جموں کشمیر

وادی میں برف باری کی ایک اور پیشن گوئی – سفید چادر کی دستک

شبانہ درجہ حرارت میں کمی درج، آبی ذخائیر کے ساتھ ساتھ ڈل جھیل وغیرہ بدستور مجمند

ہندوستان اردو ٹائمز/ جموں کشمیر/ بیرو چیف – زمان نور ۲۱جنوری ۲۰۲۱/جموں کشمیر:وادی کشمیر میں ایک اور پیشگوئی ۲۲جنوری سے برفباری اور بارشوں کے ایک اور مرحلے کے بیچ وادی میں شبانہ درجہ حرارت میں کچھ حد تک بہتری درج کی گئی تاہم ٹھٹھراتی سردیوں کا سلسلہ وادی میں بدستور جاری جس نے اہلیان کشمیر کو گونا گوں مشکلات سے دوچار کردیا ہے۔شبانہ درجہ حرارت میںمعمولی بہتری کے باوجود بھی ڈل جھیل سمیت سبھی آبی ذخائر منجمد ہیں اور نل بھی جم گئے ہیں جس کی وجہ سے لوگوں کا جینا دوبھر ہوگیا ہے۔ ادھر محکمہ موسمیات نے موسمی صورتحال میں تبدیلی آنے کے امکانات ظاہر کرتے ہوئے بتایا کہ ۲۱ جنوری یعنی آج رات تک موسم خشک رہے گا اور۲۲سے ۲۴جنوری تک بالائی اور میدانی علاقوں میں ہلکی بارشوں کے ساتھ درمیانہ درجہ کی برف باری ہونے کا امکان ہے۔ چلہ کلان کے سخت تیور کے بیچ جموں کشمیر اور لداخ میں شدید سردی کی لہر جاری جس نے پوری وادی کو اپنی لپیٹ میں لیا ہے اور یخ بستہ ہوائوں کی وجہ سے شدید سردی کی لہر جاری ہے ۔ کشمیر محکمہ موسمیات کے مطابق درجہ حرارت میں کمی ہونے کے ساتھ ہی پوری وادی سخت ترین سردی کے لپیٹ میں آچکی ہے ۔ انہوں نے بتایا کہ وادی کے ساتھ ساتھ لداخ خطہ بھی شدید سردی کی گرفت میں ہے ۔محکمہ موسمیات کے مطابق گذشتہ رات کے دوران سرینگر میں کم سے کم درجہ حرارت منفی۴.۶ڈگری سیلشیس،پہلگام میں منفی۸.۶ڈگری جبکہ گلمرگ میں منفی۶ ڈگری سیلشیس درج کیا گیا۔محکمہ موسمیات کے مطابق کئی دنوں بعد شبانہ درجہ حرارت میں کچھ حد تک بہتری درج کی گئی ہے ۔ادھر سرینگر کے علاوہ دیگر اضلاع میں بھی اندرونی سڑکوں کے دونوں اطراف پر بھاری مقدار میں جمع برف جم جانے کی وجہ سے لوگوں کو کافی دشواریوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔گھروں کے اندر ٹیوب ویل اور پانی کے نل جم جانے کی وجہ سے بھی لوگوں کو بے حد مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے۔ ادھرکشمیر محکمہ موسمیات نے پہلے ہی اس بات کی پیش گوئی کی ہے کہ۲۱ جنوری یعنی آج دیر رات تک موسم خشک رہے گا اور,,,,۲۲سے ۲۴جنوری تک بالائی اور میدانی علاقوں میں ہلکی بارشوں کے ساتھ درمیانہ درجہ کی برف باری ہونے کا امکان ہے۔اس دوران گزشتہ رات بھر شدید سردی ہونے کے ساتھ سوموار کی صبح بھی سرینگر سمیت پوری وادی میں شدت کی سردی محسوس کی جارہی ہے۔شدید سردی کی لہر جاری رہنے کے باعث مسلسل چوتھے روز بھی جھیل ڈل کی اوپری سطح پوری طرح سے منجمد رہی۔صبح کے وقت چلنے والی یخ بستہ ہواؤں اور شدت کی سردی کی لہر برقرار رہنے کے باعث صبح کے وقت زیادہ تر لوگ گھروں سے باہر نہیں نکل پارہے ہیں۔درجہ حرارت منفی ریکارڈ ہونے نتیجے میں نل اور پانی کی ٹینکیوں میں بھی پانی جم گیا ہے جس وجہ سے اب گھروں کے اندر بھی پانی دستیاب نہیں ہو رہا ہے اور لوگوں کو کافی مشکلات کا سامنا کرنا پڑ رہا ۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close