دیوبند

دیوبند، یوپی قانون ساز اسمبلی انتخاب میں چھوٹی سیاسی جماعتوں کا ہوگا اہم کردار

دیوبند، 15؍ جنوری (رضوان سلمانی)
یوپی قانون ساز اسمبلی میں چھوٹی سیاسی جماعتیں اور باغیوں کا کردار یوپی کی سیاست میں سیاسی گٹھ جوڑ کی نئی راہ طے کرے گا ۔ ایم ایل سی کے لئے اگر ووٹنگ ہوئی تو کون کس کے ساتھ جائے گا ، اس سے صاف ہوجائے گا کہ گٹھ جوڑکی نئی شکل مستقبل میں کیا بنے گی۔ قانون ساز اسمبلی انتخاب کے لئے تصویر حالانکہ ابھی پوری طرح سے صاف نہیں ہوئی ہے ۔ سماج وادی پارٹی نے اپنے دو امیدوار میدان میں اتارے ہیں ، بی جے پی نے ابھی تک یہ صاف نہیں کیا ہے کہ وہ کتنے امیدواروں کو میدان میں اتارے گی ،ایسا ہی کچھ بہوجن سماج پارٹی کے ساتھ ہے ۔ بہوجن سماج پارٹی نے راجیہ سبھا انتخاب میں اسمبلی ارکان کی تعداد نہ ہوتے ہوئے بھی رام جی گوتم کو انتخاب کے لئے میدان میں اتارکر سبھی کو حیرت زدہ کردیا تھا ، اس لئے ابھی یہ نہیں کہا جاسکتا کہ بہوجن سماج پارٹی میدان میں آئے گی یا باہر سے ہی کھیل کھیلے گی ۔ بہوجن سماج پارٹی کی رہنما مایاوتی نے راجیہ سبھا انتخاب کے وقت کہا تھا کہ قانون ساز اسمبلی انتخاب میں سماج وادی پارٹی کو ہرانے کے لئے اس کے اسمبلی ارکان بی جے پی کو بھی ووٹ دے سکتی ہے۔ اب دیکھنا ہوگا کہ مایاوتی کے اسمبلی ارکان کس کو ووٹ دیتے ہیں، یہ بات الگ ہے کہ بہوجن سماج پارٹی کے پانچ اسمبلی ارکان راجیہ سبھا انتخاب کے وقت باغی ہوگئے تھے لیکن پارٹی نے ان پر کوئی کارروائی نہیں کی تھی ۔ اُدھر شیو پال یادو ویسے تو جسونت نگر سے سماج وادی پارٹی کے اسمبلی رکن ہیں لیکن انہو ںنے پرگتی سماج وادی پارٹی کے نام سے الگ پارٹی بنا رکھی ہے ، اب دیکھنا ہوگا کہ ایم ایل سی کے انتخا ب میں وہ کسے ووٹ دیتے ہیں ، سماج وادی پارٹی کا ساتھ دیتے ہیں یا پھر ووٹنگ سیدور رہتے ہیں۔ یوپی قانون ساز اسمبلی کے انتخاب میں 14ووٹ سب سے اہم ہوںگے، کانگریس کے ساتھ سبھ سپا کے چار اور آزاد تین اسمبلی ارکان ہیں ۔ اس پر سبھی کی نظریں ہوںگی ۔ سبھ سپا کسی وقت بی جے پی اتحاد کا حصہ ہوا کرتی تھی لیکن اس کے قومی صدر اوم پرکاش راج بھر بی جے پی مخالف ہوگئے ہیں ، اب دیکھنا ہوگا کہ ان کے اسمبلی ارکان کس کے ساتھ جاتے ہیں۔ کانگریس کے ساتھ اسمبلی ارکان ہیں ، اس میں سے دو ادیتی سنگھ اور راکیش سنگھ راجیہ سبھا انتخاب میں بی جے پی کے حق میں ووٹ کرچکے ہیں ، یہ دیکھنا قابل غور ہوگا کہ کانگریس کے باقی اسمبلی ارکان کس کوو وٹ دیتے ہیں۔ آزاد 3اسمبلی ارکان ہیں، ان کا ساتھ کسے ملے گا یہ بھی اہم ہوگا ۔ راشٹریہ لوک دل کا ایک ایم ایل اے ہے اور وہ سماج وادی پارٹی اتحاد کا حصہ رہا ہے ۔ جو لوگ اس الیکشن میں حصہ نہیں لے پائیں گے ان میں مختار انصاری اور وجے مشرا جیل میں ہیں ۔ اعظم کے خاں کے بیٹے عبداللہ اعظم خاں کی اسمبلی رکنیت کا معاملہ عدالت میں زیر سماعت ہے ا س لئے یہ ووٹ نہیں کرپائیں گے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close