بین الاقوامی

یواے ای:کووِڈ-19کے یومیہ کیسوں کانیا ریکارڈ،3491 مریضوں کی تشخیص

متحدہ عرب امارات میں کرونا وائرس کی وَبا پھیلنے کے بعد منگل کے روز سب سے زیادہ نئے کیس ریکارڈ کیے گئے ہیں۔گذشتہ 24 گھنٹے میں کووِڈ-19 کے 3491 نئے کیسوں کی تشخیص ہوئی ہے اور پہلے سے اس مہلک وائرس کا شکار پانچ مریض وفات پا گئے ہیں۔

یو اے ای کی سرکاری خبررساں ایجنسی وام کے مطابق اب تک کووِڈ-19 کے تصدیق شدہ کیسوں کی تعداد 260223 ہوگئی ہے۔ان میں سے 756 مریض وفات پا چکے ہیں۔

اماراتی حکام کے مطابق ملک میں یکم جنوری کے بعد سے کرونا وائرس کے یومیہ کیسوں کی تعداد میں اضافہ جاری ہے۔اس کے ساتھ ملک میں ویکسی نیشن کی مہم بھی زورشور سے جاری ہے اور شہریوں اور مکینوں کو مفت کووِڈ-19 کی ویکسین لگائی جارہی ہے۔

اب تک یواے ای میں اسرائیل کے بعد سب سے زیادہ تعداد میں افراد کو کرونا وائرس کی ویکسین لگائی جاچکی ہے۔ وزارتِ صحت نے اطلاع دی ہے کہ صرف اتوار کو کووِڈ-19 کی 84852 کی خوراکیں تقسیم کی گئی تھیں۔اس طرح یو اے ای میں ہر 100 افراد میں 19۰04 فی صد کو ویکسین کے انجیکشن لگائے جاچکے ہیں۔

اس خلیجی عرب ملک میں شامل سات امارتوں میں ویکسین لگانے کے لیے خصوصی مراکز قائم کیے گئے ہیں۔یو اے ای کے مکین اور شہری دبئی ہیلتھ اتھارٹی (ڈی ایچ اے) کی ایپ یا اس کے ٹال فری نمبر 800342 کے ذریعے ویکسین لگوانے کے لیے اپنے ناموں کا اندراج کراسکتے ہیں۔

اماراتی حکام نے لوگوں پر زوردیا ہے کہ وہ کووِڈ-19 وائرس سے بچاؤ کے لیے رضاکارانہ طور پر ویکسین لگوائیں۔واضح رہے کہ یو اے ای میں کرونا وائرس کو پھیلنے سے روکنے کے لیے بیشتر پابندیاں ختم کی جاچکی ہیں لیکن سماجی فاصلہ اختیار کرنے اور عوامی مقامات پر ماسک پہننے کی پابندی برقرار ہے۔

یواے ای میں چین کے قومی دواساز گروپ سائنو فارم کی تیارکردہ ویکسین شہریوں اور مکینوں کو لگائی جارہی ہے۔البتہ امارت دبئی میں امریکا کی دواساز کمپنی فائزر کی جرمن کمپنی بائیو این ٹیک کے اشتراک سے تیار کردہ ویکسین لگائی جارہی ہے۔ان کے علاوہ روس کی تیارکردہ ویکسین سپوتنک پنجم کی بھی آزمائشی جانچ کی جارہی ہے۔ اماراتی حکام کا کہنا ہے کہ وہ رواں سال کی پہلی سہ ماہی میں اپنی قریباً 99 لاکھ آبادی میں سے 50 فی صد کو ویکسین لگانا چاہتے ہیں۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close