بنگلور

ہائی کورٹ نے این ایل ایس آئی یو میں کرناٹک کے طلبہ کیلئے 25 فیصد ریزرویشن کے خلاف درخواست مسترد کردی

نئی دہلی،3جولائی(آئی این ایس انڈیا) دہلی ہائی کورٹ نے بنگلور کے نیشنل لاء اسکول آف انڈیا یونیورسٹی (این ایل ایس آئی یو) میں کرناٹک کے مستقل باشندوں کو 25 فیصد ریزرویشن دینے کے ریاستی حکومت کے فیصلے کی آئینی جواز کو چیلنج دینے والی درخواست پر غور کرنے سے انکار کر دیا ہے۔

[ads5]

جسٹس ہما کوہلی اور جسٹس سبرامنیم پرساد کی بنچ نے جمعہ کے روز کہا کہ اس سلسلے میں مجاز دائرہ اختیار والی عدالت کرناٹک میں ہے کیونکہ اس ریاست کے قانون نے وہاں مستقل رہائشیوں کو 25 فیصد ریزرویشن فراہم کیا ہے۔ درخواست گزار نے اپنی درخواست واپس لے لی اوربنچ نے انہیں راحت کے لئے مناسب فورم سے رجوع کرنے کی آزادی دی۔ بنچ نے واضح کیا کہ وہ اس موضوع پر غور نہیں کررہی ہے اور اسے مسترد کررہی ہے، کیونکہ کرناٹک میں مجاز دائرہ اختیار والی عدالت موجود ہے۔

[ads1]

بنچ نے کہاکہ آپ دہلی میں کیا کر رہے ہیں؟ یہاں کچھ نہیں ہوگا۔درخواست گزار کے وکیل کوکہا گیا کہ اگر وہ اپنے مؤکل کے لئے خلوص دل سے بہتری چاہتے ہیں تو اسے درخواست پر غور کرنے کی اپیل کے بجائے فوری طور پر مناسب فورم میں جانا چاہئے۔ اس کے بعد وکیل نے درخواست واپس لینے کا فیصلہ کیا جس میں نیشنل لاء اسکول آف انڈیا (ترمیمی) ایکٹ، 2020 کے آئینی جواز کو چیلنج دیاگیاتھا ۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close