اہم خبریں

کسان تنظیموں نے پرتشدداحتجاج کرنے والے لوگوںسے خودکوالگ کیا ، ہمیں تشددپرافسوس،شرپسندعناصرتحریک کوبدنام کرنے کے لیے شامل ہوگئے

نئی دہلی26جنوری(آئی این ایس انڈیا) تینوں زرعی قوانین کے خلاف کسانوں کی ٹریکٹر ریلی میں ہنگامہ ہوا۔ بیریکیڈز توڑ دیئے گئے ، آنسو گیس کے گولے چھوڑے گئے ، جھڑپیں ہوئیں ، لاٹھی چارج اور کسان لال قلعے میں بھی داخل ہوگئے۔ یہاں کسان مورچہ کی طرف سے جاری ایک بیان میں کہاگیاہے کہ ہمیں اس سارے واقعے پر افسوس ہے ، کچھ شرپسندعناصرتحریک میں داخل ہوچکے ہیں ، جن لوگوں سے یونائٹڈ فارمرس فرنٹ خود کو الگ کرتا ہے جوطے راستے سے الگ نکلے ہیں۔پریس ریلیزمیں کہا گیا ہے کہ ہم اپنے آپ کوایسے تمام عناصر سے الگ کرتے ہیں جنہوں نے ہمارے نظم وضبط کی خلاف ورزی کی ہے۔ ہم ہر ایک سے پْر زور اپیل کرتے ہیں کہ وہ پریڈکے راستے اور اصولوں پر عمل کریں اورکسی بھی پرتشدد کارروائی یا قومی علامت اور وقار کو متاثر کرنے والی کسی بھی چیزمیں ملوث نہ ہوں ہم سب سے اپیل کرتے ہیں کہ وہ اس طرح کے کسی بھی عمل سے دور رہیں۔یوم جمہوریہ کے موقع پر کسان تینوں زرعی قوانین کے خلاف احتجاج میں ٹریکٹر ریلی نکال رہے ہیں۔ مقررہ وقت سے پہلے ہی کسانوں نے سنگھو اور ٹکڑی سرحدوں پر بیریکیڈ توڑ دیں۔ کسان دہلی کے آئی ٹی او اور پھر لال قلعہ پہنچے۔ لال قلعے کے اندرہنگامہ برپاہوا۔ کسانوں نے دوسرا جھنڈالہرایا۔ اس سے قبل پولیس نے پہلے دعویٰ کیاتھاکہ دہلی آنے والی تمام سرحد سیل کردی گئی ہے ، لیکن کسانوں کا احتجاج قابوسے باہرہوگیا۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close