اہم خبریں

وزارت داخلہ نے ریاستوں سے کہا ذخیرہ اندوزوں، کالابازاری کرنے والوں کے خلاف ہو سخت کارروائی

نئی دہلی،08 ؍اپریل ( آئی این ایس انڈیا ) مرکز نے ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام ریاستوں سے کہا ہے کہ ضروری اشیاء کی ذخیرہ اندوزی اور کالابازاری کر رہے لوگوں کے خلاف قانون کے تحت کارروائی کی جانی چاہئے۔ اس نے کہا کہ ملک بھر میں لاک ڈائون کے پیش نظر پیداوار میں کمی اور لیبر بحران کی وجہ سے اس طرح کی کارروائیوں کیخدشہ سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔ تمام ریاستوں اور مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے چیف سکریٹریوں کو خط لکھ کر مرکزی داخلہ سکریٹری اجے بھلا نے کہا کہ وزارت داخلہ نے 21 دن کے لاک ڈاو?ن کی مدت میں ڈیزاسٹر مینجمنٹ قانون کے تحت کھانے کی اشیاء، ادویات اور طبی آلات جیسی ضروری اشیاء کے تناظر میں پیداوار، نقل و حمل اور دیگر متعلقہ سرگرمیوں کی منظوری دے دی ہے۔ حالانکہ مختلف عوامل خاص طور پر لیبر فراہمی میں کمی کی وجہ سے پیداوار میں کمی کی خبریں ہیں۔ انہوں نے کہا کہ اس صورتحال میں، ضروری اشیاء کی ذخیرہ اندوزی اور کالابازاری، غیر منصفانہ تجارت اور انہیں زیاد قیمت میں فروخت کے امکان سے انکار نہیں کیا جا سکتا۔ بھلا نے ریاستی حکومتوں اور مرکز کے زیر انتظام ریاستوں سے ضروری چیز ایکٹ 1955 نافذ کر کے ضروری اشیاء کی دستیابی کو یقینی بنانے کے لئے فوری طور پر اقدامات کرنے کو کہا۔ انہوں نے کہا کہ اقدامات میں اسٹوریج کی حد طے کرنے، قیمت کی حد مقرر کرنے، پیداوار بڑھانے، ڈیلروں کے اکائونٹس کی جانچ پڑتال کرنے اور دیگر اقدامات شامل ہیں۔ بھلا نے کہا کہ ضروری چیز ایکٹ کے تحت آنے والے جرائم میں مجرم پائے جانے پر سات سال قید یا جرمانہ یا دونوں ہو سکتے ہیں۔ انہوں نے کہاکہ جرائم کرنے والوں کو کالابازاری اور ضروری اشیاء کی فراہمی کی بحالی کا سراغ لگانا ایکٹ، 1980 کے تحت حراست میں رکھنے پر غور کر سکتے ہیں۔

Urdutimes@123

ہندوستان اردو ٹائمز پر آپ سب کا خیر مقدم کرتے ہیں

Leave a Reply

متعلقہ خبریں

Back to top button
Close
Close