دہلی

دہلی کے ایک درجن کالجوں میں معاشی بحران، 2 ماہ سے اساتذہ کو نہیں ملی تنخواہ

دہلی کے تقریباً ایک درجن کالجز ایسے ہیں جہاں اساتذہ اور غیر تدریسی ملازمین کے سامنے تنخواہ کا مسئلہ پیدا ہو گیا ہے۔ دہلی یونیورسٹی کے تحت آنے والے یہ سبھی کالجز دہلی حکومت کے ذریعہ مالی امداد یافتہ ہیں۔ ٹیچرس ایسو سی ایشن اب دہلی کے وزیر اعلیٰ اروند کیجریوال اور وزیر تعلیم منیش سسودیا سے ان 12 کالجوں کی گرانٹ فوراً ریلیز کرنے کا مطالبہ کر رہے ہیں۔

دہلی ٹیچرس ایسو سی ایشن (ڈی ٹی اے) کے مطابق 12 کالجوں کی گرانٹ ریلیز نہ ہونے سے نہ صرف تنخواہ کی ادائیگی متاثر ہوئی ہے، بلکہ علاج کا بل، ریٹائرمنٹ کی سہولیات اور دیگر ترقیاتی امور بھی زیر التوا ہیں۔ دہلی حکومت سے مطالبہ کیا گیا ہے کہ اساتذہ کے پروموشن کا ایریر بھی انھیں جلد جاری کیا جائے۔

اساتذہ کا یہ بھی کہنا ہے کہ 20 جولائی سے دہلی یونیورسٹی کا نیا تعلیمی اجلاس شروع ہو رہا ہے۔ اس کے بعد داخلے کا عمل شروع ہو جائے گا جس میں طلبا کے داخلے، او بی سی کوٹہ کے تحت سیکنڈ ٹرانچ کی اساتذہ کی تقرریاں، غیر تدریسی ملازمین کی تقرری کے علاوہ امتحان اور اس کا ویلویشن وغیرہ میں گرانٹ کی ضرورت پڑے گی۔

ڈی ٹی اے نے وزیر اعلیٰ اور نائب وزیر اعلیٰ سے پھر گزارش کی ہے کہ دہلی حکومت کے ذریعہ 12 مکمل مالی امداد یافتہ کالجوں کو رقم جاری کرنے میں بلاتاخیر مدد کریں تاکہ اس مشکل وقت اور کشیدہ ماحول میں اساتذہ اور ملازمین کی تنخواہ اور دیگر بقایہ جات کی ادائیگی کی جا سکے۔ ڈی ٹی اے سربراہ ڈاکٹر ہنسراج سمن نے بھی دہلی کے وزیر اعلیٰ اور نائب وزیر اعلیٰ سے دہلی حکومت سے منسلک مکمل مالی امداد یافتہ 12 کالجوں کی گرانٹ فوراً ریلیز کرنے کا مطالبہ کیا ہے۔

ڈاکٹر ہنسراج سمن نے بتایا کہ کچھ کالجوں کے اساتذہ کو گزشتہ دو مہینے سے تنخواہ نہیں ملنے سے مستقل، کانٹریکچوئل، مہمان اساتذہ اور ایڈہاک پر کام کر رہے ملازمین مشکل معاشی بحران کا سامنا کر رہے ہیں۔ کالجوں کی گرانٹ ریلیز کرانے کے مطالبہ کو لے کر ڈی ٹی اے کا ایک نمائندہ وفد جلد ہی نائب وزیر اعلیٰ منیش سسودیا سے ملاقات کرے گا۔

ہماری یوٹیوب ویڈیوز

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔

Back to top button