دہلی

بزمِ جامعہ، شعبۂ اردو جامعہ ملیہ اسلامیہ کے زیر اہتمام نووارد طلبا و طالبات کے تعارفی پروگرام کا انعقاد

شعبۂ اردو جامعہ ملیہ اسلامیہ میں نئی تعلیمی میقات میں داخلہ لینے والے طلبا نہایت منتخب اور اہل ہیں: پروفیسر شہزاد انجم

نئی دہلی ۵؍ فروری ۲۰۲۱ء (ہندوستان اردو ٹائمز) جامعہ ملیہ اسلامیہ محض ایک تعلیمی ادارہ ہی نہیں بلکہ ایک تہذیبی گہوراہ بھی ہے۔ جامعہ دراصل تحریک حریت کی پیداوار ہے۔ ایسے عظیم ادارے یقیناشوق و جنون کے نتیجے میں ہی وجود میں آتے ہیں۔ جامعہ ملیہ اسلامیہ کی داغ بیل تحریک آزادی سے وابستہ عظیم مجاہدین، دانشور، علما اور ادیب و شعرا کی دیوانگی اور وارفتگی کا مظہر ہے۔ اس دیارِ شوق کی بنیادوں اور در و دیوار میں مولانا محمود حسن، مولانا محمد علی جوہر، مہاتما گاندھی، پنڈت جواہر لال نہرو، مولانا ابوالکلام آزاد، حکیم اجمل خان، مختار احمد انصاری، عبد المجید خواجہ، ڈاکٹر ذاکر حسین، ڈاکٹر سید عابد حسین اور پروفیسر محمد مجیب کے خون جگر کا رنگ آج بھی نمایاں ہے۔ جامعہ ملیہ اسلامیہ اور اردو لازم و ملزوم ہیں۔ جامعہ کی بنیاد میں اردو کا رول یا جدید علمی نثر کی اشاعت میں جامعہ کا کردار، دونوں مسلم ہیں۔ ان خیالات کا اظہار صدر شعبۂ اردو، جامعہ ملیہ اسلامیہ پروفیسر شہزاد انجم نے بزم جامعہ کے زیر اہتمام ایم اے، پی جی ڈپلوما ماس میڈیا اور بی اے کے نووارد طلبا و طالبات کے لیے منعقدہ تعارفی پروگرام میں کیا۔ پروفیسر شہزاد انجم نے اس موقع پر طلبا و طالبات کو مبارک باد پیش کرتے ہوئے نیک خواہشات کا اظہار کیا۔ بزم جامعہ کے ایڈوائزر ڈاکٹر خالد مبشر نے استقبالیہ کلمات پیش کرتے ہوئے کہا کہ شعبۂ اردو ، جامعہ ملیہ اسلامیہ کا شمار اردو دنیا کے ممتاز ترین اداروں میں ہوتا ہے۔ اس شعبے سے ماضی میں گوپی چند نارنگ، تنویر احمد علوی، شمس الرحمان فاروقی، قرۃ العین حیدر، عنوان چشتی، محمد ذاکر، عظیم الشان صدیقی، حنیف کیفی، مظفر حنفی، صغریٰ مہدی، صادقہ ذکی، شمیم حنفی، قاضی عبید الرحمان ہاشمی، شمس الحق عثمانی، شہناز انجم، خالد محمود، سہیل احمد فاروقی اور وہاج الدین علوی جیسے ممتاز محقق، ناقد، فکشن نگار، ادیب اور شعرا وابستہ رہے ہیں۔ اس وقت بھی شعبۂ اردو سے جو اساتذہ منسلک ہیں ان میں پروفیسر شہزاد انجم، پروفیسر شہپر رسول، پروفیسر احمد محفوظ، پروفیسر کوثر مظہری، پروفیسر عبد الرشید، پروفیسر خالد جاوید، پروفیسر ندیم احمد، ڈاکٹر عمران احمد عندلیب، ڈاکٹر سرور الہدیٰ، ڈاکٹر شاہ عالم، ڈاکٹر مشیر احمد، ڈاکٹر سید تنویر حسین، ڈاکٹر محمد مقیم، ڈاکٹر عادل حیات، ڈاکٹر جاوید حسن اور ڈاکٹر ثاقب عمران کا شمار اردو شعر و ادب کے معروف ماہرین میں ہوتا ہے۔
گوگل میٹ آن لائن جلسے میں عبد الواحد رحمانی نے ایم اے سمسٹر اول، شارق محمد عزیز نے پی جی ڈپلوما ماس میڈیا اور دلشاد احمد نے بی اے سمسٹر اول کے طلبا و طالبات کے انفرادی تعارفی سلسلے کی نظامت کے فرائض انجام دیے۔ ڈاکٹر محمد مقیم نے اظہار تشکر پیش کرتے ہوئے کہا کہ طلبا کے تعارف سے اندازہ ہوا کہ وہ ہندوستان بھر کے مختلف علاقوں سے تعلق رکھتے ہیں اور ان کا انتخاب یقینا اہلیت کی بنیاد پر ہوا ہے۔ پروگرام کا آغاز محمد اسجد کی تلاوت سے ہوا۔ جلسے میں نووارد طلبا و طالبات اور اساتذہ سمیت تقریباً ۱۰۰ شرکا شامل ہوئے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

Leave a Reply

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close