بہار و سیمانچل

ہڑتالی اساتذہ کے ساتھ نتیش حکومت کا سوتیلا سلوک : مہجورؔالقادری

کوروناوائرس کی مشکل گھڑی میں نتیش کمار نے جو امدادی پیکیج کا اعلان کیا اس میں اساتذہ کو نظرانداز کیا گیا

نوادہ (پریس ریلیز) بہار اسٹیٹ اردوٹیچرس ایسوسی ایشن ضلع نوادہ کے صدر مولانامحمدجہانگیرعالم مہجورؔالقادری نے نتیش حکومت کی آمرانہ ذہنیت کی بھرپور مذمت کی اور کہا کہ نتیش کمار ہڑتالی اساتذہ کے ساتھ جو برتاؤ کررہے ہیں وہ یقیناً انتقام پہ مبنی ہے ایک طرف تو کوروناوائرس جیسی جان لیوا بیماری کی نازک گھڑی میں بہار کے مکھیا نتیش کمار امدادی پیکیج کا اعلان کرتے ہوئے راشن ہولڈروں کو ایک ماہ کا مفت راشن معہ 1000 ہزار روپے، پینشن یافتہ افراد 3 ماہ کا پیشگی پینشن، ڈاکٹروں کو ایک ماہ کی مفت تنخواہ اور اسکولی طلباءوطالبات کے اکاؤنٹ میں اسکالرشپ کی رقم دینے کا وعدہ کیا وہیں ہڑتال پہ رہ رہے کانٹریکٹ اساتذہ کے بارے میں ایک جملہ بھی ان کے منہ سے نہیں نکلا اس سے بڑی حیرت اور شرم کی بات یہ ہے کہ ان ہڑتالی اساتذہ کو جنوری سے 16 فروری تک کی تنخواہ بھی نتیش کمار نے رکوادیا جب کہ 17 فروری2020 سے کانٹریکٹ اساتذہ ہڑتال پہ گئے تھے یہ کتنی بڑی نا انصافی ہے ہڑتالی اساتذہ کے ساتھ؟ کیا ان کی بیوی بچے نہیں ہیں اگر نتیش کمار کے دل میں ذرا سی بھی غیرت ہوتی تو ہڑتالی اساتذہ کی جنوری اور فروری کی تنخواہ نہیں روکتے اگر اب بھی نتیش کمار نے اپنی سوچ کو نہیں بدلا اور اپنے فیصلے پہ نظر ثانی نہیں کی تو آنے والا وقت ان کے لئے بہت ہی سنگین ہوگا یہ 4 لاکھ ہڑتالی اساتذہ انہیں کبھی معاف نہیں کریں گے مہجورالقادری نے ہڑتالی اساتذہ سے مُخلصانہ اپیل ہے کہ لڑائی لمبی ہے اور اپنے جائز مطالبات کے تحریک چلانا یہ ہمارا آئینی حق ہے ہم خالی ہاتھ لوٹنا نہیں چاہتے ان شاءاللہ آنے والے وقت میں ہمیں ضرور کامیابی ملے گی

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close