اہم خبریں

تبلیغی جماعت : ہائی کورٹ نے 65 غیر ملکی شہریوں کو متبادل رہائش گاہ میں منتقل کرنے کی اجازت دی

نئی دہلی، 30 جون (آئی این ایس انڈیا) دہلی ہائی کورٹ نے منگل کو کوڈ19 لاک ڈاؤن کے دوران تبلیغی جماعت سے تعلق رکھنے والے 65 غیر ملکی شہریوں کو منگل کو متبادل رہائش گاہ میں منتقل کرنے کی اجازت دی۔ مرکز، دہلی حکومت اور دہلی پولیس کے وکلا کے بیان کے بعد جسٹس وپن سنگھی اور جسٹس رجنیش بھٹناگر کی بنچ نے حکم جاری کیا کہ انہیں اس سے کوئی اعتراض نہیں ہے۔

ہائی کورٹ نے ان 65 غیر ملکیوں کو موجودہ رہائش گاہ سے دوسری رہائش گاہ منتقل کرنے کی درخواست قبول کرلی کیونکہ انہیں حفظان صحت سمیت کئی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا تھا۔بنچ نے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے سماعت کے دوران 28 مئی کے ہائی کورٹ کے حکم میں ترمیم کی درخواست کی بھی منظوری دی، جس میں موجودہ مجرمانہ قانونی عمل کے پیش نظر تبلیغی جماعت سے تعلق رکھنے والے غیر ملکی شہریوں کی متبادل رہائش گاہ کے لئے مزید تین جگہیں بھی شامل کرنے کا مطالبہ کیا گیا تھا۔ 28 مئی کو ہائی کورٹ نے حکم دیا کہ مرکز میں پروگرام میں حصہ لینے والے 955 غیر ملکی شہریوں کو ادارہ جاتی تنہائی مراکز سے نو متبادل رہائش گاہوں پر بھیج دیا جائے۔ یہ غیر ملکی شہری 30 مارچ سے ادارہ جاتی الگ تھلگ مراکز میں تھے اور تحقیقات میں کووڈ19 کا کوئی انفیکشن نہیں ملا تھا۔

وکیلوں مانداکینی سنگھ اور اشیما منڈلا کے ذریعہ دائر اس درخواست میں ماہ کے دوران معراج انٹرنیشنل اسکول میں قیام پذیر 65 غیر ملکی شہریوں کو وہاں کئے گئے انتظامات سے تکلیف ہوئی۔ منگل کے روز ہائی کورٹ نے اسے معراج انٹرنیشنل اسکول سے یہاں موجپور میں ٹیکسن پبلک اسکول بھیجنے کی اجازت دی، جس کی تجویز انہوں نے ہی دی تھی۔ بنچ نے یہ بھی کہا کہ ایسی ترامیم کے لئے درخواست گزاروں کو مستقبل میں براہ راست ہائی کورٹ میں آنے کی ضرورت نہیں ہے اور وہ دہلی پولیس کو اپنی درخواست پیش کریں جو اسے فیصلے کے لئے مرکزی حکومت کو بھیجے گی اور یہ سارا عمل ایک ہفتہ میں مکمل ہوجائے گا۔ دہلی پولیس نے کہا ہے کہ 35 ممالک کے 910 غیر ملکی شہریوں کے سلسلے میں 47 چارج شیٹ داخل کی گئی ہیں۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیجئے

Back to top button
Close
Close