اہم خبریں

کسان تحریک : کسان مرکز کی پیش کش پر غور کریں تو حکومت بات چیت کیلئے تیار: وزیرزراعت تومر

نئی دہلی،24 فروری (آئی این ایس انڈیا) مرکزی وزیر زراعت نریندر سنگھ تومر نے بدھ کے روز کہا کہ اگر حکومت زرعی قوانین کو ڈیڑھ سال کے لئے ملتوی رکھنے پر راضی ہیں اور مشترکہ کمیٹی کے ذریعہ اختلافات کو حل کرنے کے لئے مرکز کی پیش کش پر غور کریں تو حکومت بات چیت کے لئے تیار ہے۔ حکومت اور کسانوں کی نمائندگی کرنے والی تنظیموں کے مابین اب تک 11 دور کے مذاکرات ہوچکے ہیں اور آخری میٹنگ جنوری 22 جنوری کو ہوئی۔قومی دارالحکومت دہلی میں 26 جنوری کو یوم جمہوریہ پر کسانوں کی ٹریکٹر پریڈ میں ہونے والے تشدد کے بعد دونوں فریقوں کے درمیان بات چیت کا سلسلہ تھم گیاتھا۔کاشتکاروں کامطالبہ ہے کہ مرکز کی طرف سے گذشتہ سال بنائے گئے تین زرعی قوانین کو واپس لے اور کم سے کم سپورٹ قیمت پر ضمانت دے۔ نومبر 2020 کے آخر سے دہلی کی سرحدوں پر احتجاج کر رہے ہیں۔ایک تقریب کے موقع پر تومر نے کہا کہ حکومت کسانوں اور کسانوں کی فلاح و بہبود کے لئے پرعزم ہے اور وزیر اعظم نریندر مودی کی سربراہی میں کسانوں کی آمدنی کو دوگنا کرنے اور ہندوستانی زراعت کے شعبے کو مستحکم کرنے کی کوشش کر رہی ہے۔ وزیر بھارتیہ کسان یونین (بی کے یو) کے لیڈر راکیش ٹکیت کی دھمکی سے متعلق ایک سوال کا جواب دے رہے تھے۔ٹکیت نے متنبہ کیا ہے کہ اگر قوانین واپس نہ لئے گئے تو 40 لاکھ ٹریکٹروں کے ساتھ پارلیمنٹ تک مارچ ہوگا۔ حکومت کسانوں کے ساتھ بات چیت شروع کرنے کی کوشش کر رہی ہے یا نہیں؟ اس پر مرکزی وزیر تومر نے کہاکہ حکومت ہند کسانوں سے پوری حساسیت کے ساتھ بات چیت کر رہی ہے۔ آج بھی جب ان کا کوئی نظریہ آئے گا، ہندوستانی حکومت کاشتکاروں سے بات چیت کے لئے ہمیشہ تیار ہے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close