بنگلور

کرناٹک میں 8 ہزار مندروں کے پجاری اورملازمین کورٹ گئے

بجلی بل کی معافی اورسرکاری امداد کے لیے عدالت کی پناہ لی، حکومت کو نوٹس جاری

بنگلورو22مئی(آئی این ایس انڈیا) لاک ڈاؤن کی وجہ سے صرف صنعتوں پرہی نہیں، مندروں پر بھی خاصا اقتصادی بحران ہے۔تمل ناڈوکے 8 ہزار مندروں نے بجلی بل معاف کرنے کا مطالبہ اٹھایاہے۔کرناٹک میں 35 ہزار سے زیادہ پجاریوں نے اقتصادی مددکے لیے کورٹ کی پناہ لی ہے۔حال ہی میں، کرناٹک ہائیکورٹ میں ایک مفاد عامہ کی عرضی دائر کی گئی ہے جس میں کرناٹک کے چھوٹے اور درمیانے مندر کے ملازمین اور پجاریوں کو اقتصادی امداد دینے کا مطالبہ کیا گیاہے۔درخواست میں کہا گیا ہے کہ کرناٹک حکومت کے تحت آنے والے ان مندروں کے پجاریوں اور ملازمین کو کچھ مالی مدد فراہم کرنی چاہیے ۔

کرناٹک میں کل 50 ہزار سے زیادہ مندرہیں۔ جن میں سے تقریباََ35 ہزار 500 مندر چھوٹے یاسی زمرہ کے مندرآتے ہیں۔ ان مندروں کی اہم امدادعطیہ سے ہوتی ہے۔ لیکن، نیشنل لاک ڈاؤن کی وجہ سے دوماہ سے ساری آمدنی بندہے۔ مندرکے لوگون کو مندر کی سرگرمیاں کام کرنے، روزانہ کے اخراجات اور خود کی زندگی بسر کرنے میں بھی مشکلات کا سامنا کرناپڑ رہاہے۔کرناٹک ہائی کورٹ کی بینچ،جس میں چیف جسٹس ابی سرینواس اور جسٹس کرناٹک پھکندر نے وکیل اور بنگلور کے ایک مندرکے عرضی گزار دیکشت کی درخواست کو قبول کیاہے۔ عدالت اس معاملے میں 27 مئی کوسماعت کرسکتی ہے۔کرناٹک حکومت کو بھی اس معاملے میں کورٹ کی جانب سے نوٹس دے دیاگیاہے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

Leave a Reply

Back to top button
Close
Close