دیوبند

دیوبند: مولانا مفتی عفان منصورپوری کے صاحبزادہ کے تکمیل حفظ قرآن کے موقع پر دعائیہ تقریب کا انعقاد

قرآن کریم ایک مکمل ضابطۂ حیات ،کامل دستورِ زندگی اور اللہ تعالیٰ کا لاثانی و لافانی معجزہ ہے : مولانا سید ارشد مدنی

دیوبند،8؍اپریل (رضوان سلمانی) معروف عالم دین اور شہرت یافتہ شخصیت مولانا مفتی سید محمد عفان منصورپوری کے صاحبزادہ سید محمد ھشام کے حفظ قرآن کی تکمیل کے موقع پر فردوس گارڈن میں ایک پرنور دعائیہ تقریب کا اہتمام کیا گیا ۔ اس دعائیہ تقریب میں خاندان کے بزرگوار مولانا سید ارشد مدنی اور مولانا قاری سید محمد عثمان منصورپوری کے علاوہ مولانا مفتی سلمان ،مولانا اشہد رشیدی ،مولانا اخلد رشیدی ،مولانا عبد الخالق سنبھلی،مفتی راشد اور مفتی سلمان بجنوری و دیگر اساتذہ نے شرکت فرمائی ۔ دعائیہ مجلس سے خطاب کرتے ہوئے مولانا سید ارشد مدنی نے کہا کہ قرآن کریم ایک مکمل ضابطہ ٔ حیات اور کامل دستورِ زندگی ہے ۔

انہوں نے کہا کہ خداتعالیٰ کا یہ لاثانی و لافانی معجزہ ہے جس سے مضبوط تعلق اور گہری وابستگی ہونا انتہائی ضروری ہے جو صرف زبانی نہیں بلکہ عملی ہونی چاہئے ۔ مولانا ارشد مدنی نے کہا کہ اسلام کی نظر میں سب سے بہتر طبقہ قرآن کو سیکھنے اور سکھانے والوں کا ہے ۔ انہوںنے کہاکہ قیامت کے روز قرآن اپنے پڑھنے والوں اور قدردانوں کی شفاعت کرے گا ۔ مولانا موصوف نے مقاصد قرآن اور آداب قرآن پر بھی روشنی ڈالی ۔ دوران تقریب حفظ کلام اللہ کی تکمیل کرنے والے حافظ سید محمد ھشام کو پگڑی بھی باندھی گئی ۔ اس موقع پر مولانا مفتی سلمان منصورپوری نے مجلس میں شریک تمام مہمانان کرام ،علماء اور اساتذہ حضرات کا استقبال کرتے ہوئے کہا کہ قرآن مجید میں اللہ تبارک و تعالیٰ نے یہ بشارت سنائی ہے کہ جس شخص کو قرآن کی صورت میں اللہ تبارک و تعالیٰ کا انعام اور اس کی رحمت مل جائے اس سے زیادہ قابل مسرت چیز اور خوش نصیبی کی بات پوری کائنات میں کوئی دوسری نہیں ہو سکتی ۔ انہوںنے کہا کہ قرآن کی دولت ان تمام چیزوں سے بڑھ کر ہے جنہیں دنیا میں لوگ سمیٹتے اور جمع کرتے ہیں ۔ مولانا مفتی سلمان نے کہا کہ نانا جان حضرت شیخ الاسلام مولانا سید حسین احمد مدنی نور اللہ مرقدہ کے زمانے سے قرآن کریم کی اشاعت کا جو نظریہ رہا ہے اسی کا نتیجہ ہے کہ جب بھی خاندان میں کوئی بچہ حفظ تکمیل قرآن کرتا ہے تو خاندانوں میں خوشی اور شکر کا ماحول پیدا ہو جا تا ہے ۔

انہوں نے کہا کہ اکابرین سے نسبت کی بدولت اللہ تعالیٰ نے قلوب میں قرآن کی اشاعت کا ایسا جذبہ پیدا کیا کہ دادا مرحوم نے اپنے تینوں صاحبزادگان کو قرآن کریم حفظ کرایا ۔ حقیقت یہ ہے کہ ان حضرات کی لگن و تڑپ کا ہی یہ نتیجہ ہے کہ اللہ تعالیٰ نے آنے والی نسلوںکو علم دین کے ساتھ حفظ قرآن کی عظیم سعادت سے بھی نوازا ۔ مولانا سلمان نے کہا کہ ہر مسلمان کو چاہئے کہ وہ اپنے بچوں کو عالم دین اور حافظ بنائے اور ان کی اخلاقیات پر خصوصی توجہ دے ۔ مولانا قاری سید محمد عثمان منصورپوری نے سید محمد ھشام کے حفظ تکمیل پر مسرت کا اظہار اور خدا کا شکرادا کرتے ہوئے کہا کہ قرآن کریم رشدو ھدایت اور امن و سلامتی کا پیغام ہے ۔ انہوں نے کہا کہ قرآن کریم امن و سلامتی ،انسانیت نوازی ،اچھے برتائو اور اخلاق سے پیش آنے نیز ایک دوسرے کا تعاون کرنے میں مسلم و غیر مسلم کا امتیاز نہیں کرتا ۔ مولانا محمد عثمان نے کہا کہ جیسے جیسے دنیا ترقی کر رہی ہے ویسے ویسے قرآن کریم کی حقانیت و صداقت آشکار ا ہوتی جا رہی ہے ۔ انہوںنے کہا کہ یہ وہ مقدس اور محفوظ کلام ہے کہ باطل نہ سامنے سے آ سکتا ہے نہ پیچھے سے آ سکتا ہے ۔ اللہ تعالیٰ نے قرآن کریم کو اپنے حبیب کریمؐ کے قلب اطہر پر ناز ل فرماکر خود اس کی حفاظت کا ذمہ لیا ۔ اللہ تعالیٰ ہم سبکو قرآن کریم سمجھ کر پڑھنے ، اس پر عمل کرنے اور اس کو اپنے سینوں میں محفوظ کرنے کی سعادت عطا فرمائے ،آمین ۔علامہ قمر صاحب کی دعاء پر نورانی تقریب اختتام پذیر ہوئی ۔ دعائیہ مجلس میں موجود علماء حضرات اور اساتذہ نے حفظ قرآن کی سعادت حاصل کرنے والے سید محمد ھشام کو اپنی دعائوں سے نوازا ۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close