دیوبند

ادبی تنظیم ’نئے چراغ ‘ کے زیراہتمام ادبی نشست کا اہتمام

مری باتوں کی سچائی مری گہرائی کو پر کھو ٭ مرے معیار کا اندازہ کپڑوں سے نہیں ہوگا

دیوبند، 25؍ جنوری (رضوان سلمانی) ادبی تنظیم ’نئے چراغ ‘ کے زیراہتمام گزشتہ شب محلہ لال مسجد پر واقع مولانا غازی واجدی کی رہائش گاہ پر ایک ادبی نشست کا انعقاد کیاگیا،جس میں قصبہ کھتولی کے مشہور شاعر کامران عادل نے بطور مہمان خصوصی شرکت کی۔صدارت سماجی کارکن انصار مسعودی نے کی جبکہ نظامت کے فرائض جاوید آسی نے انجام دیئے۔ نشست کا آغاز ذکی انجم صدیقی کی نعت پاک سے ہوا۔ دیر شب تک جاری نشست میں مقامی شعراء نے شاندار کلام پیش کرکے سامعین کو محظوظ کیا۔ نشست میں مہمان شاعر کامران عادل کو تنظیم کی جانب سے خصوصی اعزاز دیا گیا۔ نشست میں پسند کئے گئے چنندہ اشعار قارئین کی نذر ہیں۔

مری باتوں کی سچائی مری گہرائی کو پر کھو ٭ مرے معیار کا اندازہ کپڑوں سے نہیں ہوگا: انور مضطر دیوبندی

اتنا مشہور ہوگیا ہوں میں ٭ مجھ کو بدنام کررہے ہیں لوگ : سہیل دیوبندی

دیوانوں کو کس کا خطرہ ہوتاہے ٭ کہہ دیتے جو بھی کہنا ہوتاہے : ذکی انجم صدیقی

نبض پکڑے ہوئے بیمار کی خاموشی الگ ٭ شور کرتے ہوئے بیمار کا دکھ اپنی جگہ : کامران عادل

امیر شہر کا اصرار جی حضوری تھا ٭ میں اسی کے حکم سے انکار کرکے لوٹ آیا: ولی وقاص

معیار کا اندازہ کپڑوں سے نہیں ہوتا ٭ ہر مانگنے والے کو جاہل نہ سمجھ لینا : نفیس احمد نفیس

علاوہ ازیں راشد کمال،زاہد دلبر دیوبندی،نعیم اختر وغیرہ نے بھی اپنا کلام پیش کیا ۔ نشست کے انعقاد میں غازی واجدی اور انور حسین مضطر کا خصوصی تعاون رہا،آخر میں انہوںنے تمام مہمانوں کا شکریہ اداکیا۔اس دوران ڈاکٹر زبیر اسلم، نبیل مسعودی وغیرہ سمیت دیگر سامعین موجود رہے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close