیح ہوکر آچکے ہیں ۔ اس طرح اب صرف 33کرونا پوزیٹیو ہی بچے ہیں اور 17مئی میں صرف 3روز ہی باقی ہیں، ایسے میں امید کی جارہی ہے کہ اسی طرح سے اور مریض بھی صحت یاب ہوکر آئیں ، لیکن ابھی جہاں 33مریض ضلع میں موجود ہیں اور 500سے زائد جانچیں باقی ہیں ، ایسے میں فی الحال ضلع کے ریڈ زون سے باہر آنے کی امید 17مئی تک نہیں نظرآرہی ہے ۔ اسی کے ساتھ ہی ضلع میں فی الحال ایک درجن سے زائد ہاٹ اسپاٹ ہیں ، حالانکہ آدھا درجن ہاٹ اسپاٹ ایسے ہیں جن میں سے کئی علاقوں میں سے گزشتہ 14روز سے کوئی کیس نہیں آیا ہے۔

لیکن رینڈم جانچ کے سیمپل کی رپورٹ رکی ہونے کی وجہ سے ہاٹ اسپاٹ کو ختم کرنے کی بھی کوئی اسکیم انتظامیہ کی فی الحال نہیں ہے لیکن اس کے ساتھ ہی انتظامیہ ایک اسکیم تیار کررہی ہے ، دیہات کے کئی قصبے ایسے ہیں جہاں پر ایک بھی کرونا پوزیٹیو نہیں ملا ہے ، شہر میں بھی کئی حصے ہیں جہاں پر کرونا نہیں پہنچ پایا ہے ایسے علاقوں میں کچھ راحت دینے پر بلو پرنٹ تیار ہورہا ہے ۔اب رہی کمشنری کے مظفرنگر اور شاملی ضلع کی مظفرنگر بھی ابھی تک ریڈ زون میں ہے لیکن جس طرح سے وہاں پر کرونا پوزیٹیو کا ریکوری ریٹ رہا ہے اس سے 17مئی کے بعد ریڈ زون سے باہر نکلا جاسکتا ہے ۔ مظفرنگر میں اب صرف ایک کرونا پوزیٹیو بچا ہے اس طرح مظفرنگر سے ریڈ زون کا ٹھپہ ہٹ سکتا ہے، اسے اورینج زون میں لاکر اور زیادہ سہولتیں دی جاسکتی ہیں اور اس کے لئے کمشنرکی ہدایت کے مطابق تیاری چل رہی ہے ۔

جب کہ شاملی ضلع اس وقت اورینج زون میں ہے وہاں پر ابھی تک 23مریض سامنے آچکے ہیں لیکن 18صحیح ہوکر جاچکے ہیں ایسے میں صرف 5کرونا مریض ہی بچے ہیں ۔ اشارے مل رہے ہیں کہ یہاں پر 17مئی کے بعد درجہ تو اورینج کا رہے گا لیکن کچھ چھوٹ زیادہ دی جاسکتی ہے۔ اس سلسلے میں کمشنر سنجے کمار نے بتایا کہ 17مئی کے بعد سہارنپور میں فی الحال ریڈ زون جاری رہ سکتا ہے وہیں ہاٹ اسپاٹ کی تعدادمیں کمی آنے کی امید کم ہے ۔ مظفرنگر ریڈ زون ہٹاکر اورینج زون میں آئے گا وہیں شاملی میں اور زیادہ راحت دیئے جانے کی اسکیم پر غور وخوض کیا جارہا ہے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close