دیوبند

دیوبند : لوگ بینکوں سے اپنی ضروریات پوری نہیں کرپارہے ہیں

دیوبند،31؍ مارچ(رضوان سلمانی) لاک ڈاؤن کے سبب یہاں لوگوںکو سخت پریشانیوں کا سامنا کرناپڑرہاہے ،حالانکہ لوگ خود اپنے گھروں میں رہ کر کورونا کے خلاف جنگ کررہے ہیں لیکن ضروری اشیاء وقت پر مہیا نہ ہونے اور روزگار کے مواقع ختم ہونے کے سبب انہیںشدید دشواروں کا سامناکرناپڑرہاہے ،اتنا ہی نہیں بلکہ بینکوں کے کھاتہ دار بھی کافی متاثرہورہے ہیں۔ جہاں بینکوں کے وقت میں ایک مرتبہ پھر تبدیلی ہوگئی اور اب بینک صبح 10؍ سے بجے شام چار بجے تک حسب معمول کھلے گیں وہیں پولیس لوگوںکو سڑکوں پر نکلنے پر سختی کررہی ہے، یہی وجہ سے لوگ بینکوں سے اپنی ضروریات پوری نہیںکرپارہے ہیں۔ آج دارالعلوم چوک پر واقع اسٹیٹ بینک آف انڈیا کی منی برانچ میں صبح سے ہی کافی تعداد میں مردو خواتین کی لمبی قطار دیکھی گئی، جہاں پولیس نے سختی کرتے ہوئے لوگوں کو فاصلہ پر کھڑا کیا ،حالانکہ منی بینک سے لوگوں کو کافی کم روپیہ دیئے جارہے ہیں جبکہ لوگ خاطر خواہ رقم اپنے پاس نقدی کے طورپر جمع رکھنا چاہتے ہیں۔ لوگوںکہناہے کہ وہ صبح صبح بینکوں میںپہنچ کر اپنی ضروریات پورا کرناچاہتے ہیںکیونکہ دن میں پولیس کی سختی کے سبب باہر نکلنا مشکل ہے۔لوگوں کاکہناہے کہ منی برانچ سے انہیں ضروریات سے کم رقم مل رہی ہے ،جس کے سبب انہیں روز روز آنا پڑتاہے۔ واضح رہے کہ ملک میں اچانک نافذ ہوئے لاک ڈاؤن کے سبب یہاںبڑی تعداد میں اسٹوڈینٹ اور مزدور اپنے گھروں سے دور پھنسے ہوئے ہیںوہیں روز مرہ محنت مزدوری کرکے گزر بسر کرنے والے لوگوںکے سامنے روزی روٹی کامسئلہ پیدا ہوگیاہے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

Leave a Reply

Back to top button
Close
Close