دیوبند

دیوبند انتظامیہ نے غریب خاتون کے مکان کو کیا منہدم ، تحصیل ٹیم نے اپنے کام کو ذمہ داری سے ادا نہیں کیا: معاویہ علی

دیوبند، 15؍ جنوری (رضوان سلمانی) تحصیل دیوبند علاقہ کے گاؤں جھبیرن میں ایک غریب خاتون کے مکان کو انتظامیہ کی جے سی بی نے زمین دوز کردیاہے، حالانکہ متاثرہ فریق کا کہناہے کہ یہ مکان ان کی پوری زندگی کی کمائی تھی اور مقامی انتظامیہ کی جانب سے الاٹ کئے گئے پٹے(زمین) پر ہی مکان تعمیر کیاگیا تھا جبکہ انتظامیہ نے تالا ب کی زمین پر مکان تعمیر ہونے کی بات کہتے ہوئے آج ایس ڈی ایم دیوبند کی قیادت میں بھاری پولیس فورس کے ساتھ موقع پر پہنچ کر جے سی بی سے مکان کو زمین دوز کردیا۔ علاقہ کے گاؤں جھبیرن میں معراج ولد انیس اور اس کی اہلیہ نے سالوں کی محنت و مشقت کے بعد پائی پائی جوڑ کر حکومت کی جانب سے الاٹ کی گئی زمین پر مکان تعمیر کیا تھا۔ متاثرہ خاتون نے روتے بلکتے ہوئے میڈیا کو بتایا وہ بیس سال سے اس زمین پر رہ رہی تھی اور باقاعدہ یہ پٹہ میرے شوہر کے نام سے الاٹ کیاگیا تھا،جس کے دستاویزات میرے پاس موجود ہیں، اس کے علاوہ یہاں کافی لوگوں کے مکان اسی طرح کی زمین پر ہیں لیکن کارروائی صرف ان کے مکان پر ہی کی گئی ہے؟۔ ان کاکہناہے ان سے پانچ لاکھ روپیہ رشوت مانگی گئی تھی لیکن وہ نہیں د ے سکے،متاثرہ خاتون نے انصاف کی فریاد لگائی ہے۔متاثرہ خاتون اور اس کے بچوں نے روتے بلکتے ہوئے میڈیا کے سامنے اپنی بات رکھتے ہوئے بتایا انہیں کسی بھی طرح کا نوٹس نہیںدیا گیااور ان کا مکان تالاب کی زمین پر تھاہی نہیںلیکن اس کے باوجود بھی فورس کے ساتھ آکر ایس ڈی ایم اور تحصیلدار نے یہ کارروائی کی ہے۔ خاتون کے مکان پر انتظامیہ کی کارروائی سے علاقہ کے لوگوںمیں کافی غم وغصہ پایا جارہاہے ۔ ٹیم نے پاس کی کھڑی گنیّ کی فصل کو تباہ کردیا۔ آشیانہ ٹوٹنے پر خاتون دہاڑے مار کر رونے لگی اور وہاں موجود دیگر خواتین نے ہنگامہ کیا،جس کے سبب خواتین پولیس اور گاؤں کی خواتین کے درمیان نوک جھونک بھی ہوئی۔آج ایس ڈی ایم دیوبند راکیش کمار،تحصیلدار ہرش چاؤل ا ور تحصیل کی ٹیم نے بڑی تعداد میں پی ایس سی اور پولیس فورس کے ساتھ موقع پر پہنچ کر اس مکان کو جے سی بی کے ذریعہ زمیں دوز کردیا،جس سے غریب خاتون اپنے بچوں کے ساتھ سڑک پر آگئی۔ ایس ڈی ایم راکیش کمار نے میڈیا کو جاری اپنے تحریری بیان میں بتایا کہ تحصیل کے گاؤں جھبیرن کے باشندہ معراج ولد انیس کے ذریعہ تالاب کی زمین پر قبضہ کرکے مکان بنایاگیا تھا،جس کو جے سی بی کے ذریعہ ہٹاکر سرکاری زمین کو خالی کرالیاگیاہے، انہوں نے بتایاکہ سپریم کورٹ اور ہائی کورٹ کی ہدایت پر آگے بھی تالاب اور سرکاری زمین سے قبضہ ہٹوانے کا سلسلہ جاری رہے گی اور قبضہ کرنے والوں کے خلاف قانون کے مطابق سخت کارروائی کی جائے گی۔ حالانکہ گاؤں کے پردھان عارف تیاگی کاکہناہے کہ رنجش کے تحت اس مکان کو گرِایاگیاہے،اس کے علاوہ بھی درجنوں مکانات ایسے ہیں جو تالاب اور پٹے کی زمین پر بنے ہیں،یہ ضد اور سیاسی رنجش کے تحت کارروائی کرائی گئی ہے،بغیر کسی ہدایت اور نوٹس کے یہ کارروائی کی گئی ہے ،پچھلے دنوں بھی ٹیم آئی تھی جو صحافیوں کو دیکھ کر بھاگ گئی تھی،بڑی عجیب بات ہے کہ گزشتہ ہفتے ہی تحصیل ٹیم نے کہا تھا کہ یہ مکان تالاب کی زمین پر نہیں ہے لیکن اس کے باوجوداس کے یہ کارروائی کی گئی ،جس نے اس خاتون اور اسکے بچوں کو برباد کردیا ،محنت مزدوری کرکے انہوں نے یہ مکان بنایا تھا،جس کا کوئی نوٹس تک نہیں دیاگیا۔ اس سلسلہ میں سابق علاقائی رکن اسمبلی معاویہ علی نے کہاکہ تحصیل ٹیم نے اپنے کام کو ذمہ داری سے نہیں کیا ،انہیں پہلے سروے اور پیمائش کرکے صحیح معلومات حاصل کرنی چاہئے کیونکہ میرے علم یہ ہے کہ یہ مکان تالاب کی زمین پر تھا ہی نہیں، انتظامیہ نے غیر قانونی طریقہ سے یہ مکان گرِایا ہے ہم اس سلسلہ میں ضلع مجسٹریٹ سے ملاقات کرکے معاملہ کو حل کرینگے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close