دیوبند

کیرانہ کے ایم ایل اے ناہید حسن اور ان کی والدہ سابق ممبر پارلیمنٹ تبسم حسن کو گینگسٹر ایکٹ میں ماخوذ کئے جانے پر سماج وادی پارٹی کارکنان میں ناراضگی

دیوبند، 23؍ فروری (رضوان سلمانی) جھوٹے مقدمے اور گینگسٹر ایکٹ میں فرضی طریقہ سے کیرانہ کے ایم ایل اے ناہید حسن کو ملوث کئے جانے سے ناراض سماجوادی پارٹی کے دیوبند یونٹ میں کارکنان نے مذکورہ الزامات کو ختم کئے جانے کے مطالبات پر مبنی ایک میمورنڈم دیوبند ایس ڈی ایم کے توسط سے ریاستی گورنر کو بھیجا ہے ۔تفصیلات کے مطابق سماجوادی پارٹی کارکنان نے کیرانہ اسمبلی حلقہ کے ایم ایل اے ناہید حسن اور ان کی والدہ نیز سابق ایم پی تبسم حسن سمیت چالیس افراد پر گینگسٹر ایکٹ کے تحت کی گئی کارروائی کو دشمنی پر مبنی کارروائی بتاتے ہوئے ایس ڈی ایم دیوبند راکیش کمار کے توسط سے اتر پردیش کے گورنر کو ایک میمورنڈم ارسال کیا ہے ۔میمورنڈم میں فرضی مقدمہ اور غلط طریقہ سے لگائے جانے والے گینگسٹر ایکٹ کو ختم کئے جانے کا مطالبہ کیا ہے ۔منگل کے روز سماجوادی پارٹی کے سابق ضلع جنرل سکریٹری سکندر علی کی قیادت میں سماجوادی پارٹی کے کارکنان کا ایک وفد ایس ڈی ایم دیوبند کے کورٹ پہنچااور انہوںنے مذکورہ میمورنڈم ایس ڈی ایم کو سونپا ۔سکندر علی نے بتایا کہ ریاستی گورنر کے نام ارسال کئے گئے میمورنڈم میں کہا گیا ہے کہ بی جے پی حکومت اپوزیشن پارٹیوں کے لیڈران کو غیر قانونی طریقہ سے جھوٹے مقدمات میں پھنسا رہی ہے اور ان کا استحصال کر رہی ہے ۔انہوںنے کہا کہ عوام کی حمایت میں آواز بلند کرنے والوں پر مسلسل فرضی مقدمات درج کئے جا رہے ہیں ۔جو جمہوری اور آئینی طور پر غلط طریقہ ہے ۔ سکندر علی نے کہا کہ سماجوادی پارٹی کارکنان نے سابق ایم ایل اے ناہید حسن کو سیاسی رنجش کے سبب اور غلط سبوتوں کی بنیاد پر گینگسٹر ایکٹ میں ماخذ کیا ہے ۔انہوںنے کہا کہ ناہید حسن پر گینگسٹر ایکٹ کے تحت کارروائی کرنا سراسر غلط ہے ،جس کی غیر جانبدارانہ طریقہ پر جانچ ہونی چاہئے۔سکندر علی نے ریاستی حکومت پر الزام عائد کرتے ہوئے کہا کہ اپنے اقتدار میں آنے کے بعد سے ہی موجودہ حکومت سیاسی مخالفین کے خلاف انتقامی کارروائی کر رہی ہے ۔انہوںنے بتایا کہ ناہید حسن بلا تفریق مذہب و ملت ہر ایک مظلوم کے ساتھ کھڑے رہتے ہیں ،لیکن یہ بات بی جے پی حکومت کو پسند نہیں ہے ۔افسوس کی بات یہ ہے کہ ملک میں جمہوریت کے ہونے اور اظہار رائے کی آزادی کے باوجود لب کشائی کی اجازت نہیں ہے۔ میمورنڈم میں یہ بھی کہا گیا ہے کہ اگر یوگی حکومت نے اپنی ہٹلر شاہی کو ترک نہیں کیا ، اور مقدمات واپس نہیں لئے توحکومت اور انتظامیہ کے غیر قانونی رویوں کے خلاف سماجوادی پارٹی سڑکوں پر اترنے اور ریاستی حکومت کے خلاف تحریک چلانے پر مجبور ہو جائے گی ۔میمورنڈم دینے والوں میں چودھری اظہر ،روہت شرما ،ابو ناصر گوڑ ،کلیم قریشی ،اسد انصاری ،سلمان قریشی ،فاروق علی ،حسنین گوڑ ،خلیل پردھان ،کلیم فریدی اور دیگر سماجوادی کارکنان موجود رہے ۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close