اہم خبریں

اوریا سانحہ : حزب اختلاف کاتعزیت کے ساتھ شدیدردعمل ،حادثہ کو ’ قتل‘ قرار دیا

لکھنؤ ۱۶؍ مئی ( آئی این ایس انڈیا ) یوپی کے او ریا میں آج علی الصبح ساڑھے تین بجے دو ٹرکو ں کے مابین تصادم میں 24 مزدوروں کی موت ہو گئی ، اور 40 کے قریب زخمی ہو گئے ہیں۔ اس سڑک حادثہ پر وزیر اعظم مودی نے کہا کہ سڑک حادثہ بے حد ہی افسوسناک ہے، حکومت امدادی کام میں تیاری سے مصروف ہے۔ وہیںریاستی وزیراعلیٰ یوگی نے اس حادثہ پر تعزیت کا اظہار کرتے ہوئے حادثہ کی تفیتش کا حکم دیا ہے ۔تاہم یوپی کا حزب اختلاف طبقہ اس واقعہ کو لے کر برہمی کا اظہار کررہا ہے ۔سماجوادی پارٹی کے سربراہ اکھلیش یادو نے سڑک حادثے میں مہاجر مزدوروں کی ہلاکت کو’ قتل‘ بتایا ہے۔انہوں نے ٹوئٹ کرکے کہا کہ یوپی کے اوریا میں سڑک حادثہ میں 24 سے بھی زیادہ غریب مہاجر مزدوروں کی موت پر مغموم ہوں،زخمیوں کے جلد روبہ صحت کیلئے دعا کرتا ہوں ۔

انہوں نے مزید کہا کہ ایسے حادثات موت نہیں عمداًقتل ہیں۔کانگریس جنرل سکریٹری پرینکا گاندھی واڈرا نے سوال کیا کہ کیا حکومت کا کام صرف بیان بازی کرنا رہ گیا ہے؟ پارٹی کی اترپردیش انچارج پرینکا نے ٹوئٹ کرکے کہا کہ اوریا سانحہ جگر پاش پاش کردینے والا سانحہ ہے ۔اس واقعہ نے ایک بار پھر یہ سوال کھڑا کر دیا ہے کہ آخر حکومت کیا سوچ کر ان مزدوروں کے گھر جانے کی مناسب انتظام نہیں کر رہی ہے؟ یوپی میں مزدوروں کو لے جانے کے لئے بسیں کیوں نہیں چلائی جا رہی ہیں ۔خیال رہے کہاس حادثہ کے متعلق جو اطلاعات مل رہی ہیں ، ان کے مطابق دہلی سے آیا ایک ٹرک ڈھابے پر کھڑا تھا۔ اس میں کچھ مزدور چائے پینے کے لئے نیچے اتر گئے تھے اور کچھ بیٹھے تھے۔ یہ تمام یوپی کے مختلف اضلاع کے رہنے والے تھے۔عین اسی وقت فرید آباد سے آرہا ایک دوسرا ٹرک جس میں80 مزدور سوار تھے، پیچھے سے دہلی سے آنے والے ٹرک کو ٹکر مار کر پلٹ گیا۔ فرید آباد والے ٹرک میں بوریاں لدی تھیں اور اس میں جھارکھنڈ، بہار، یوپی، مغربی بنگال کے مہاجر مزدور بیٹھے تھے۔۔ ان ہی بوریاں کے نیچے کئی مزدور دب گئے اور جب تک ان کو نکالا جاتا کئی ہلاک ہوچکے تھے۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

Back to top button
Close
Close