ہندوستان اردو ٹائمز

راہل اور پرینکا نے کسانوں کو دہلی پہنچنے سے روکنے کی کوششوں پر حکومت کو نشانہ بنایا

نئی دہلی،28 ؍نومبر( آئی این ایس انڈیا ) کانگریس کے سابق صدر راہل گاندھی نے تین زرعی قوانین کے خلاف احتجاج کے لیے کسانوں کو دہلی پہنچنے سے روکنے کی کوشش کے لئے حکومت کو نشانہ بنایا اور الزام لگایا کہ وزیر اعظم نریندر مودی کے تکبرنے نوجوان کو کسان کے خلاف کھڑا دیا ہے۔ پارٹی کی جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی نے دعویٰ کیا کہ دہلی آنے والے سرمایہ داروں کے لئے سرخ قالین بچھائی گئی ہے، جبکہ کسانوں کے آنے پر راستے کھودے جارہے ہیں۔راہل گاندھی نے لاٹھی چلانے سے متعلق ایک تصویر شیئر کرتے ہوئے ٹویٹ کیا ہے کہ بہت ہی افسوسناک تصویر ہے۔ ہمارا نعرہ جئے جوان جئے کسان کا تھا لیکن آج وزیر اعظم مودی کے تکبر نے جوان کو کسان کے خلاف کھڑا کردیا۔ یہ بہت خطرناک ہے۔پرینکا گاندھی نے ٹویٹ کے ذریعے دعوی کیا کہ بی جے پی حکومت میں ملک کے نظام کو دیکھیں۔ جب بی جے پی کے کھرب پتی دوست دہلی آتے ہیں تو ان کے لیے سرخ قالین بجھائی جاتی ہے ۔ لیکن کسانوں کے لیے دہلی آنے سے راستہ کھودا جارہا ہے۔ انہوں نے سوال کیا کہ دہلی کسانوںکے خلاف قانون بنائے وہ درست مگر حکومت کو اپنی بات سنانے کے لیے کسان دہلی آئے تو وہ غلط ؟قابل ذکر ہے کہ زرعی قوانین کے خلاف احتجاج کرنے والے کسانوں کو جمعہ کے روز قومی دارالحکومت میں داخلے کی اجازت دی گئی تھی کہ وہ براڑی کے میدان میں احتجاج کرسکتے ہیں۔