تعلیم

داڑھی کی شرعی مقدار۔ مفتی محمد عمران قاسمی دار الافتا والارشاد وائٹ فیلڈ بنگلور

*داڑھی کی شرعی مقدار*

سوال(۴۷۷):- کیا فرماتے ہیں علماء دین ومفتیانِ شرع متین مسئلہ ذیل کے بارے میں کہ: داڑھی کتنی رکھنی واجب ھےلہذا شرعی داڑھی کی مقدار کے بارے میں تحریر فرمادیں۔       *المستفتی صعود بھائ*                *علی گڑھ یوپی*
       *باسمہٖ سبحانہ تعالیٰ*        

    الجواب وباللّٰہ التوفیق ومنہ الصدق والصواب:  داڑھی کے سلسلے میں   ائمہ اربعہ (امام ابوحنیفہ، امام شافعی، امام مالک اور امام احمد بن حنبل رحمہم اللہ) اور جمھور علماء اس بات پر متفق ہیں  کہ داڑھی کی شرعی اور وجوبی مقدار ایک مشت ہے، جو داڑھی ایک مشت سے کم کردی جائے وہ ہرگز شرعی داڑھی نہیں ہے۔         داڑھی منڈانے والا اور ایک مشت سے کم پر کتروانے والا دونوں ناجائز وحرام کے مرتکب ہیں اور فاسق ہونے میں برابر ہیں، البتہ داڑھی منڈانے والا داڑھی کتروانے والے کے مقابلے میں زیادہ گنہگار ھے. ( مستفاد فتاوی دارالعلوم آن لائن فتوی: 776-761/N=9/1433)      عن ابن عمر رضي اللّٰہ عنہما قال: إن رسول اللّٰہ صلی اللّٰہ علیہ وسلم أمر بإحفاء الشوارب وإعفاء اللحی۔ (سنن الترمذي، أبواب الآداب / باب ما جاء في إعفاء اللحیۃ ۲؍۱۰۵ المکتبۃ الأشرفیۃ دیوبند)         وأما الأخذ منہا وہي دون القبضۃ کما یفعلہ بعض المغاربۃ ومخنثۃ الرجال فلم یبحہ أحد وأخذ کلہا فعل الیہود ومجوس الأعاجم۔ (الدر المختار مع الشامي ۳؍۳۹۸ زکریا، فتح القدیر، کتاب الصوم / باب ما یوجب القضاء والکفارۃ ۲؍۳۴۸)        أو تطویل اللحیۃ إذا کانت بقدر المسنون وہو القبضۃ۔ (الدر المختار ۲؍۴۱۷ کراچی، ۳؍۳۹۷ زکریا) فقط واللہ تعالیٰ اعلمدیوبند}فقط واﷲتعالیٰ أعلم
         *حرره العبد*    *محمد عمران غفرلہ*    *دارالإفتاءوالإرشاد*     *وائٹ فیلڈ بنگلور*
                     *11/5/1440*
        MB:9454007434

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

Leave a Reply

Back to top button
Close
Close