دیوبند

دیوبند میں منی پور کے طلبہ پریشان حکومت سےگھر بھیجنے کا کیامطالبہ

دیوبند،31؍ مارچ(رضوان سلمانی) کورونا وائرس کے سبب ملک بھر میں ہوئے 21؍ یوم کے لاک ڈؤان سے جہاں کسان مزدور پریشان ہیں وہیں بڑی تعداد میں دیوبند میں قیام پذیر مختلف صوبوںکے طلبہ بھی شدید پریشانیوں سے گزر رہے،دیوبند کے مختلف اداروں میں زیر تعلیم صوبہ منی پور کے سیکڑوں طلبہ اس وقت سخت مشکل سے دور چار ہیں کیونکہ نہ تو ان کے پاس کھانے کے پیسے ہیں اورنہ ان کے گھروں کو جانا کو ئی بندوبست ہورہاہے،ان طلبہ نے مرکزی حکومت ،اترپردیش حکومت اور منی پوری حکومت سے ان کا مسئلہ حل کرنے کی مانگ کی ہے۔منی پور کے طالبعلم محمد ارشاد حسین نے کہاکہ ہمارے پاس جو پیسہ ہیں وہ بھی ایک دو دن میں ختم ہوجائینگے، کوروناکی وجہ سے ہم نروس ہورہے ہیں کیونکہ حکومت نے بغیر کسی پلاننگ کے یہ قدم اٹھایا ہے، انہوں نے کہاکہ حکومت کی طرف سے ہمیں کیا مدد ملے گی اور کیانہیںملے گی اسکا ہمیں کوئی علم نہیں ہے۔ انہوں نے کہاکہ ہمارے اسٹیٹ کے سیکڑوں طلبہ نروس اور پریشان ہیں، حکومت اس سلسلہ میں ٹھوس قدم اٹھائے ،کیونکہ ہمارے پاس سے کھانے تک کے پیسہ ختم ہوگئے ہیں،ایسے حالات میں ہم کیسے زندگی جئے گا۔منی پور کے دوسرے طالبعلم محمد طارق نے کہاکہ ہم لوگ یہا کیسے رہے،دیگر اسٹیٹ کے بچے اپنے گھروںکو جارہے ہیں لیکن منی پور کے بچوں کو معقول انتظام نہیں ہورہاہے، اسلئے ہم منی پور حکومت سے بھی مطالبہ کرتے ہیں وہ ہمیں یہاں سے جلدی سے نکالیں، یہاںمہنگائی آسمان چھورہی اور ہم کمروں میںقید ہوکر رہ گئے ہیں ہمارے سامنے بڑے مسائل ہیں جن کوفوراً حل کیاجائے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Back to top button
Close
Close