بہار و سیمانچل

نتیش کمار این پی آر پر عوام کو گمراہ نہ کریں

آل انڈیا بیداری کارواں کا انتباہ، روک لگانے کا مطالبہ، ۲۳؍فروری کو وزیراعلیٰ کے پروگرام میں مخالفت ، ستیہ گرہ ۱۴؍ویں دن بھی جاری
دربھنگہ۔ ۳۱؍جنوری: (رفیع ساگر) لگاتار بہار کے وزیراعلی نتیش کمار NPR پر جھوٹ بول کرعوام کو گمراہ کررہے ہیں اور میڈیا کے سہارے یہ بتارہے ہیں کہ بہار میں NPR کی کوئی کارروائی نہیں ہوگی جب کہ بلاک سے لیکرپنچایت، وارڈ سطح پر انہوں نے کاغذی کام شروع کردیا ہے بلکہ کئی جگہوں پر تو NRC کے لئے بھی انہوں نے بلاک ملازم کو لگادیا ہے کہ وہ NRC کا فارم بھرنا شروع کریں جب کہ نتیش کمار نے لوک سبھا اور راجیہ میں کالے قانون کی حمایت میں پہلے ہی ووٹنگ کرکے عوام کے سامنے اپنا فریبی چہرہ دکھاچکے ہیں۔ یہی وجہ ہے کہ بہار کی عوام بالخصوص مسلمانوں کا نتیش کمار پر سے بھروسہ اٹھ گیا ہے۔ لگاتار نتیش کمار بھاجپا کے ساتھ مل کر بہار کے امن کے ماحول کو بگاڑنے کا کام کررہے ہیں۔ نتیش کمار کو صرف وزیراعلیٰ کی کرسی چاہئے۔ مذکورہ باتیں آل انڈیا مسلم بیداری کارواں کے قومی صدرنظرعالم نے جمعہ کو جاری پریس ریلیز میں کہی۔ مسٹرعالم نے کہا کہ نتیش کمار اگر واقعی فریبی نہیں ہیں تو سب سے پہلے عوام کو گمراہ کرنا بند کریں اور بہار میں NPR, NRC پر روک لگائیں۔ مسٹرعالم نے یہ بھی کہا کہ 23 فروری کو نتیش کمار دربھنگہ کے کیوٹی بلاک کے اسراہا گاؤں آنے والے ہیں اس موقع پریہاں کی عوام پرزور مخالفت کرے گی اور کالا جھنڈا بھی دکھائے گی۔ہزاروں ایکڑ وقف کی زمین کو قبضہ میں رکھنے والے نتیش کمار آج مسلمانوں کے گاؤں گاؤں جاکر دکھاوا کررہے ہیں کہ مسلمانوں کے لئے ہم اسکول، کالج، ہاسٹل، ہاسپیٹل وغیرہ کھول رہے ہیں تاکہ مسلمانوں کو اس کا فائدہ ملے جب کہ الٹا ہے یہ مسلمانوں کے ساتھ لگاتار مذاق کررہے ہیں۔ ایم ایس ڈی پی اسکیم کے پیسوں سے انہوں نے اکثریت طبقے کو فائدہ پہنچایا اور مسلمانوں کے لئے جو رقم آئی اس سے مسلمانوں کو محروم کردیا۔ مسلمانوں کو سمجھناہوگا کہ ان کے حقوق کے لئے کون سی پارٹی، کون سا لیڈر بہتر ہوگا اُسے ہی آنے والے انتخاب میں چنیں۔ اگر مفادپرستی کے چکرمیں رہ گئے تو پھر سے بھاجپا کے سہارے نتیش کمار وزیراعلیٰ کی کرسی ہڑپنے میں کامیاب ہوجائیں گے اور NPR, NRC جیسے کالے قانون کے پھندنے میں آپ کو پھنسانے میں کامیاب ہوجائیں گے۔ مسٹرعالم نے یہ بھی بتایا کہ آج دربھنگہ کے لال باغ میں کالے قانون کے خلاف چل رہے ستیہ گرہ کا 14 واں دن ہے اور یہ ستیہ گرہ تب تک چلے جب تک کے یہ کالا قانون حکومت واپس نہیں لے لیتی ہے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیجئے

Back to top button
Close
Close