دہلی

شاہین باغ دلی کی طرز پر چکھلی میں شاہین باغ قائم

چکھلی ضلع بلڈانہ ۱ فروری ذوالقرنین احمد جامعہ ملیہ اسلامیہ دہلی میں شہریت ترمیمی قانون و این آر سی کے خلاف احتجاج کر رہ طلباء وطالبات پر دہلی پولیس کی گنڈہ گردی نے اس کالے قانون کے خلاف عوام کو ایک تحریک دی ہے پہلے طلباء اپنے اپنے انداز میں احتجاج کر رہے تھے ،لیکن طلباء پر لاٹھی چارج اور جامعہ کے طلبہ کو مسجد اور لائیبریری میں گھس کر تشدد کرنے کی وجہ سے پولس کی بربریت کے خلاف اور طلبہ سے اظہار یکجھتی کیلے ملک کی مختلف یونیورسٹیوں اور شہروں میں احتجاج شروع کیا گیا۔ جس میں شاہین باغ دہلی میں خواتین نے غیر معینہ مدت کیلے دھرنا اندولن شروع کردیا اس شاہین باغ کو اب ۵۰ دن مکمل ہوچکے ہے اس پونے دو مہینوں میں ان شاہین صفت خواتین کی آواز ملک ہی نہیں بلکہ پوری دنیا میں ظالم حکومت کے خلاف پھیل گئی۔ اور دیکھتے دیکھتے سیکڑوں مقامات پر شاہین باغ کا قیام عمل لایا گیا۔ شہریت ترمیمی قانون کے خلاف شاہین باغ کی طرز پر چکھلی میں ۱ فروری ۲۰۲۰ کو نئی تہصیل آفس کے سامنے نوجوانوں کے محنت اور مسلم پولیٹیکل سپورٹ کے زریعے ملی سماجی شخصیات کی کوششوں سے شاہین باغ کا قیام عمل میں آچکا ہے۔ آج بروز سنیچر بعد نماز ظہر چکھلی میں شاہین باغ دہلی کے نقشے قدم پر چلتے ہوئے بے مدت دھرنا اندولن شروع کیا گیا ہے۔ جس میں چکھلی کے ملی رہنما و سماجی سیاسی شخصیات اور نوجوانان چکھلی کثیر تعداد میں پہنچ رہے ہیں۔ اور اس احتجاج کو مضبوط کرنے کیلے کوشاں ہے‌۔ اس احتجاج میں ملی رہنماؤں نے نوجوانوں کے زریعے اشتعال انگیزی نا ہو اس لیے چنندہ نعرے لکھ کر دئیے ہے جو قانون کے دائرے میں ہے۔ تاکہ کوئی مسلہ کھڑا نا ہو، دھرنا مسلسل جاری رہ اہلیان چکھلی وہ اطراف کی عوام سے اپیل ہے کہ وہ اس میں اپنا وقت دے۔ یہ دھرنا پورے چکھلی شہر کی طرف سے شروع کیا گیا ہے۔ اس دھرنے میں نوجوانوں نے ٹی شرٹ پر آزادی آزادی کے سلوگن لکھے اور شاہین باغ میں غباروں پر بائکاٹ این آر سی، سی اے اے، این پی آر لکھ کر ایک خاموش پیغام دینے کی کوشش کی ہے۔

مزید پڑھیں

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Back to top button
Close
Close