اہم خبریں

سپریم کورٹ میں جب ملک کے سب سے مہنگے وکیل نے کہا : ’مائی لارڈ میرکلائنٹ غریب ہے‘،مسکرانے لگے جج

نئی دہلی،22مئی(آئی این ایس انڈیا) سپریم کورٹ میں جمعہ کو اس وقت دلچسپ لمحہ آیا جب ملک کے سب سے مہنگے والوں میں شمار مکل روہتگی نے کہا کہ ’مائی لارڈ میرا کلائنٹ غریب ہے‘ تب جج مسکرانے لگے۔اس پر مکل روہتگی نے کہا مائی لارڈ اب میں غریبوں کا کیس دیکھنے لگا ہوں۔دراصل زمین کے حصول معاملے کی سماعت چل رہی تھی۔ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے جسٹس ارون مشرا کی قیادت والی بنچ کیس کی سماعت کر رہی تھی۔اس دوران جج ماسک لگائے ہوئے تھے اور ہاتھوں میں دستانے بھی پہنے ہوئے تھے۔

فریق کی جانب سے پیش سینئر ایڈووکیٹ اور سابق اٹارنی جنرل مکل روہتگی پیش ہو رہے تھے۔مکل روہتگی نے سماعت کے دوران کہا کہ مائی لارڈ آپ نے تمام حفاظتی اقدامات کئے ہوئے ہیں اور سماعت کر رہے ہیں اس کو لے کر ان کو خوشی ہے۔تب جسٹس ارون مشرا نے کہا کہ آپ کو دیکھ کر بھی خوشی ہوئی کہ آپ اپنے چیمبر سے ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے جڑے ہوئے ہیں۔

غور طلب ہے کہ سپریم کورٹ میں کورونا کی وجہ سے چیمبر بند کر دئے گئے تھے جو جمعہ کو کھولے گئے جس کے بعد وکیل اپنے چیمبر سے ہی ویڈیو کانفرنسنگ کے ذریعے پیش ہو رہے ہیں۔سماعت جب آگے بڑھی تو مکل روہتگی نے اپنے کلائنٹ کی جانب سے کیس کی پیروی کرتے ہوئے کہا کہ ان کا موکل غریب ہے اور ان کو راحت دی جائے۔اس پر جسٹس ارون مشرا مسکرانے لگے۔اس پر مکل روہتگی نے موقع کی نزاکت کو سمجھا اور پھر کہا کہ مائی لارڈ اب میں غریبوں کی وکالت کرنے لگا ہوں،اب لیگل رجحان بدل گیا ہے،ہم غریبوں کا کیس لڑتے ہیں۔

دراصل مکل روہتگی ملک کے سب سے مہنگے وکلاء میں سے ایک ہیں اور انہوں نے جب دلیل میں کہا کہ ان کا موکل غریب ہے تو ایسی صورت حال بن گئی کہ جج مسکرانے لگے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

جواب دیجئے

Back to top button
Close
Close