بہار و سیمانچل

ویشالی : ایس ڈی پی آئی کی وفد نے گلناز خاتون کے اہل خانہ سے ملاقات کی

ایس ڈی پی آئی نے ملزموں کو فوری سزا دینے کیلئے فاسٹ ٹریک عدالت قائم کرنے کا مطالبہ کیا

نئی دہلی۔(پریس ریلیز)۔ سوشیل ڈیموکریٹک پارٹی آف انڈیا (ایس ڈی پی آئی) کے ایک وفد نے بہار کے رسول پور گاؤں میں زندہ جلائی گئی گلنازخاتون کے سوگوار خاندان سے ملاقات کی۔ وفد میں ایس ڈی پی آئی قومی نائب صدر دہلان باقوی،قومی جنرل سکریٹری عبدالمجید میسور، قومی سکریٹری ڈاکٹر محبوب شریف عواد، قومی سکریٹریٹ ممبر ریاض فرنگی پیٹ، ایس ڈی پی آئی بہار کے ریاستی صدر نسیم اختر، ریاستی جنرل سکریٹری انجینئر احسان پرویز، ریاستی خازن ریاض احمد، ریاستی لیگل انچارج نورالدین زنگی،ریاستی کمیٹی ممبر سیف الرحمن، پٹنہ کے ذمہ دار محبوب الرحمن اورویشالی ضلعی صدر مظہر عالم شریک تھے۔ ایس ڈی پی آئی رہنماؤں نے سوگوار خاندان کو قانونی مدد کی یقین دہانی کرائی اور پارٹی کی جانب سے مالی مدد کی۔ واضح رہے کہ رسول پور گاؤں کی 20سالہ، لڑکی گلناز خاتون کو مقامی رہائشی ستیش رائے نے جسم پر مٹی کا تیل چھڑک کر زندہ جلا دیا تھا۔ پولیس کو دئیے گئے ایک ویڈیو بیان میں گلناز نے کہا ہے کہ جب وہ شام 6بجے کچرا پھینکنے کیلئے باہر گئی تھی تب ستیش رائے نے اس پر مٹی کا تیل ڈال دیا اور آگ لگادی۔ ستیش رائے اسے شادی کیلئے پریشان کر رہا تھا ا ور اس پر مسلسل دباؤ ڈال رہا تھا۔ جس پر گلناز خاتون نے واضح طور انکار کردیا تھا اور درخواست کی کہ وہ اس کے ساتھ بدتمیزی نہ کرے۔ایس ڈی پی آئی کی وفد کو متاثرہ کی والدہ میمونہ خاتون نے بتایا کہ 29اکتوبر کو ملزم نے گلناز خاتون کو جان سے مارنے کی دھمکی دی تھی اور اگلے دن اس نے ایسا ہی کردیا۔ اس خوفناک واقعے کے تناظر میں بہار کے وزیر اعلی نتیش کمار نے کہا تھا کہ ‘بہار کی بیٹی محفوظ ہے’۔ایس ڈی پی آئی نے وزیر اعلی نتیش کمار سے چیلنج کرتے ہوئے کہا ہے کہ اگر وہ اپنے بیان میں ایماندار ہیں تو پھر انہیں ایک وائٹ پیپر جاری کرنا پڑے گا کہ ان کے 15سال کے دو ر میں اس طرح کے کتنے واقعات ہوئے اور کتنے مجرموں کو سزا دی گئی ہے۔ ایس ڈی پی آئی کے وفد نے بہار حکومت سے مطالبہ کیا ہے کہ وہ گلناز خاتون قتل واقعے کی تحقیقات اور سال کے اندر ملزمان کو سزا دینے کیلئے فوری طور پر فاسٹ ٹریک عدالت کا تقررکیا جائے۔ ایس ڈی پی آئی بہار حکومت سے یہ بھی مطالبہ کرتی ہے کہ وہ متاثر ہ کے خاندان کو مکمل سیکورٹی فراہم کرے اور متوفی گلناز خاتون کی سوگوار والدہ کو 50لاکھ روپئے معاوضہ ادا کرے کیونکہ انہوں نے اپنی اکلوتی بیٹی کو کھودیا ہے جو ان کے کنبے کی ستون تھی۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close